Book Name:Jannati Zevar

صدر بزم انبیاء مولائے کل فخر رسل           محرم اسرارِ حق، شان خدا میرے رسول

مظہر شان الہی تاجدار کائنات                     نائب حق حاکم ہر ماسوامیرے رسول

مہبط لولاک سیار فلک عرش آستاں                صاحب معراج ومصداق دنی میرے رسول

سورۂ والفجرعکس روئے روشن کا بیاں             مطلع والشمس و شرح والضحی میرے رسول

مطلعِ انوار رشکِ آفتاب وماہتاب               نیّربرج شرف نور خدامیرے رسول   

ابن مریم کی بشارت روح پیغام کلیم             بانی کعبہ کی تاریخی دعا میرے رسول

منصب شانِ رسالت اور لقب ختم الرسل   منزلِ محبوبیت میں مصطفی میرے رسول

جنکے قدموں سے ہے وابستہ دوعالم کی نجات         وہ امیر کارواں وہ حق نما میرے رسول

اعظمی مومن ہوں ربُّ العٰلمیں میراخدا

رحمۃ للعٰلمیں صلّ علی میرے رسول

نگار طیبہ ازل سے ہے تیری آرزو                                     میرے وجود کا مقصد ہے جستجو تیری

ترا سکوت ہے لطف وکرم کی اک دنیا              نسیم خلد کی جنت ہے گفتگو تیری

نسیم خلد نے مانگی ہے بھیک خوشبو کی                کھلی مدینہ میں جب زلف مشکبو تیری

میری وفات کادن میری عید کا دن ہو              بوقت مرگ جو صورت ہو روبرو تیری

گناہ کرکے بھی امید وار جنت ہوں                  سناہے جب سے کہ لطف و کرم ہے خو تیری

کہاں نہیں رخ انور کی جلوہ سامانی                    جہاں میں طلعت زیباسے چار سوتیری

حریم کعبہ میں بھی یاد آئی طیبہ کی                     کہ یادگارحرم میں ہے کوبکو تیری

نہ چھوٹے دامن عبدیت اعظمی ان کا

                   اسی سے دونوں جہاں میں ہے آبرو تیری                    ّّّ

یہ حالت ہے اب سانس لینا گراں ہے           مگر آپ کا نام ورد زباں ہے

   کوئی جانے کیا اس کا پرچم کہاں ہے              سرعرش جس کے قدم کا نشاں ہے

وہ فانوس فطرت ہیں دونوں جہاں میں            انہیں کی تجلی یہاں ہے وہاں ہے

یہ سارا جہاں ان کے زیر قدم ہے         کہ پامال ان کا مکاں لامکاں ہے   

کف دست رحمت میں ہے ساراعالم      زمیں آپ کی آپ کاآسماں ہے

مسلم ہے ان کو خدا کی نیابت          کلام خدا مصطفی کی زباں ہے

نہ پوچھ اعظمی منزل سر بلندی    

 مرا سر ہے محبوب کا آستاں ہے

حاجیو !اب گنبد سرکار تھوڑی دور ہے             رحمت حق کا علمبردار تھوڑی دور ہے

ہے خریدارگنہ رحمت کا تاجر جس جگہ            عاصیو! وہ مصطفی بازار تھوڑی دور ہے

عشق و مستی میں قدم آگے بڑھا کردیکھ لو       گنبد خضراء کا وہ مینار تھوڑی دور ہے

نعمت کونین ملتی ہے گداؤں کو جہاں               وہ محمد کا سخی دربار تھوڑی دور ہے

لے کے آئے تھے جہاں جبریل بھی فوج ملک            وہ احد کا جنتی کہسار تھوڑی دور ہے

وہ شہیدان محبت کی مبارک خوابگاہ                 وہ بقیع پاک خلدآثار تھوڑی دور ہے

اللہ  اللہ  وہ گلستان مدینہ مرحبا                        پھول سے بہترہیں جسکے خار تھوڑی دور ہے

چل پڑا ہوں گرتا پڑتاسوئے طیبہ المدد    اے مسیحا اب تیرا بیمار تھوڑی دور ہے

دشت طیبہ ہے یہاں چل سر کے بل اے  اعظمی

مصطفی کا جنتی دربار تھوڑی دورہے

حاجیوں کا استقبال

     مبارک آگئے مکہ مدینہ دیکھنے والے         خدا کا گھر رسول حق کاروضہ دیکھنے والے

حریم کعبہ میں مستوں کا میلہ دیکھنے والے       مزارمصطفی پہ حق کا جلوہ دیکھنے والے

جلال کعبہ کا اونچا منارہ دیکھنے والے          جمال گنبد خضراء کاتارا دیکھنے والے   

لپٹ کر رونے والے کعبہ جاں کے غلافوں سے      نبی کے درپہ رحمت کابرسنا دیکھنے والے

طواف کعبہ میں ہرہر قدم پر جھومنے والے         بھرے پیالوں میں زمزم کا چھلکنا دیکھنے والے

 



Total Pages: 188

Go To