Book Name:Gunaho ke Azabat Hissa 1

مَدَنی مشورہ: ماں باپ کی فرماں برداری کا ذِہْن بنانے کے لئے شیخِ طریقت، اَمِیْرِ اہلسنت حضرت علَّامہ ابوبِلال محمد اِلیاس عطَّار قادِری دَامَتْ بَـرَکَاتُہُمُ الْعَالِـیَہ کے رِسالے سَمُنْدری گنبد“ کا مُطَالعہ مُفِید ہے ۔

حلقوں میں یاد کروائی جانے والی دُعا

بالغ مَرْد وعَورت کے جَنازے کی دُعا

اَللّٰہُمَّ اغْفِرْ لِحَیِّنَا وَمَیِّتِنَا وَشَاھِدِنَا وَغَآئِبِنَا وَصَغِیْرِنَا وَکَبِیْرِنَا وَذَکَرِنَا وَاُنْثٰنَاط اَللّٰہُمَّ مَنْ اَحْیَیْتَہٗ مِنَّا فَاَحْیِہٖ عَلَی الْاِسْلَامِ وَمَنْ تَوَفَّیْتَہٗ مِنَّا فَتَوَفَّہٗ عَلَی الْاِیْمَانِط

ترجمہ: الٰہی! بَخْش دے ہمارے ہر زِندہ کو اور ہمارے ہر فَوت شُدہ کو اور ہمارے ہر حاضِر کو اور ہمارے ہر غائب کو اور ہمارے ہر چھوٹے کو اور ہمارے ہر بڑے کو اور ہمارے ہر مَرْد کو اور ہماری ہر عَوْرت کو ۔ الٰہی! تُو ہم میں سے جس کو زِندہ رکھے تو اس کو اِسْلام پر زِندہ رکھ اور ہم میں سے جس کو مَوت دے تو اس کو اِیمان پر مَوت دے ۔( [1] )

٭ ٭ ٭ ٭ ٭ ٭

دُرُود شریف کی فضیلت

فرمانِ مصطفے ٰ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم: جو مجھ پر ایک بار دُرُود شریف پڑھتا ہے اللہ پاک اُس کے لئے ایک قِیْراط اَجْر لکھتا ہے اور قِیْراط اُحُد پہاڑ جتنا ہے ۔( [2] )

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                       صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

( 18 )...غِیْبَت

غیبت کی تَعْرِیف

کسی کے بارے میں اس کی غیر مَوْجُودَگی میں ایسی بات کہنا کہ اگر وہ سُن لے یا اُس کو پَہُنْچ جائے تو اُسے ناگوار مَعْلُوم ہو ۔( [3] )

غیبت کی چند مِثَالَیں

کسی کے مَجْلِس سے اُٹھ کر جانے کے بعد اس طرح کہنا: ٭ یار! وہ گیا، جان چُھوٹی ٭ ڈیڑھ ہشیار ہے ٭ بات بات پر ہا ہا کر کے ہنستا تھا وغیرہ ۔ اسی طرح مُسْتَحَبَّات ونوافِل میں سُستی کرنے والے کے بارے میں اس طرح کہنا: ٭ اُس نے زندگی میں کبھی عَاشُورا کا روزہ نہیں رکھا ٭ وہ اَوَّابین کیا پڑھے گا! اُس کو یہ تو پوچھو کہ یہ نوافِل کس وَقْت پڑھے جاتے ہیں ٭ وہ تَبَـرُّک کہہ کر نیاز تو کھا لیتا ہے مگر اس کے لئے چندہ کبھی نہیں دیتا ۔

”غیبت“ کے مُتَعَلِّق  مختلف اَحْکَام

 ( 1 ): غیبت گُنَاہِ کبیرہ، قطعی حرام اور جہنّم میں لے جانے والا کام ہے ۔( [4] ) ( 2 ): غیبت کو حَلال جاننے والا کافِر ہے ۔( [5] ) ( 3 ): غیبت کرنے والا فاسِق وگنہگار اور عَذَابِِ نار کا حق دار ہوتا ہے ۔( [6] ) ( 4 ): بغیر شَرْعِی مَجْبُوری کے غیبت سننے والا بھی غیبت کرنے والے ہی کی طرح گنہگار ہوتا ہے ۔( [7] ) ( 5 ): ( بدمذہب کی غیبت شَرْعِی طور پر غیبت نہیں بلکہ ) بدمذہب کی بُرائیاں بَیَان کرنے کا خود شرعاً حکم ہے ۔( [8] )

 



[1]    ابن ماجه ،  كتاب الجنائز ،  باب ما جاء فى الدعاء    الخ ،  ص٢٤٢ ،  حديث: ١٤٩٨ ونمازِ جنازہ کا طریقہ ،  ص۹.

[2]    مصنف عبد الرزاق ،  كتاب الطهارة ،  باب ما يذهب الوضوء من الخطايا ،  ١ / ٤٠ ، حديث: ١٥٣.

[3]    غیبت کی تباہ کاریاں ،  ص۴۳۸.

[4]    غیبت کی تباہ کاریاں ،  ص۲۶ ورسائل ابن نجيم ،  الرسالة الثالثة والثلاثون ،  ص٣٥٤.

[5]    الحديقة الندية ،  القسم الثانى فى آفات اللسان ،  المبحث الاول ،  النوع السادس فى الغيبة    الخ ،   ٤ / ٤٥.

[6]    غیبت کی تباہ کاریاں ،  ص۲۶ ،  ملتقطًا.

[7]     غیبت کی تباہ کاریاں ،  ص۲۵۹.

[8]     فتاویٰ رضویہ ،  ۶ / ۶۰۲.



Total Pages: 42

Go To