Book Name:Jannati Zevar

مدح چار یار

جہاں میں جو آئینہ دار نبی ہیں     حقیقت میں وہ چار یار نبی ہیں

رفیق نبی غم گسار بنی ہیں    فدائے نبی جاں نثار نبی ہیں

بڑا ان کا رتبہ ہے اللہ  اکبر

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر

یہ چاروں خلافت کے مسند نشیں ہیں    یہ چاروں اراکین دین نبی ہیں

یہی باغبان ریاض یقیں ہیں        یہی راز دار رسول امیں ہیں

یہ محبوب سرور یہ مقبول داور

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر

یہ پروانے ہیں شمع باغ حرا کے     فدائے نبی اور مقرب خدا کے

نمونے ہیں یہ سیرت انبیاء کے    یہ پتلے وفا کے یہ پیکر حیا کے

یہ عدل مجسم یہ صدق مصور

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر

یہ معراج ایماں کے ہیں چار زینے    یہ چاروں ہیں تاج شرف کے نگینے

مجلّٰی ہیں انوار سے ان کے سینے      سنوارا ہے ان کو جمال نبی نے

مزکیّٰ مصفّا مقدّس مطہّر

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر

الہٰی تڑپتی ہے جب تک رگ جاں      محبت رہے ان کے سینے میں رقصاں

ولا ان کی ہے جان دیں روح ایماں      خدا سے دعا ہے یہی میری ہر آں

رہے تا دم مرگ میری زباں پر

ابوبکر و فاروق و عثمان و حیدر

از جناب خمارؔ بارہ بنکوی

واہ رے داغ عشق رسول     شام کو تارا صبح کو پھول

کیسے چھپیں انوار ِرسول     چاند پہ کس نے ڈالی دھول

پیش نظر ہے شکل رسول      دیدے خدایا حشر کو طول   

نام محمد لے کے تو دیکھ      رحمتیں ہیں بے تابِ نزول

بات مدینے جیسی کہاں      کون کرے فردوس قبول

ان سے یہ کہنا جا کے صبا    دل ہے بہت دوری سے ملول

اب تو بلا لو پاس مجھے         اب تو گزارش کر لو قبول

پیش نظر روضہ ہو خمار

اور پڑھوں میں نعت رسول

از حضرت بیدم وارثی علیہ الرحمۃ

عدم سے لائی ہے ہستی میں آرزوئے رسول

کہاں کہاں لیے پھرتی ہے جستجوئے رسول

خوشاوہ دل کہ ہو جس دل میں آرزوئے رسول

خوشا وہ آنکھ کہ ہو محو حسن روئے رسول

تلاش نقش کف پائے مصطفی کی قسم

چنے ہیں آنکھوں سے ذرات خاک کوئے رسول

 



Total Pages: 188

Go To