Book Name:Zoq-e-Naat

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

آسماں ہے قوس فکریں تیر میرا دِل ہدف

نفس و شیطاں ہر گھڑی کف برلب و خنجر بکف

منتظر ہوں میں کہ اب آئی صدائے لَاتَخَفْ

سروَرِ دِیں کا تصدق بہر سلطانِ نجف

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

بڑھ چلا ہے آج کل اَحباب میں جوشِ نفاق

خوش مذاقانِ زمانہ ہو چلے ہیں بد مذاق

سیکڑوں پردوں میں پوشیدہ ہے حسن اِتفاق

بر سرِ پیکار ہیں آگے جو تھے اَہل وِفاق

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ڈَر دَرِندوں کا اَندھیری رات صحرا ہولناک

راہ نا معلوم رَعشہ پاؤں میں لاکھوں مَغاک

دیکھ کر اَبر سیہ کو دِل ہوا جاتا ہے چاک

آئیے اِمداد کو ورنہ میں ہوتا ہوں ہلاک

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ایک عالم پر نہیں رہتا کبھی عالم کا حال

ہر کمالے را زَوال و ہر زَوالے را کمال

بڑھ چکیں شب ہائے فرقت اب توہو رَوزِ وِصال

مہر ادھر منہ کر کہ میرے دِن پھریں دِل ہو نہال

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

گو چڑھائی کر رہے ہیں مجھ پر اَندوہ و اَلم

گو پیاپے ہو رہے ہیں اہل عالم کے ستم

پر کہیں چھٹتا ہے تیرا آستاں تیرے قدم

چارۂ دردِ دلِ مضطر کریں تیرے کرم

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ہیں کمر بستہ عداوَت پر بہت اَہل زَمن

ایک جانِ ناتواں لاکھوں اَلم لاکھوں محن

 



Total Pages: 158

Go To