Book Name:Sirat ul Jinan Jild 9

عاد کی ان پر برتری بیان کر کے انہیں  نصیحت کی جا رہی ہے ، چنانچہ ارشاد فرمایاگیا: اے اہلِ مکہ ! بیشک ہم نے قومِ عاد کو ان چیزوں  میں  قدرت دی تھی جن میں  تمہیں  قدرت نہیں  دی،جیسے وہ جسمانی قوت ، مال کی کثرت اور عمر لمبی ہونے میں  تم سے زیادہ تھے، لیکن اس قوت کے باوجود وہ اللہ تعالیٰ کے عذاب سے نجات نہ پا سکے تو پھر غور کرو کہ تمہارا کیا حال ہو گا؟مزید یہ کہ ہم نے قومِ عاد پر نعمتوں  کے دروازے کھولے ، انہیں  کان ،آنکھیں  اور دل عطا کئے تاکہ وہ ان اَعضا ء کو دین کے کام میں  لائیں  مگر انہوں  نے ان خداداد نعمتوں  سے دین کا کام ہی نہیں  لیا بلکہ ان کے ذریعے صرف دنیا اور ا س کی لذّتیں  طلب کرنے میں  لگے رہے، تو ان کے کان ، ان کی آنکھیں  اور ان کے دل اللہ تعالیٰ کے عذاب سے بچانے میں  ان کے کچھ کام نہ آئے اور وہ چونکہ اللہ تعالیٰ کی آیتوں  کا انکار کرتے تھے اس لئے انہیں  اس عذاب نے گھیرلیا جس کے جلد نازل ہونے کامطالبہ کر کے وہ اس کا مذاق اڑاتے تھے،تو اے اہلِ مکہ! جب قومِ عاد نے اپنی دنیا پر غرور کیا اور حجت و دلیل کو قبول کرنے سے اِعراض کیا توان پر  اللہ تعالیٰ کا عذاب نازل ہو گیا اور ان کی قوت و کثرت ان کے کچھ کام نہ آئی اور تم تو ان کے مقابلے میں  کمزور اور عاجز ہو اس لئے تمہیں  اللہ تعالیٰ کے عذاب سے زیادہ ڈرنا چاہئے۔(خازن ،  الاحقاف ،  تحت الآیۃ: ۲۶ ،  ۴ / ۱۲۸-۱۲۹ ،  روح البیان ،  الاحقاف ،  تحت الآیۃ: ۲۶ ،  ۸ / ۴۸۳-۴۸۴ ،  تفسیر کبیر ،  الاحقاف ،  تحت الآیۃ: ۲۶ ،  ۱۰ / ۲۶ ،  ملتقطاً)

وَ لَقَدْ اَهْلَكْنَا مَا حَوْلَكُمْ مِّنَ الْقُرٰى وَ صَرَّفْنَا الْاٰیٰتِ لَعَلَّهُمْ یَرْجِعُوْنَ(۲۷)فَلَوْ لَا نَصَرَهُمُ الَّذِیْنَ اتَّخَذُوْا مِنْ دُوْنِ اللّٰهِ قُرْبَانًا اٰلِهَةًؕ-بَلْ ضَلُّوْا عَنْهُمْۚ-وَ ذٰلِكَ اِفْكُهُمْ وَ مَا كَانُوْا یَفْتَرُوْنَ(۲۸)

ترجمۂ کنزالایمان: اور بیشک ہم نے ہلاک کردیں  تمہارے آس پاس کی بستیاں اور طرح طرح کی نشانیاں  لائے کہ وہ بازآئیں ۔تو کیوں  نہ مدد کی ان کی جن کو انہوں  نے اللہ کے سوا قرب حاصل کرنے کو خدا ٹھہرا رکھا تھا بلکہ وہ اُن سے گم گئے اور یہ اُن کا بہتان و افترا ہے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور(اے اہلِ مکہ!) بیشک ہم نے تمہارے آس پاس کی بستیوں  کو ہلاک کردیا اور بار بار نشانیاں  لائے تاکہ وہ باز آجائیں ۔  تو جن بتوں  کو قرب حاصل کرنے کیلئے اللہکے سوامعبود بنارکھا تھا انہوں  نے ان کافروں  کی مدد کیوں  نہیں  کی بلکہ وہ ان سے گم گئے اور یہ ان کا بہتان تھا اور جووہ گھڑتے رہتے تھے۔

