Book Name:Qutub-e-Alam Ki Ajeeb Karamat Ma Deger Dilchasp Sawal Jawab

٭٭٭٭٭٭

رِزق میں  برکت کا وظیفہ

       دعوتِ اسلامی کے اِشاعتی ادارے مکتبۃ المدینہ کی مطبوعہ کتاب  ’’ ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت  ‘‘  کے صفحہ 128پر ہے:ایک صحابی  (رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ )   خدمت ِاقدس  (صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم )   میں حاضر ہوئے اور عرض کی: دُنیا نے مجھ سے پیٹھ پھیر لی۔ فرمایا: کیا وہ تسبیح تمہیں یاد نہیں جو تسبیح ہے ملائکہ کی اور جس کی برکت سے روزی دی جاتی ہے۔ خلقِ دُنیا آئے گی تیرے پاس ذَلیل و خوار ہو کر ،  طلوعِ فجر کے ساتھ سو بار کہا کر  ’’ سُبْحٰنَ اللہِ وَبِحَمْدِہٖ سُبْحٰنَ اللہِ الْعَظِیْمِ وَ بِحَمْدِہٖ اَسْتَغْفِرُ اللہ ‘‘   اُن صحابی رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ کو سات دن گزرے تھے کہ خدمتِ اقدس میں حاضر ہو کر عرض کی:حضور!  دُنیا میرے پاس اس کثرت سے آئی،  میں حیران ہوں کہاں اُٹھاؤں کہاں رکھوں!   (لسان المیزان،   حرف العین، ۴ / ۳۰۴،  حدیث: ۵۱۰۰،  زرقانی علی المواھب، ذکر طبه  صلی الله علیه وسلم من داء الفقر، ۹ / ۴۲۸ واللفظ له

 

 



Total Pages: 21

Go To