Book Name:Zoq-e-Naat

ان کے دَر نے سب سے مستغنی کیا

بے طلب بے خواہش اتنا مل گیا

 

ناخدائی کے لئے آئے حضور

ڈوبتو نکلو سہارا مل گیا

 

دونوں عالم سے مجھے کیوں کھو دیا

نفسِ خود مطلب تجھے کیا مل گیا

 

آنکھیں پر نم ہو گئیں سر جھک گیا

جب ترا نقشِ کفِ پا مل گیا

 

خلد کیسا کیا چمن کس کا وطن

مجھ کو صحرائے مدینہ مل گیا

 

ہے محبت کس قدر نامِ خدا

نامِ حق سے نامِ والا مل گیا

 

ان کے طالب نے جو چاہا پالیا

ان کے سائل نے جو مانگا مل گیا

 

تیرے در کے ٹکڑے ہیں اور میں غریب

مجھ کو روزی کا ٹھکانا مل گیا

 

اے حسنؔ فردوس میں جائیں جناب

ہم کو صحرائے مدینہ مل گیا

 

دَر و دِیوار روشن ہو جاتے

جب رحمت عالم، نورِ مجسم صَلَّی اللّٰہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّممسکراتے تو آپ کے دندان مبارک کے نور سے دَر ودِیوار روشن ہوجاتے ۔  (الشفا، ص۶۱ ، مرکز اہل سنت برکات رضا، ہند)

دل مرا دنیا پہ شیدا ہوگیا

دل مرا دنیا پہ شیدا ہوگیا

اے     مرے    اللّٰہ    یہ  کیا     ہو گیا

 

کچھ مرے بچنے کی صورت کیجئے

اب تو جو ہونا تھا مولیٰ ہوگیا

 

عیب پوشِ خلق دامن سے تِرے

سب گنہگاروں کا پردہ ہوگیا

 

 

 



Total Pages: 158

Go To