Book Name:Zoq-e-Naat

باغ جنت میں نرالی چمن آرائی ہے

باغِ جنت میں نرالی چمن آرائی ہے

کیا مدینہ پہ فدا ہو کہ بہار آئی ہے

 

اُن کے گیسو نہیں رحمت کی گھٹا چھائی ہے

اُن کے اَبرو نہیں دو قبلوں کی یکجائی ہے

 

سنگریزوں نے حیاتِ اَبدی پائی ہے

ناخنوں میں ترے اِعجازِ مسیحائی ہے

 

سرِ بالیں انہیں رحمت کی اَدا لائی ہے

حال بگڑا ہے تو بیمار کی بن آئی ہے

 

جان گفتار تو رَفتار ہوئی رُوحِ رَواں

دَم قدم سے ترے اعجازِ مسیحائی ہے

 

جس کے ہاتھوں کے بنائے ہوئے ہیں حسن و جمال

اے حسیں تیری اَدا اس کو پسند آئی ہے

 

تیرے جلوؤں میں یہ عالم ہے کہ چشم عالم

تابِ دِیدار نہیں پھر بھی تماشائی ہے

 

جب تری یاد میں دنیا سے گیا ہے کوئی

جان لینے کو دلہن بن کے قضا آئی ہے

 

سر سے پا تک تری صورت پہ تصدق ہے جمال

اس کو موزونیٔ اَعضا یہ پسند آئی ہے

 

تیرے قدموں کا تبرک یدِ بیضائے کلیم

تیرے ہاتھوں کا دِیا فضل مسیحائی ہے

 

دَردِ دِل کس کو سناؤں میں تمہارے ہوتے

بیکسوں کی اِسی سرکار میں سنوائی ہے

 

آپ آئے تو منور ہوئیں اَندھی آنکھیں

آپ کی خاکِ قدم سرمۂ بینائی ہے

 

ناتوانی کا اَلم ہم ضعفا کو کیا ہو

ہاتھ پکڑے ہوئے مولا کی توانائی ہے

 

 



Total Pages: 158

Go To