Book Name:Ijtimai Sunnat e itikaf ka Jadwal

ساتھ اعتِکاف کرنا چاہے وہ آخِری عَشرے کا اعتِکاف کرے۔ اس لیے کہ مجھے پہلے شبِ قَدر دکھا دی گئی تھی پھر بُھلا دی گئی اور اب میں نے یہ دیکھا ہے کہ شبِ قَدر کی صبح  کو گیلی مِٹّی میں سجدہ کر رہا ہوں لہٰذا اب تم شبِ قَدْر کو آخِری عَشرے کی طاق راتوں میں تلاش کرو۔“ حضرتِ سیِّدُنا ابوسعید خُدریرَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں کہ اس شب بارِش ہوئی اورمسجِد شریف کی چھت مبارک ٹپکنے لگی ، چُنانچِہ اکّیس رَمَضانُ الْمُبارَک کی صُبح کو میری آنکھوں نے نبیٔ کریم  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کو اس حالت میں   دیکھا کہ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کی پَیشانی مُبارک پر پانی والی گیلی مِٹّی کا نِشانِ عالی شان تھا۔ ([1])

چاند نظر آتے ہی اعتِکاف میں بیٹھ جاتے

    میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!اِن احادیثِ مبارکہ سے معلوم ہوا کہ ہمارے پیارے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم نے پورے ماہِ رَمَضانُ الْمُبارَک کا بھی اعتکاف فرمایا ہے  لہٰذا ہمیں بھی ہر برس ورنہ زندگی میں کم از کم ایک بار تو  ضرور اِس ادائے مصطَفٰے کو ادا کرتے ہوئے پورے ماہِ رَمَضانُ الْمُبارَک کے اِعتِکاف کی سعادت حاصل  کر لینی چاہیے۔ ہمارے پیارے سرکار  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم یوں تو ہر وقت اللہ عَزَّوَجَلَّ   کی رِضا جوئی کے لیے کمربَستہ رہتے لیکن بطورِ خاص رَمَضان المبارک کے مہینے میں عبادت کاخوب  اہتِمام فرمایا کرتے تھے۔ صَحابۂ کِرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان کا بھی یہ  معمول تھا  کہ رمضان شریف  کے بابرکت مہینے میں عبادت کا خوب اِہتمام فرماتے ، رمضان المبارک  کا چاند نظر آنے سے قبل  ہی  اپنے آپ کو  دیگر کاموں سے فارغ   کر لیتے ، پھر  جیسے ہی رمضان المبارک کا چاند نظر آتا  تو بعض  حضرات اعتکاف میں بیٹھ جاتے چنانچہ  حضرتِ سَیِّدُنا اَنَس بن مالِکرَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں: ماہِ شعبان کا چاند نظر آتے ہی صَحابۂ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان  تِلاوتِ قرآنِ پاک کی طرف خُوب مُتَوَجِّہ ہو جاتے،اپنے اَموال کی زکوٰۃ نکالتے تاکہ غُرَبا و مَساکین مسلمان ماہِ رَمضان کے روزوں کے لئے تیّاری کر سکیں، حُکّام قیدیوں کو طَلَب کر کے جس پر ”حَد“ (سزا)  قائم کرنا ہوتی اُس پر حَد قائم کرتے،بقیّہ میں سے جن کو مناسِب ہوتا انہیں آزاد کر دیتے،تاجِر اپنے قرضے ادا کر دیتے،دوسروں سے اپنے قرضے وُصُول کر لیتے اور رَمَضان شریف کا چاند نظر آتے ہی غسل کر کے (بعض حضرات) اعتکاف میں بیٹھ جاتے۔ ([2])

دعوتِ اسلامی کے  زیرِ اہتمام”اِجتماعی اِعتکاف“

                اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عَزَّوَجَلَّ  سرکارِ عالی وقار،مدینے کے تاجدار  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم کی اِس پیاری پیاری ادا کو ادا کرنے کے لیے تبلیغِ  قرآن وسنَّت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے  زیرِ اہتمام پاکستان بلکہ دُنیا کے مختلف ممالک کی بیشمار مساجِد میں ماہِ رَمضانُ المبارک کے 30دن اور آخِری عَشرے میں”اِجتماعی اِعتکاف“ کا اِہتمام کیا جاتا ہے، اجتماعی اعتکاف کی برکتوں کے بھی  کیا کہنے ! اجتماعی اعتکاف میں 30 دن جدول کے مطابق گزارے جاتے ہیں ،جس میں نمازِ پنجگانہ کی ادائیگی کے ساتھ ساتھ ،تحیۃُ الوضو ،تحیۃُ المسجد ،نمازِ تہجد ،اِشراق چاشت، نمازِ اَوَّابین  اورصلوۃُ التوبہ کے نوافل بھی ادا کیے جاتے ہیں۔ وُضو  ،غسل ، نماز اور دیگر ضروری اَحکام  سکھائے جائے ہیں، مختلف سنتیں اور دُعائیں  یاد کروائی جاتی ہیں ،اس کے علاوہ وقتاً فوقتاً تربیت یافتہ مبلغین کے سنتوں بھرے ایمان افروز  بیانات کا سلسلہ ہوتا ہے ،اِفطار کے وقت رِقت انگیز مناجات اور دُعاؤں کے پُرکیف مَناظر ہوتے ہیں اور سب سے بڑھ کر یہ کہ شیخِ طریقت،امیرِ اہلِسنَّت،بانیِ دعوتِ اسلامی حضرتِ علّامہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطار قادری رضوی ضیائیدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ مدنی مذاکرات بھی فرماتے ہیں۔آپدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی صحبت سے فائدہ اُٹھاتے ہوئے اسلامی بھائی مَدَنی مذاکرات میں مختلف قسم کے موضوعات  مثلاً عقائد و اعمال، فضائل و مناقب ، شریعت و طریقت، تاریخ و سیرت ، سائنس و طِبّ، اخلاقیات و اِسلامی معلومات، روزمرہ معاملات اور دیگر بہت سے موضوعات سے متعلق سُوالات کرتے ہیں اور شیخِ طریقت امیرِ اہلسنَّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ انہیں حکمت آموز اور عشقِ رسول میں ڈوبے ہوئے جوابات سے نوازتے ہیں۔الغرض  ہزارہا اسلامی بھائی ”اجتماعی اعتکاف“میں شامل ہو  کر دیگر عبادات کے ساتھ ساتھ علمِ دین حاصل کرتے اورسُنّتوں کی تربیت پاتے ہیں۔ کئی خوش نصیب ایسے بھی ہوتے ہیں جن پر دَورانِ اعتکاف  کرم بالائے کرم ہو



1     مشکاة  المصابیح، کتاب الصوم ،  باب لیلة  القدر، الفصل الاول، ۱/ ۳۹۲ ، حدیث: ۲۰۸۶

2     غُنْیة الطّالبین، القسم الثالث ، مجلس فی فضل شھر شعبان...الخ، ۱/ ۳۴۱



Total Pages: 43

Go To