Book Name:Jannati Zevar

رب سلم کے کہنے والے پر              جان کے ساتھ ہوں نثار سلام

میری بگڑی بنانے والے پر               بھیج اے میرے کردگار سلام

پردہ میرا نہ فاش حشر میں ہو             اے میرے حق کے راز دار سلام

         عرض کرتا ہے یہ حسن تیرا   

             تجھ پر اے خلد کی بہار سلام

عجب رنگ پر ہے بہارِ مدینہ                کہ سب جنتیں ہیں نثارِ مدینہ

مبارک رہے عندلیبو تمہیں گل            ہمیں گل سے بہتر ہے خارِ مدینہ

مری خاک یارب نہ برباد جائے            پس مرگ کر دے غبارِ مدینہ

رگ گل کی جب نازُکی دیکھتا ہوں            مجھے یاد آتے ہیں خارِ مدینہ

جدھر دیکھئے باغِ جنت  ِکھلا ہے               نظر میں ہے نقش و نگارِ مدینہ

رہیں انکے جلوے بسیں انکے جلوے         مرا دل بنے یادگارِ مدینہ

  بنا آسماں منزلِ ابن مریم   

 گئے لامکاں تاجدارِ مدینہ   

تمہارانام مصیبت میں جب لیا ہوگا

   ہمار بگڑا ہوا کام بن گیا ہوگا

   دکھائی جائے گی محشر میں شان محبوبی  

   کہ آپ ہی کی خوشی آپ کا کہاہوگا

خدائے پاک کی چاہیں گے اگلے پچھلے خوشی

خدائے پاک خوشی ان کی چاہتا ہوگا

کسی کے پاؤ ں کی بیڑی یہ کاٹتے ہوں گے

   کوئی اسیر غم ان کو پکارتا ہوگا

کسی کے پلے پہ ہوں گے یہ وقت وزن عمل

کوئی امید سے منہ ان کاتک رہا ہوگا

کوئی کہے گا دہائی ہے یارسول اللہ

تو کوئی تھام کے دامن مچل گیاہوگا

کسی کو لے کے  فرشتے  چلیں گے سوئے جحیم

وہ ان کا راستہ پھر پھرکے دیکھتاہوگا

کوئی قریب ترازو کوئی لب کوثر

کوئی صراط پہ ان کو پکارتا ہوگا

وہ پاک دل کہ نہیں جس کو اپنا اندیشہ

  ہجوم فکر و تردد میں گھر گیا ہوگا   

ازمولانا جمیل الرحمن بریلوی علیہ الرحمۃ

سلطان جہاں محبوب خداتیری شان وشوکت کیا کہنا

ہرشے پہ لکھا ہے نام ترا ترے ذکر کی رفعت کیا کہنا

معراج ہوئی تا عرش گئے حق تم سے ملا تم حق سے ملے

سب راز فَاَوْحٰی دل پہ کھلے یہ عزت و حشمت کیا کہنا

ہر ذرہ ترا دیوانہ ہے ہردل میں ترا کاشانہ ہے

ہر شمع تری پروانہ ہے اے شمع ہدایت کیا کہنا

 



Total Pages: 188

Go To