Book Name:Naat Khwani K Mutaleq Suwal Jawab

اذان کے بعد علاقے میں صَدائے مدینہ کی دھومیں مچاتے ہوئے مسلمانوں کو  نمازِ فجر کے لیے جگائیے ۔ نمازِ فجر کے بعد نئے نئے اسلامی بھائیوں پر اِنفرادی کوشش کر کے انہیں مدنی حلقے میں بٹھائیے ۔ صَدائے مدینہ لگانے سے نمازیوں کی تعداد میں اِضافہ ہو گا ، مَساجد آباد ہوں گی ، امام صاحِبان اور مسجد کی اِنتظامیہ والے بھی خوش ہوں گے تو یوں مدنی کاموں میں ترقی ہو گی ۔  

اِسی طرح دن میں مارکیٹوں اور بازاروں میں دُکانداروں کے فارِغ اوقات   سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے چوک دَرس اور مدنی دورہ کی ترکیب بنائیے ۔  اِنفرادی کوشش کے ذَریعے لوگوں کو مدنی اِنعامات کا عامِل اور مدنی قافلوں کا مُسافِر بنانے کی کوشش کیجیے ۔  بڑے شہروں میں جہاں لوگ جلد نہیں سوتے وہاں عشا کی جماعت کے وقت سے دو گھنٹے تک مدنی کام کیا جا سکتا ہے ۔  اِسی طرح عام دِنوں میں جن اسلامی بھائیوں سے مُلاقات نہ ہو پاتی ہو تو  چھٹی کے دن سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے ان اسلامی بھائیوں سے مُلاقات کر کے انہیں ہفتہ وار سنَّتوں بھرے اِجتماعات میں شِرکت اور مدنی قافلوں میں سفر کرنے کی دعوت دیجیے اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ مدنی کام بڑھتے جائیں گے ۔   

٭٭٭٭٭

مُحَدِّث ہونا عِلم کا پہلا زینہ اور مُجتہد ہونا آخِری مَنزِل

اعلیٰ حضرت ، امامِ اہلِسنَّت مولانا شاہ امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن فرماتے ہیں : ”قیامت قریب ہے ، اچھے لوگ اُٹھتے جاتے ہیں ، جو جاتا ہے اپنا نائِب نہیں چھوڑتا ۔  ( پھر فرمایا : )امام بخاری نے انتقال فرمایا نوے ہزار شاگرد محدِّث چھوڑے ، سیِّدُنا امامِ اعظم رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے انتقال فرمایا اور ایک ہزار مجتہدین اپنے شاگرد چھوڑے ۔  محدِّث ہونا علم کا پہلا زینہ ہے اور مجتہد ہونا آخری منزل اور اب ہزار مرتے ہیں اور ایک بھی نہیں چھوڑتے ۔ “ ( ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت ، ص۲۳۸ مکتبۃ المدینہ باب المدینہ کراچی )

                                                                                                                                                                                                                                                                                             



Total Pages: 15

Go To