Book Name:Mufti e Dawateislami

تعالیٰ علیہ کی زندگی کے کچھ واقعات اور مَدَنی بہاریں بھی ذکر کیں اور ان سے اپنی محبت کا کچھ اس طرح سے اظہار فرمایا:

’’آ ج میرے فارو ق کی ہر طر ف دُھوم ہے میرے مَدَنی بیٹے کی قسمت… (پھر آپ مدظلہ العالی نے وہ مقامات گنوائے جہاں جہاں ٹیلی فون اور انٹر نیٹ کے ذریعے تیجے کا بیان سنا جارہا تھا ۔جب دوران ِ بیان نگرانِ شوریٰ نے امیرِ اہل سنت مدظلہ العالی کو لکھ کر دیا کہ میں ہاتھوں ہاتھ شرعی راہنمائی کے حُصول کے لئے مفتی فاروق علیہ الرحمۃ کی طرف رُجُوع کیاکرتا تھا تو آپ مدظلہ العالی نے عاجزی کرتے ہوئے فرمایا) سچی بات یہ ہے کہ(نگرانِ شوریٰ کی طرح ) میں بھی (شرعی مسائل وغیرہ کے سلسلے میں کبھی کبھار)فاروق بھائی کی طر ف رجوع کرتا تھا اوربار ہاان سے مشورے بھی کیاکرتا تھا، خدا عزوجل کی قسم! اسی وجہ سے مجھے زیادہ صدمہ ہے ورنہ موت تو بر حق ہے‘ آنی ہی ہے ۔(اس کے بعد فرمایا) اِن کو حفاظت ِ ایمان کی ایسی فکر ہوتی تھی کہ آپ کو کیا بتاؤں ؟ میں نے خود ان کے معاملات کو قریب سے دیکھا ہے ۔

کسی بات سے رُجوع کرنے میں کبھی میں نے ان کی پیشانی پربل نہیں دیکھا۔ کئی بارایسا ہوا کہ بعض مسائل میں انہوں نے مجھ سے گفتگو فرمائی ، پھر یا تومجھے قائل کردیا یا خود قائل ہوگئے ۔مگر میں نے کبھی ان کو ناراض ہوتے نہیں دیکھا کہ میں نے اتنی کتا بیں پڑھ رکھی ہیں ،…بلکہ بار ہا عا جزی فرمائی اور مجھ سے یہی کہتے رہتے کہ آپ رہنمائی فرمائیں ۔ کئی بار ایسا ہوا کہ میں نے کسی مَسْئَلَہ میں ان کی رائے پوچھی تو کہنے لگے جیسے آپ فرمائیں ۔کئی بار فتاویٰ میں ضرو رت پڑتی تھی تومجھ سے مشورہ کرتے تھے کہ یہ


 

 



Total Pages: 89

Go To