Book Name:Madrasa Tul Madina Baligan

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

مَدْرَسَةُ الْمَدِیْنَه بالِغان

دُرود شریف کی فضیلت

شَہنشاہِ مدینہ ،  قرارِ قلب و سینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ بَـخْشِشْ نِشان ہے : جس نے کِتاب میں مجھ پر دُرُودِ پاک لکھا تو جب تک میرا نام اُس میں رہے گا فِرشتے اُس کے لئے اِسْتِغْفار ( یعنی بَـخْشِشْ کی دُعا ) کرتے رہیں گے  ۔ [1]

عبث گناہوں کی شامت میں مارے پھرتے ہو                                                     خُدا کی تم پہ ہو رَحْمَت اگر دُرُود پڑھو[2]

صَلُّوا عَلَی الْحَبیب!                       صَلَّی اللّٰہُتَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

تِلاوَتِ قرآنِ پاک کی اہمیت و ضرورت

میٹھے میٹھے اِسْلَامی بھائیو! اَلْحَمْدُ لِلّٰہ! ہم مسلمان ہیں اور مسلمان کے اِیمان کا بُنْیَادِی تقاضا اللہ پاک اور اس کے پیارے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے مَحبَّت ہے ،  جبکہ اللہ پاک سے مَحبَّت کی ایک عَلامَت قرآنِ کریم سے مَحبَّت ہے اور قرآنِ پاک وہ مُقَدَّس کِتاب ہے ،  جس کو اللہ پاک نے جس زبان میں نازِل فرمایا ،  وہ زبان تمام زبانوں سے اَفْضَل ،  جس مہینے میں نازِل فرمایا ، وہ مہینہ سب مہینوں میں اَفْضَل ، جس رات میں نازِل فرمایا ،  وہ رات ہزار مہینوں سے اَفْضَل ،  جس نبی پر نازِل فرمایا  ، وہ نبی تمام نبیوں سے اَفْضَل اور جو اس کو سیکھے سِکھائے وہ انسانوں میں بہترین انسان بن جائے ۔ جیسا کہ دو۲ عالَم کے مالِک و مختار باذنِ پروردگار ،  مکّی مَدَنی سرکار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کا فرمانِ عالیشان ہے :  خَیْرُکُمْ مَّنْ تَعَلَّمَ الْـقُرْاٰنَ وَعَلَّمَهٗ[3]یعنی تم میں سے بہتر شخص وہ ہے جو قرآن سیکھے اور دوسروں کو سکھائے ۔ چُنَانْچِہ ،  

میٹھے میٹھے اِسْلَامی بھائیو! ہِمَّت کیجئے ! قرآنِ پاک خود بھی پڑھنا سیکھئے اور دوسروں کو بھی سکھائیے کہ فرمانِ مُصْطَفٰے صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ہے : قرآنِ پاک سیکھواور اس کی تِلاوَت کرو ، کیونکہ قرآنِ پاک کی مِثال ایسے شخص کے لئے جو اسے سیکھتا ہے ،  پھر اس کی تِلاوَت کرتا ہے اور اسے نَماز میں پڑھتا ہے ،  کستوری سے بھرے ہوئے اس تھیلے کی طرح ہے جس کی خوشبو ہر طرف مہکتی ہے اور جو شخص قرآنِ کریم سیکھے مگر تِلاوَت نہ کرے تو اس کی مِثال کستوری کے اس تھیلے کی طرح ہے جس کا منہ باندھ دیا گیا ہو ۔ [4]

مجھ  کو   اللہ سے   محبَّت   ہے                   یہ اُسی کی عَطا و رَحْمَت ہے

جس کو سرکار سے محبَّت ہے                      اُس کی بخشش کی  یہ ضَمانت ہے

دِل میں قرآں کی میرے عَظَمَت ہے                     اور پیاری ہر ایک سنّت ہے [5]

صَلُّوا عَلَی الْحَبیب!                       صَلَّی اللّٰہُتَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

”فرقانِ حمید“ کے نو۹ حُرُوف کی نِسْبَت سے قرآنِ پاک پڑھنے کے  )9 ( فضائل

میٹھے میٹھے اِسْلَامی بھائیو! اَحَادِیْثِ مُبارَکہ میں قرآنِ کریم پڑھنے کے بَہُت زیادہ فضائل مَرْوِی ہیں ، حُصُولِ بَرَکَت کے لئے چند فرامِینِ مصطفے ٰ



[1]       معجم اوسط ،  باب الالف ،  من اسمه احمد ،  ۱ / ۴۹۷ ،  حدیث : ۱۸۳۵

[2]     نورِ ایمان ، ص ۵۷

[3]       بخاری ، کتاب فضائل القرآن ،  باب خیرکم من تعلم القرآن و علمه ،  ص۱۲۹۹ ،  حدیث : ۵۰۲۷

[4]      ترمذی ، کتاب فضائل القرآن ، باب ما جاء فی سورة ... الخ ،  ص۶۶۹ ،  حدیث : ۲۸۷۶

[5]     وسائِلِ بخشش( مُرمَّم ) ، ص ۶۸۴



Total Pages: 30

Go To