Book Name:Jannati Zevar

زمانہ پلتا ہے اس آستان عالی سے        عجب ہے جودونوال محمد عربی

لگارہے ہیں ہمیشہ سے مہرومہ چکر         ملا نہ کوئی مثال محمد عربی

اندھیری رات نہ ہوگی مری لحد میں کبھی    میں ہوں غلام بلال محمد عربی

گیاہ وخاروخس وخاک سے وہ بدترہے    نہیں ہے جس کو خیال محمد عربی

یہ جان کیا دوجہاں گر مجھے میسرہوں      کروں فدا بجمال محمد عربی

جمیل قادری شکر خدا کہ تو بھی ہوا

غلام عترت و آل محمد عربی

از حضرت آسی علیہ الرحمۃ

کہاں گلشن کہاں روئے محمد    کہاں سنبل کہاں موئے محمد

    ہے عالم آہن و آہن ربا کا        کھنچا جاتا ہے دل سوئے محمد   

نہ چھانی مشت خاک اپنی کسی نے    ہے دل ہی میں رہ کوئے محمد

دل صد چاک میں مانند شانہ      رچی ہے بوئے گیسوئے محمد

دم جاں بخش اعجازمسیحا           نسیم گلشن کوئے محمد

حیات جاوداں پاتا ہے آسی       قتیل تیغ ابروئے محمد

      دیگر                                             

نہ میرے دل نہ جگر پر نہ دیدۂ تر پر

کرم کرے وہ نشان قدم تو پتھر پر

تمہارے حسن کی تصویر کوئی کیاکھینچے

نظرٹھہرتی نہیں عارض منور پر

کسی نے لی رہ کعبہ کوئی گیاسوئے دیر

پڑے رہے تیرے بندے مگر تیرے درپر

گناہ گار ہوں میں واعظو تمہیں کیافکر

مرا معاملہ چھوڑو شفیع محشر پر

پلادے کہ آج تو مرتے ہیں رنداے ساقی

ضرور کیا کہ یہ جلسہ ہو حوض کوثر پر

اخیر وقت ہے آسی چلو مدینے کو

  نثار ہو کے مرو تربت پیمبر پر   

از حضرت شفیق جونپوری علیہ الرحمۃ

نظر آتی ہے گلشن میں ہوا نا ساز گار اپنی

گل باغ خلیلی بھیج دے بادبہار اپنی

اٹھ اے امت کے والی کفر دھمکاتا ہے مسلم کو

علی کو بھیج دے آجائیں لے کر ذوالفقار اپنی

طریق مصطفی کو چھوڑنا ہے وجہ بربادی

اسی سے قوم دنیا میں ہوئی بے اقتدار اپنی

ہمیں کرنی ہے شاہنشاہ بطحا کی رضا جوئی

وہ اپنے ہوگئے تو رحمت پروردگار اپنی

بنے گی گرمیٔ خورشید خنکی باغ جنت کی

وہ جس دم لے کے آئیں گے نسیم خوشگوار اپنی

 



Total Pages: 188

Go To