Book Name:Sirat ul Jinan Jild 9

(11)…صبر افضل ترین عمل ہے۔( شعب الایمان ،  السبعون من شعب الایمان... الخ ،  ۷ / ۱۲۲ ،  الحدیث: ۹۷۱۰)

(12)…فتنے کی شدت پرصبر کرنے والے کو قیامت کے دن نبیٔ  اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی شفاعت نصیب ہوگی۔( شعب الایمان ،  السبعون من شعب الایمان... الخ ،  ۷ / ۱۲۴ ،  الحدیث: ۹۷۲۱)

(13)…لوگوں  سے میل جول رکھنے والا اور ان کی طرف سے پہنچنے والی اذیتوں  پر صبر کرنے والا اُن مسلمانوں  سے افضل ہے جو ایسے نہیں  ہیں ۔( ترمذی ،  کتاب صفۃ القیامۃ... الخ ،  ۵۵-باب ،  ۴ / ۲۲۷ ،  الحدیث: ۲۵۱۵)

(14)…صبر کرنے اور اپنا محاسبہ کرنے والے کو اللہ تعالیٰ حساب کے بغیر جنت میں  داخل فرما دے گا۔( معجم الکبیر ،  الحکم بن عمیر الثمالی ،  ۳ / ۲۱۷ ،  الحدیث: ۳۱۸۶)

 (15)…صبر بھلائیوں  کے خزانوں  میں  سے ایک خزانہ ہے۔( رسائل ابن ابی دنیا ،  الصبر ،  ۴ / ۲۴ ،  الحدیث: ۱۷)

            اللہ تعالیٰ حضورِ اقدس صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے صبر کے صدقے ہمیں  بھی مصائب و آلام میں  صبر کرنے کی توفیق عطا فرمائے،اٰمین۔

سورۂ محمد

سورۂ محمد کا تعارف

مقامِ نزول:

            سورۂ محمد مدینہ منورہ میں  نازل ہوئی ہے۔

رکوع اور آیات کی تعداد:

             اس سورت میں  4 رکوع اور 38 آیتیں   ہیں ۔

’’محمد ‘‘نام رکھنے کی وجہ :

            اس سورت کی دوسری آیت میں  نبیٔ  اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا اسمِ گرامی’’محمد‘‘ ذکر کیا گیا ہے اس مناسبت سے ا سے’’سورۂ محمد‘‘ کہتے ہیں ،نیز اس سورت کا ایک نام ’’سورۂ قِتال‘‘ بھی ہے اورا س کی وجہ یہ ہے کہ اس سورت میں  کفار کے ساتھ جہاد کے احکام بیان کئے گئے ہیں ۔

سورۂ محمد کے مضامین:

            اس سورت کا مرکزی مضمون یہ ہے کہ اس میں  کفار کے ساتھ جہاد کرنے کے احکام اور جہاد کرنے کاثواب بیان کیاگیا ہے،اور اس سورت میں  یہ چیزیں  بیان کی گئی ہیں :

(1)…اس سورت کی ابتداء میں  بیان کیا گیا کہ جو کافر دوسرے لوگوں  کو اللہ تعالیٰ کے راستے سے روکتے ہیں  اللہ تعالیٰ نے ان کے اعمال برباد کردئیے جبکہ وہ لوگ جواللہ تعالیٰ کی وحدانیت ،حضورِ اقدس صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی رسالت پر ایمان لائے اور انہوں  نے اچھے کام کئے اور نبیٔ  اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ پر نازل ہونے والی کتاب قرآنِ مجید پر ایمان لائے تو اللہ تعالیٰ نے ان کی برائیاں  مٹا دیں  اور اس کی وجہ یہ ہے کہ کافروں  نے باطل کی پیروی کی اور مسلمانوں  نے حق کی پیروی کی۔

(2)…کفار کے ساتھ جنگ کے دوران انہیں  قتل کرنے اورکافر قیدیوں  کے بارے میں  حکم دیا گیا ،جنگ کے دوران شہید ہونے والے مجاہدوں  کا ثواب بیان کیاگیا اور اللہ تعالیٰ نے کفار کے ساتھ جہاد کرنے میں  مسلمانوں  کی مدد کرنے کی بشارت دی۔

(3)…کافروں  کی رسوائی کی وجہ بیان کی گئی کہ وہ چونکہ اللہ تعالیٰ کی نازل کردہ کتاب کو ناپسند کرتے ہیں  ا س لئے رسوا ہوئے ہیں ۔

(4)…کفار ِمکہ کے سامنے سابقہ لوگوں  کا انجام بیان کر کے انہیں  بتایاگیا کہ ان کا انجام بھی انہی جیسا ہو سکتا ہے۔

(5)…پرہیز گار مسلمانوں  سے جس جنت کا وعدہ کیا گیا ہے اس کے اوصاف بیان کئے گئے ۔

(6)…منافقوں کی صفات بیان کی گئیں  اور انہیں  بتایاگیا کہ اللہ تعالیٰ ان کے چھپے ہوئے بغض اورکینے کوظاہر فرما دے گا۔

(7)…اس سورت کے آخر میں دنیوی زندگی کی حقیقت اور بخل کرنے کی مذمت بیان کی گئی ۔

سورۂ احقاف کے ساتھ مناسبت:

            سورۂ محمد کی اپنے سے ماقبل سورت ’’احقاف‘‘ کے ساتھ مناسبت یہ ہے کہ سورۂ احقاف کی آخری آیت کے اس حصے ’’فَهَلْ یُهْلَكُ اِلَّا الْقَوْمُ الْفٰسِقُوْنَ‘‘  کا سورۂ محمد کی پہلی آیت کے ساتھ ایسا مضبوط ربط ہے کہ ان دونوں  آیتوں  کی تلاوت کے دورا ن اگر بِسْمِ اللہ نہ پڑھی جائے تو ایسے لگے گا جیسے یہ ایک ہی آیت ہے۔( تناسق الدّرر ،  سورۃ القتال ،  ص۱۱۷)

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ

ترجمۂ کنزالایمان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان رحم والا۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان ، رحمت والاہے ۔

اَلَّذِیْنَ كَفَرُوْا وَ صَدُّوْا عَنْ سَبِیْلِ اللّٰهِ اَضَلَّ اَعْمَالَهُمْ(۱)

ترجمۂ کنزالایمان: جنہوں  نے کفر کیا اور اللہ کی راہ سے روکا اللہ نے اُن کے عمل برباد کئے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: جنہوں  نے کفر کیا اور اللہ کی راہ سے روکا، اللہ نے ان کے اعمال برباد کردئیے۔

 



Total Pages: 250

Go To