Book Name:Dilchasp Malomaat Sawalan Jawaaban Part 02

سوال      رحمتِ عالمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے کتنے عمرے اور فرضیتِ حج کے بعد کتنے حج کئے ؟

جواب     مفتی احمد یارخان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْمَنَّان فرماتے ہیں :  حضورنبیِ پاک صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے بعدفرضیتِ حج صرف ایک حج کیا ، عمرے کل چارکئے ۔  (  [1])

سوال      عُمرے کے طواف کا ایک پھیرا چھوٹ گیا تو کیا کفّارہ ہے ؟

جواب     عُمرے کا طَواف فرض ہے ، اِس کا اگر ایک پھیرا بھی چھوٹ گیا تو دَم واجِب ہے ، اگر بِالکل طَواف نہ کیا یا اکثر  (  یعنی چار پھیرے ) تَرک کئے تو کفّارہ نہیں بلکہ ان کا ادا کرنا لازِم ہے ۔  (  [2])

قسم

سوال      قسم کھاکرتوڑدی تو اس کا کفّارہ کیا ہے ؟

جواب     قسم کا کفارہ غلام آزاد کرنا یا دس  مسکینوں کو دونوں وقت پیٹ بھر کر کھانا کھلانا یا ان کومُتَوسِّط درجے کے کپڑے پہنانا ہے یعنی یہ اختیار ہے کہ ان تین باتوں میں سے جو چاہے کرے ۔  اورجن مساکین کو صبح کے وقت کھلایا انھیں کو شام کے وقت بھی کھلائے ۔ اگر غلام آزاد کرنے یادس مسکین کو کھانا یا کپڑے دینے پر قادر نہ ہو توپے درپے (  یعنی لگاتار) تین روزے رکھے [3]) ۔  (  [4])

سوال      قسم کا کفارہ لازم ہونے  کی شرائط بیان کیجئے ؟

جواب     قسم کے لیے چند شرطیں ہیں کہ اگر وہ نہ ہوں تو کفارہ نہیں ۔  قسم کھانے والا  (  1) مسلمان (  2) عاقل (  3) بالغ ہو (  4) جس کی قسم کھائی وہ چیزعقلاً ممکن ہو یعنی ہوسکتی ہو اگرچہ مُحالِ عادی ہواور (  5) قسم اور جس چیز کی قسم کھائی دونوں کو ایک ساتھ کہا ہو ، درمیان میں فاصلہ ہوگا تو قسم نہ ہوگی مثلاً کسی نے اس سے کہلایا کہ کہو  : خدا کی قسم ۔  اس نے کہا  : خدا کی قسم  ۔ اُس نے کہا کہو  : فلاں کام کروں گا ۔ اس نے کہاتو یہ قسم نہ ہوئی ۔  (  [5])

سوال      کس طرح کی قسم کو پورا کرنا ضروری ہے ؟

جواب     بعض قسمیں ایسی ہیں کہ اُن کا پورا کرنا ضروری ہے مثلاً کسی ایسے کام کے کرنے کی قسم کھائی جس کا بغیر قسم کرنا ضروری تھا یا گناہ سے بچنے کی قسم کھائی تو اس صورت میں قسم سچی کرناضروری ہے ۔  مثلاً خدا کی قسم !  ظہر پڑھوں گا یا چوری یا بدکاری نہ کروں گا ۔  (  [6])

سوال      وہ کونسی قسم ہے جس کا توڑنا ضروری ہے ؟

جواب     گناہ کرنے یا فرائض وو اجبات نہ اداکرنے کی قسم کھائی مثلاً قسم کھائی کہ نماز نہ پڑھوں گا ۔ یا چوری کروں گا یا ماں باپ سے کلام نہ کروں گاتو اس طرح کی قسم توڑنا شرعاً ضروری ہے مگر اس صورت میں بھی کفارہ لازم ہوگا ۔  (  [7])

