Book Name:Zoq-e-Naat

پیار سے لے لیے آغوش میں سر رحمت نے

پائے انعام ترے دَر کی جبیں سائی کے

 

لاش اَحباب اسی دَر پر پڑی رہنے دیں

کچھ تو اَرمان نکل جائیں جبیں سائی کے

 

جلوۂ گر ہو جو کبھی چشم تمنائی میں

پردے آنکھوں کے ہوں پردے تیری زیبائی کے

 

خاکِ پامال ہماری بھی پڑی ہے سرِ راہ

صدقے اے رُوحِ رَواں تیری مسیحائی کے

 

کیوں نہ وہ ٹوٹے دلوں کے کھنڈر آباد کریں

کہ دکھانے ہیں کمال اَنجمن آرائی کے

 

زینتوں سے  ہیں  حسینانِ  جہاں  کی  زینت

زینتیں پاتی  ہیں  صدقے  تری  زیبائی  کے

 

نامِ آقا ہوا جو لب سے غلاموں کے بلند

بالا بالا گئے غم آفتِ بالائی کے

 

عرش پہ کعبہ و فردوس و دلِ مومن میں

شمع اَفروز ہیں اِ ّکے تری یکتائی کے

 

ترے محتاج نے پایا ہے وہ شاہانا مزاج

اس کی گدڑی کو بھی پیوند ہوں دارائی کے

 

اپنے ذَرَّوں کے سیہ خانوں کو روشن کر دو

مہر ہو تم فلکِ انجمن آرائی کے

 

پورے سرکار سے چھوٹے بڑے اَرمان ہوں سب

اے حسنؔ میرے مِرے چھوٹے بڑے بھائی کے

دمِ اضطراب مجھ کو جو خیال یار آئے

دمِ اضطراب مجھ کو جو خیالِ یار آئے

مِرے دِل میں چین آئے تو اسے قرار آئے

 

تری وحشتوں سے اے دِل مجھے کیوں نہ عار آئے

تو اُنہیں سے دور بھاگے جنھیں تجھ پہ پیار آئے

 

مِرے دل کو دردِ اُلفت وہ سکون دے الٰہی

 



Total Pages: 158

Go To