Book Name:Zoq-e-Naat

جس کا گدا ہے تو وہ ہے غمخوارِ بے نوا

 

تاریخ اب وصالِ مقدس کی عرض کر

حاصل ہو پورے شعر سے خاطر کا مدعا

 

وہ سیدِ وَلا گئے جب بزمِ قدس میں

اچھے میاں نے اُٹھ کے گلے سے لگالیا

۸۴۴                 ۲۴ ۱۳ھ

قطعہ تاریخ ولادتِ باسعادت نبیرہ حضرت اَخُ الاعظم عالم اہلسنت جناب مولانا حاجی محمد احمد رضا خاں صاحب قادری  مُدَّ ظِلُّہُمْ   بخانہ برخوردار مولوی حامد رضا خاں سَلَّمَہُمُ  اللّٰہُ تَعَالٰی

شکرِ خالق کس طرح سے ہو ادا

                       اِک زباں اور نعمتیں بے اِنتہا

پھر زباں بھی کس کی مجھ ناچیز کی

وہ بھی کیسی جس کو عصیاں کا مزا

اے خدا کیونکر لکھوں تیری صفت

اے خدا کیونکر کہوں تیری ثنا

گننے والے گنتیاں محدود ہیں

تیرے اَلطاف و کرم بے اِنتہا

سب سے بڑھ کر فضل تیرا اے کریم

           ہے وُجودِ اَقدسِ خیرالورا

ہر کرم کی وجہ یہ فضل عظیم

       صدقہ ہیں سب نعمتیں اس فضل کا

فضل اور پھر وہ بھی ایسا شاندار

جس پہ سب اَفضال کا ہے خاتما

اولیا اس کے کرم سے خاصِ حق

انبیا اس کی عطا سے انبیا

خود کرم بھی خود کرم کی وجہ بھی

خود عطا خود باعث جود و عطا

اس کرم پر اس عطا و جود پر

ایک میری جان کیا عالم فدا

کردے اِک نم سے جہاں سیرابِ فیض

جوش زن چشمہ کرم کے میم کا

جان کہنا مبتذل تشبیہ ہے

اللّٰہ   اللّٰہ  اس   کے   دامن  کی   ہوا

جان دی مردوں کو عیسیٰ نے اگر

اس نے خود عیسیٰ کو زندہ کردیا

بے سبب اس کی عطائیں بے شمار

بے غرض اس کے کرم بے اِنتہا

 



Total Pages: 158

Go To