Book Name:Zoq-e-Naat

منہ پھیر لے جو تشنۂ دِیدار ترا ہو

 

فردوس کے باغوں سے ادھر مل نہیں سکتا

جو کوئی مدینہ کے بیاباں میں گما ہو

 

دیکھا اُنہیں محشر میں تو رحمت نے پکارا

آزاد ہے جو آپ کے دامن سے بندھا ہو

 

آتا ہے فقیروں پہ اُنہیں پیار کچھ ایسا

خود بھیک دیں اور خود کہیں منگتا کا بھلا ہو

 

وِیراں ہوں جب آباد مکاں صبح قیامت

اُجڑا ہوا دِل آپ کے جلووں سے بسا ہو

 

ڈھونڈھا ہی کریں صدرِ قیامت کے سپاہی

وہ کس کو ملے جو تِرے دامن میں چھپا ہو

 

جب دینے کو بھیک آئے سرِ ُکوئے گدایاں

لب پر یہ دعا تھی مرے منگتا کا بھلا ہو

 

جھک کر اُنہیں ملنا ہے ہر اِک خاک نشیں سے

کس واسطے نیچا نہ وہ دامانِ قبا ہو

 

تم کو تو غلاموں سے ہے کچھ ایسی محبت

ہے ترکِ اَدَب ورنہ کہیں ہم پہ فدا ہو

 

دے ڈالیے اپنے لبِ جاں بخش کا صدقہ

اے چارۂ دِل دَردِ حسنؔ کی بھی دوا ہو

عجب رنگ پر ہے بہارِ مدینہ

عجب رنگ پر ہے بہارِ مدینہ

کہ سب جنتیں ہیں نثارِ مدینہ

 

مبارک رہے عندلیبو تمہیں گل

ہمیں گل سے بہتر ہیں خارِ مدینہ

 

بنا شہ نشیں خسروِ دو جہاں کا

بیاں کیا ہو عز و وَقارِ مدینہ

 

مری خاک یارب نہ برباد جائے

پسِ مرگ کردے غبارِ مدینہ

 



Total Pages: 158

Go To