Book Name:Jannati Zevar

                 حمد باری  تَعَالٰی                      

پوچھا گل سے یہ میں نے کہ اے خوبرو    تجھ میں آئی کہاں سے نزاکت کی خو

یاد میں کس کی ہنستا مہکتا ہے تو       ہنس کے بولا کہ اے طالب رنگ وبو

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ        اللّٰہُ

عرض کی میں نے سنبل سے اے مشکبو      صبح کو کرکے شبنم سے تازہ وضو   

جھوم کر کون سا ذ کر کرتاہے تو       سن کے کرنے لگا دم بدم ذکر ہُو

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ        اللّٰہُ

جب کہا میں نے بلبل سے اے خوش گلو          کیوں چمن میں چہکتاہے تو چارسُو

دیکھ کر گل کسے یاد کرتا ہے تو     وجد میں بول اٹھا وحدہ وحدہ

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ        اللّٰہُ

جب پپیہے سے پوچھاکہ اے نیم جاں     یاد میں کس کی کہتا ہے تو پی کہاں

کون ہے پی ترا کیاہے نام و  نشاں     بول اٹھا بس وہی جس پہ شیداہے تو

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ        اللّٰہُ

میں نے قمری سے کی جا کے یہ گفتگو    گاتی رہتی ہے کوکو  توکیوں کوبکو

ڈھونڈتی ہے کسے کس کی ہے آرزو      بولی سن میرا نغمہ ہے حق سرّہ

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ

آکے جگنو جو چمکا مرے روبرو      عرض کی میں نے اے شاہدشعلہ رو

کس کی طلعت ہے تو کس کا جلوہ ہے تو       یہ کہا جس کا جلوہ ہے ہر چار سو

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ     اللّٰہُ

میں نے پوچھا یہ پروانے سے دوبدو    کس لیے شمع کی لو پہ جلتا ہے تو

شعلۂ نار میں کس کی ہے جستجو   جلتے جلتے کہا اس نے یا ُنورہٗ

اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ

اعظمی گرچہ بے حد گنہ گار ہے     مجرم و بے عمل ہے خطا کار ہے

حق  تَعَالٰی مگر ایسا غفار ہے      اس کی رحمت کا نعرہ ہے لاتقنطوا

    اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ       اللّٰہُ   

                                                                  دیگر                                                                                                                                                                                             

اے میرے معبود حق اے کردگار     سارے عالم کاتو ہے پروردگار

فضل سے تیرے ہی اے رب کریم      گلشن ہستی کی ہے ساری بہار

کر دیا مجھ کو غلام مصطفی            ہو گیا میں دوجہاں کا تاجدار

بخش دے یارب خطائیں سب میری      تو ہے غفار اور میں عصیاں شعار

تیری رحمت پر بھروسا ہے مجھے      فضل کا تیرے میں ہوں امیدوار

کس طرح ہو شکر نعمت کا ادا      شکر ہے محدود نعمت بے شمار

ناز ہے اتنی سی نسبت پر مجھے      میں ہوں مجرم اور تو آمر زگار

تیرے سجدوں نے وہ رفعت دی مجھے    رفعت افلاک ہے مجھ پر نثار

بندہ فرماکر  بڑھایا کس قدر       قدسیوں میں میرا شاہانہ وقار

خاک بوس طیبہ ہے یہ اعظمی

شر میں یارب نہ ہو یہ شرمسار

     نعت شریف

سرور عالم نبیُّ الانبیاء میرے رسول              اولیں و آخریں کے پیشوا میرے رسول

 



Total Pages: 188

Go To