Book Name:Zoq-e-Naat

ہزاروں ہوں خورشیدِ محشر تو غم کیا

یہاں سایہ ُگستر ہے رحمت کسی کی

 

بھرے جائیں گے خلد میں اَہلِ عصیاں

نہ جائے گی خالی شفاعت کسی کی

 

وہی سب کے مالک انہیں کا ہے سب کچھ

نہ عاصی کسی کے نہ جنت کسی کی

 

رَفَعْنَا  لَکَ ذِکْرَک پر  تصدق

سب اُونچوں سے اُونچی ہے رِفعت کسی کی

 

اُترنے  لگے  مَا رَمَیْتَ  یَدُ  اللّٰہ

چڑھی ایسی زوروں پہ طاقت کسی کی

 

گدا خوش ہوں خَیْرٌلَّک کی صدا ہے

کہ دِن دُونی ہے بڑھتی دولت کسی کی

 

فَتَرْضٰینے ڈالی ہیں باہیں گلے میں

کہ ہو جائے راضی طبیعت کسی کی

 

خدا سے دُعا ہے کہ ہنگامِ رُخصت

زبانِ حسنؔ پر ہو مِدحت کسی کی

جان سے تنگ ہیں قیدی غمِ تنہائی کے

جان سے تنگ ہیں قیدی غمِ تنہائی کے

صدقے جاؤں میں تری اَنجمن آرائی کے

 

بزم آرا ہوں اُجالے تری زیبائی کے

کب سے مشتاق ہیں آئینے خود آرائی کے

 

ہو غبارِ دَرِ محبوب کہ گردِ رَہ دوست

جزوِ اَعظم ہیں یہی سرمۂ بینائی کے

 

خاک ہو جائے اگر تیری تمناؤں میں

کیوں ملیں خاک میں اَرمان تمنائی کے

 

وَ رَفَعْنَا لَکَ ذِکْرَک کے چمکتے خورشید

لامکاں تک ہیں اُجالے تری زیبائی کے

 

دلِ مشتاق میں اَرمانِ لقا آنکھیں بند

 



Total Pages: 158

Go To