Book Name:Zoq-e-Naat

اَبرِ سیاہ مست اُٹھا حالِ وَجد میں

لیلیٰ نے بال کھولے ہیں صحرائے نجد میں

 

یہ رُت کچھ اَور ہے یہ ہوا ہی کچھ اَور ہے

اب کی بہارِ ہوش رُبا ہی کچھ اَور ہے

رُوئے عروسِ ُگل میں صفا ہی کچھ اَور ہے

چبھتی ہوئی دلوں میں ادا ہی کچھ اَور ہے

گلشن کھلائے بادِ صبا نے نئے نئے

گاتے ہیں عندلیب ترانے نئے نئے

 

ہر ہر گلی ہے مشرقِ خورشید نور سے

لپٹی ہے ہر نگاہ تجلیٔ طور سے

رُوہت ہے سب کے منہ پہ دلوں کے سرور سے

مردے ہیں بے قرار حجابِ قبور سے

ماہِ عرب کے جلوے جو اُونچے نکل گئے

خورشید و ماہتاب مقابل سے ٹل گئے

 

ہر سمت سے بہار نواخوانیوں میں ہے

نیسانِ جودِ رب گہر اَفشانیوں میں ہے

چشم کلیم جلوے کے قربانیوں میں ہے

غل آمَدِ حضور کا رُوحانیوں میں ہے

اِک دُھوم ہے حبیب کو مہماں بلاتے ہیں

بہرِ براق خلد کو جبریل جاتے ہیں

نغمۂ روح

اِستمداد از حضرت سلطانِ بغداد رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ

اے کریم ابنِ کریم اے رہنما اے مقتدا

اَخترِ برجِ سخاوَت گوہر دُرجِ عطا

آستانے پر ترے حاضر ہے یہ تیرا گدا

لاج رکھ لے دست و دامن کی مِرے بہرِ خدا

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 

شاہِ اِقلیمِ وِلایت سرورِ کیواں جناب

ہے تمہارے آستانے کی زمیں گردوں قباب

حسرتِ دل کی کشاکش سے ہیں لاکھوں اِضطراب

التجا  مقبول  کیجے  اپنے  سائل  کی  شتاب

روئے رحمت برمتاب اے کامِ جاں اَز رُوئے من

حرمتِ روحِ پیمبر یک نظر ُکن سوئے من

 



Total Pages: 158

Go To