Book Name:Dilchasp Malomaat Sawalan Jawaaban Part 02

نیزفتاویٰ عالمگیری میں ہے  : پیچھے سے آنے والا آگے والے کو سلام کرے  ۔  (  [1])

سوال      ایک جگہ جمع لوگوں کوکسی نے آکرسلام کیاتوکس پر  جواب دینا لازم ہوگا؟

جواب     لوگ جمع ہوں اورکوئی آکر سلام کرے توکسی ایک کا جواب دے دینا کافی ہے ۔  اگر ایک نے بھی جواب نہ دیا تو سب گناہ گار ہوں گے ۔  (  [2])

سوال      گھر میں برکت کا کوئی نسخہ بتائیے ؟

جواب     جب گھر میں داخل ہوں تو گھر والوں کوسلام کیا کریں اس سے گھرمیں برکت ہوتی ہے ۔ مروی ہے کہ  سرکارِ مدینہ ، راحتِ قلب وسینہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے    حضرت سیدنا اَنَس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے فرمایا :  بیٹا ! جب تم اپنے گھرمیں داخل ہوتوسلام کہو ، یہ تمہارے لئے اور تمہارے گھر والوں کے لئے برکت کا با عث ہوگا ۔  (  [3])

سوال      کس عمل سے ”سلام“ کی تکمیل ہوتی ہے ؟

جواب     سلام کے ساتھ ساتھ مصافحہ کرنے سے سلام کی تکمیل ہوتی ہے  ۔ حضور نبیٔ مکرّم ، رسولِ محتشم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمنے ارشاد فرمایا :  مریض کی پوری عیادت یہ ہے کہ اس کی پیشانی پر ہاتھ رکھ کر پوچھے کہ مِزاج کیسا ہے ؟ [4]) اور پوری تَحِیَّت  (  یعنی سلام کی تکمیل) یہ ہے کہ مُصافَحَہ بھی کیاجائے ۔  (  [5])

سوال      سب سے پہلے حضور رحمتِ عالم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے مُصافَحَہ کا شَرف کن کو حاصل ہوا؟

جواب     وہ یمنی افرادتھے جنہوں نے سب سے پہلے مکی مدنی آقا ، دوعالم کے داتا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے مصافحہ کیا تھا ۔  حضرت سیدنا انس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ فرماتے ہیں کہ جب اہلِ یمن بارگاہِ رسالت میں حاضر ہوئے تو حضور نبیٔ کریم ، رَءُوْفٌ رَّحیمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے فرمایا :  تمہارے پاس اہلِ یمن آئے ہیں اور وہ پہلے آدمی ہیں جنہوں نے آکر مصافحہ کیا  ۔  (  [6])

سوال      مُصافَحَہ کس طرح کرنا چاہئے ؟

جواب     مسکراکرگرم جوشی سے مصافحہ کریں ۔  درود شریف پڑھیں اور ہوسکے تو یہ دعا بھی پڑھیں :  یَغْفِرُ اللہُ لَنَا وَلَکُمْ (  یعنی اللہ عَزَّ وَجَلَّ ہماری اور تمہاری مغفرت فرمائے ) ۔   (  [7])

سوال      مُصافَحَہ کی برکت سے کونسے باطنی مرض کا خاتمہ ہوتا ہے ؟

جواب     آپس میں ہاتھ ملانے سے بغض وکینہ ختم ہوتا ہے ۔  حضور تاجدارِ دوجہان ، رحمتِ عالَمیان صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے ارشاد فرمایا  :  ایک دوسرے کے ساتھ مصافحہ کرو اس سے کینہ جاتا رہتا ہے اورتحفہ بھیجو آپس میں محبت ہوگی اور دشمنی جاتی رہے گی ۔  (  [8])

سوال      خوشی کے موقع پر گلے ملنا کیسا ہے ؟

جواب     خوشی میں کسی سے گلے ملنا سنّت ہے ۔  (  [9]) حضرت سیدتناعائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہَا بیان کرتی ہیں کہ حضرت زید بن حارِثہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ مدینہ طیّبہ آئے تواُس وقت حضور نبیٔ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّممیرے گھر میں تھے ۔ حضرت زید رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہکاشانۂ رسالت پر حاضر ہوئے اوردروازہ کھٹکھٹایا تو حضوررحمتِ عالَم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم اٹھے اور کپڑاکھینچتے ہوئے ان کی طر ف تشریف لے گئے اور اُن سے مُعانَقَہ کیا اور ان کو بوسہ دیا ۔  (  [10])

سوال      بزرگانِ دین کی دَسْت بوسی کی فضیلت بیان کیجئے ؟

جواب     شَیْخُ الْمَشائخ حضرت سیدنا بابا فرید الدین  گنج شکر رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہ ارشادفرماتے ہیں  : قیامت کے دن بہت سارے گناہگار ، بزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللہُ الْمُبِیْن کی دست بو سی کی برکت سے بخشے جائیں گے اور دوزخ کے عذاب سے نجات حاصل کریں گے ۔  (  [11])

قرآنِ کریم

  (  فضائل  ومعلومات)

سوال      قرآنِ پاک حفظ کرنے کے متعلق شرعی حکم کیا ہے ؟

جواب   ایک آ یت کا حفظ کرنا ہر مکلف (  یعنی عاقل بالغ ) مسلمان پر فرضِ عین ہے اور پورے قرآنِ مجید کا حِفْظ کرنا فرضِ کفایہ ہے (  کہ اگر چند مسلمان حفظ کر لیں تو دوسروں کے ذمے زبانی



[1]     فتاوی ھندیة ، کتاب الکراھیة ، الباب السابع فی السلام وتشمیت العاطس ، ۵ /  ۳۲۵ ۔

[2]     فتاوی ھندیة ، کتاب الکراھیة ، الباب السابع فی السلام وتشمیت العاطس ، ۵ /  ۳۲۵ ۔

[3]     ترمذی ، کتاب الاستئذان والادب ، باب ماجاء فی التسلیم اذا دخل بیتہ ، ۴ /  ۳۲۰ ، حدیث : ۲۷۰۷ ۔

[4]     مریض کے سر یا پیشانی پر ہاتھ رکھ کر عیادت کرنا اُس وقت ہے جب کوئی شرعی رکاوٹ نہ ہو اور مریض کی خود خواہش ہوورنہ اُس کے سر پر ہاتھ نہ رکھے ۔  (  بہارشریعت ، ۳ / ۵۰۵ ، ماخوذاً)

[5]     ترمذی ، کتاب الاستئذان والادب ، باب ماجاء فی المصافحة ، ۴ /  ۳۳۴ ، حدیث : ۲۷۴۰ ۔

[6]     ابو داود ، کتاب الادب ، باب فی المصافحة ، ۴ /  ۴۵۳ ، حدیث : ۵۲۱۳ ۔

[7]     سنتیں اور آداب ، ص۲۸ ۔

[8]     موطا امام مالک ، کتاب حسن الخلق ، باب ماجاء فی المھاجرة ، ۲ /  ۴۰۷ ، حدیث : ۱۷۳۱ ۔

[9]     مرآۃ المناجیح ، ۶ /  ۳۵۹ ۔

[10]     

Total Pages: 122

Go To