Book Name:Jannati Zevar

ہے ٹوٹا ہوا دل ہی سرکار کا کاشانہ

کیوں زلف معنبر سے کوچے نہ مہک اُٹھیں

ہے پنجۂ قدرت جب زلفوں کا تری شانہ

ہر پھول میں بو تیری ہر شمع میں ضو تیری

بلبل ہے ترا بلبل پروانہ ہے پروانہ

اس در کی حضوری ہی عصیاں کی دوا ٹھہری

ہے زہر معاصی کا طیبہ ہی دواخانہ

   

ؔؔآباد اسے فرما ویراں ہے دل نوری                                                                               

جلوے ترے بس جائیں آباد ہو ویرانہ                                                                                       

از حضرت محدّث اعظم قبلہ کچھوچھوی علیہ الرحمۃ

شب معراج عجب نور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

پتا پتا شجر طور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

اک قدم فرش پر ہے ایک قدم عرش پر ہے

ان کو نزدیک ہے جو دور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

غیب کیا چیز ہے دیکھ آئے ہیں وہ غیب الغیب

یعنی وہ ذات جو مشہور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

دیکھ آئے ہیں وہ آیات خدائے برتر

یہی قرآن میں مسطور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

مرحبا کہتا ہے کوئی تو کوئی صلّ علیٰ

نغمہ سنجی میں لب حور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

ربّ ھَب لی یہ کہا رب نے کہ اے میرے حبیب

تم کو منظور تو منظور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

اے شفاعت کے دھنی تیری شفاعت سن کر

شادماں ہر دل رنجور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

پالیا ان کو تو کونین کو پایا سیّد

یعنی جھولی مری بھر پور ہے سُبْحٰنَ اللہِ

از مولانا قدرت اللّٰہ صاحب عارف بستوی

نہ ہوتی جو منظور بعثت کسی کی       تو دنیا میں ہوتی نہ خلقت کسی کی

خدا کی قسم انبیاء بھی نہ آتے         نہ مقبول ہو تی عبادت کسی کی

یہ چاند اور سورج کی نوری شعائیں   نمایاں ہے ان میں صباحت کسی کی

شفاعت کی کنجی عطاکرکے مولیٰ     دکھائے گامحشر میں عزت کسی کی

سبھی انبیاء تا بموسیٰ وعیسیٰ         سنانے کو آئے بشارت کسی کی

کسی کی محبت سے جنت ملے گی     دلائے گی دوزخ عداوت کسی کی

لبوں پر گنہ گار عارف کے یارب

دم نزع جاری ہو مدحت کسی کی

دیگر

 



Total Pages: 188

Go To