Book Name:Zoq-e-Naat

 

سالک راہِ خدا کو رہنما ہے تیری ذات

مسلک عرفانِ حق میں پیشوا ہے تیری ذات

بے نوایانِ جہاں کا آسرا ہے تیری ذات

تشنہ کاموں کے لئے بحر عطا ہے تیری ذات

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

ہر طرف سے فوجِ غم کی ہے چڑھائی اَلغِیاث

کرتی ہے پامال یہ بے دست و پائی اَلغِیاث

پھر گئی ہے شکل قسمت سب خدائی اَلغِیاث

اے مِرے فریاد رَس تیری دُہائی اَلغِیاث

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

نفسِ اَمَّارہ کے پھندے میں پھنسا ہوں اَلعِیاذ

دَر ترا بیکس پنہ کوچہ ترا عالم مَلاذ

رحم فرما یا ملاذی لطف فرما یا مَعاذ

حاضرِ دَر ہے غلامِ آستاں بہرِ نواز

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

شہر یار اے ذی وقار اے باغِ عالم کی بہار

بحرِ اِحساں رُشحۂ نیسانِ جود کردِگار

ہوں خزانِ غم کے ہاتھوں پائمالی سے دوچار

عرض کرتا ہوں تِرے در پر بچشمِ اَشکبار

روئے رحمت برمتاب اے کام جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

بر سر پرخاش ہے مجھ سے عدوئے بے تمیز

رات دن ہے دَرپئے قلب حزیں نفس رَجیز

مبتلا ہے سو بلاؤں میں مری جانِ عزیز

حل مشکل آپ کے آگے نہیں دُشوار چیز

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

اِک جہاں سیرابِ فیض اَبر ہے اب کی برس

ترنوا ہیں بلبلیں پڑتا ہے گوشِ گل میں رَس

ہے یہاں کشت تمنا خشک و زِندانِ قفس

 



Total Pages: 158

Go To