سوال      ”یمینِ فَور“کی تعریف اور اس کا حکم بیان کیجئے ؟

جواب     اگر کسی خاص وجہ سے یا کسی بات کے جواب میں قسم کھائی جس سے اُس کا م کا فوراً کرنایا نہ کرنا سمجھا جاتاہے اُس کو یمینِ فَور کہتے ہیں ۔  ایسی قسم میں اگر فوراً وہ بات ہوگئی تو قسم ٹوٹ گئی اور اگر کچھ دیر کے بعد ہو تو اس کا کچھ اثر نہیں مثلاً کسی نے اس کو ناشتہ کے لیے کہا کہ میرے ساتھ ناشتہ کرلو  ۔ اُس نے کہا :  خدا کی قسم !  ناشتہ نہیں کروں گا ۔ اور اُس کے ساتھ ناشتہ نہ کیا توقسم نہیں ٹوٹی اگرچہ گھر جاکر اُسی روز ناشتہ کیا ہو ۔  (  [8])

سوال      ”یمینِ مُوَقَّت“کونسی قسم کو کہتے ہیں اور اس کا حکم کیا ہے ؟

جواب     جس کے لیے کوئی وقت ، ایک دن دودن یا کم و بیش مقرر کردیا اس میں اگر وقتِ مُعَیَّن کے اندر قسم کے خلاف کیا تو  (  قسم) ٹوٹ گئی ورنہ نہیں مثلاً قسم کھائی کہ اس گھڑے میں جو پانی ہے اسے آج پیوں گااور آج نہ پیا تو قسم ٹوٹ گئی اور کفارہ دینا ہوگا اور پی لیا تو قسم پوری ہو گئی ۔  (  [9])

سوال      ایسا کہنا کیسا کہ”اگر میں ایسا کروں تومجھ پر اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کی لعنت ہو ۔ ؟ ‘‘

جواب   یہ  (  یعنی درج ذیل) الفاظ قسم نہیں اگرچہ ان کے بولنے سے گنہگار ہوگا جبکہ اپنی بات میں جھوٹا ہے : اگر ایسا کروں تومجھ پر اللہ عَزَّ  وَجَلَّ) کا غضب ہو ، اُس کی لعنت ہو ، اُس کا عذاب ہو ۔  خدا کا قہرٹوٹے ، مجھ پر آسمان پھٹ پڑے ، مجھے زمین نگل جائے ۔  مجھ پر خدا کی مارہو ، خدا کی پھٹکارہو ، رسول اﷲصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّم کی شفاعت نہ ملے ، مجھے خدا کا



[1]     مرآۃ المناجیح ، ۴ /  ۱۰۸ ۔

[2]     المسلک المتقسط ، باب الجنایات ، فصل فی الجنایة فی طواف العمرة ، ص ۳۵۳ ۔

[3]     قسم کے کفارے کے مسائل کی معلومات کیلئے بہار شریعت جلد ۲ ، حصہ ۹ کا مطالعہ کیجئے ۔

[4]     بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ /  ۳۰٥ ، ٣٠٩ ، ملتقطاً ۔

[5]     فتاوی ھندیة ، کتاب الایمان ، الباب الاول ۔ ۔  ۔ الخ ، ۲ /  ۵۱ ، ملتقطاً ، بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ /  ۳۰۰-٣٠١ ، ماخوذاً ۔

[6]     المبسوط ، کتاب الایمان ، الجزء : ۸ ، ۴ /  ۱۳۳ ، بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ / ۲۹۹ ، ملتقطاً ۔

[7]     المبسوط ، کتاب الایمان ، الجزء : ۸ ، ۴ /  ۱۳۳ ، بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ /  ۲۹۹ ، ملتقطاً ۔

[8]      بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ /  ۲۹۹ ، ۳۰۰ ، ملتقطاً ۔

[9]     بہارشریعت ، حصہ۹ ، ۲ / ۳۰۰ ۔



Total Pages: 122

Go To