{وَ لَقَدْ اَهْلَكْنَا مَا حَوْلَكُمْ مِّنَ الْقُرٰى: اور بیشک ہم نے تمہارے آس پاس کی بستیوں  کو ہلاک کردیا۔} یہاں  سے قومِ عاد اور ثمود وغیرہ کی اجڑی ہوئی بستیوں  ، ان کی تباہی اور ان میں  رہنے والوں  کی ہلاکت کے سبب کی طرف اشارہ کر کے کفارِ مکہ کو تنبیہ کی جا رہی ہے ،چنانچہ اس آیت اور اس کے بعد والی آیت کاخلاصہ یہ ہے کہ اے اہلِ مکہ! تمہارے آس پاس عاد اور ثمود وغیرہ کی اجڑی ہوئی بستیاں  موجود ہیں  اور جب تم یمن اور شام کا سفر کرتے ہوتو راستے میں  ان تباہ شدہ بستیوں  کو دیکھتے ہو،کبھی تم نے ان کی تباہی وبربادی کاسبب تلاش کیاہے کہ آخرکس وجہ سے وہ بستیاں  تباہ ہو گئیں اور ان میں  بسنے والے لوگ تم سے زیادہ طاقتور اورمالدارہونے کے باوجود ہلاک ہو کر عبرت کا نشان بن گئے؟ تو سنو! ان کی تباہی وبربادی اور ہلاکت کی وجہ یہ تھی کہ جب وہاں  کے لوگوں  کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے بھیجے گئے انبیاء ِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے اللہ تعالیٰ کی وحدانیّت پر ایمان لانے، صرف اسی کی عبادت کرنے اور اپنی نبوت پر ایمان لانے کی دعوت دی تو ان لوگوں  نے اس دعوت کو قبول نہ کیا اور ان کی ہٹ دھرمی کا حال یہ تھا کہ انبیاء کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے ان کے سامنے اللہ تعالیٰ کی قدرت و وحدانیّت اور اپنی صداقت پر دلالت کرنے والی نشانیاں  باربار پیش کیں ، سابقہ امتوں  کی بربادی کے عبرت ناک واقعات ان کے سامنے بیان کئے تاکہ وہ اپنے کفر اور مَعصِیَت سے باز آ جائیں ، لیکن وہ کسی صورت ا س سے باز نہ آئے اور کفر و مَعصِیَت ہی کو اختیار کیا تو اس کی وجہ سے ان کا انجام یہ ہوا کہ اللہ تعالیٰ نے انہیں  اپنے عذاب سے ہلاک کر دیا،تواب تم بتاؤ کہ اللہ تعالیٰ کو چھوڑ کر جن بتوں  کو ان کافروں  نے اپنا معبود بنا رکھا تھا اور ان کے بارے میں  یہ کہتے تھے کہ ان بتوں  کو پوجنے سے اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل ہوتا ہے،اُن بتوں  نے اِن کافروں  کی مدد کیوں  نہیں  کی اور انہیں  اللہ تعالیٰ کے عذاب سے کیوں  نہیں  بچایا؟ بلکہ اس وقت تو یوں  ہوا کہ ان بتوں  کا عاجز اور بے بس ہونا پوری طرح ظاہر ہو گیا اور عذاب نازل ہوتے وقت وہ ان کے کچھ کام نہ آئے اور یاد رکھو کہ وہ جو بتوں  کو اپنامعبود کہتے اور بت پرستی کو اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل کرنے کا ذریعہ ٹھہراتے تھے ،یہ ان کا بہتان اور اِفتراء تھا، حقیقت میں  ایسا ہر گز نہیں  ہے،لہٰذااب تم بھی اپنے حال پر غورکرلواوراپنے طرزِعمل کودرست کرلوورنہ تمہاراانجام بھی ان کی طرح ہوگا۔

جہالت کی انتہاء:

            یاد رہے کہ اللہ تعالیٰ کے دشمنوں  کو اپنا شفیع ،مدد گار اور اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل ہونے کا ذریعہ سمجھناکفر ہے جبکہ اللہ تعالیٰ کے محبوب بندوں  کو اللہ تعالیٰ کی عطا سے مدد گار اورشفیع ماننا اور انہیں  اللہ تعالیٰ کا قرب حاصل ہونے کا ذریعہ سمجھناعین ایمان ہے ،جیسے بت کی طرف سجدہ کرنا کفر ہے اور کعبہ کی طرف سجدہ کرناایما ن ہے ، لہٰذا اس عظیم فرق کو پسِ پُشت ڈال کر یہ آیت اللہ تعالیٰ کے کسی نبی عَلَیْہِ السَّلَام اور ولی پر چسپاں  کرنا اور اسے ان کے اللہ تعالیٰ کی عطا سے مددگار اور شفیع نہ ہونے کی دلیل بنانا جہالت کی انتہاء ہے۔

وَ اِذْ صَرَفْنَاۤ اِلَیْكَ نَفَرًا مِّنَ الْجِنِّ یَسْتَمِعُوْنَ الْقُرْاٰنَۚ-فَلَمَّاحَضَرُوْهُ قَالُوْۤا اَنْصِتُوْاۚ-فَلَمَّا قُضِیَ وَ لَّوْا اِلٰى قَوْمِهِمْ مُّنْذِرِیْنَ(۲۹)قَالُوْا یٰقَوْمَنَاۤ اِنَّا سَمِعْنَا كِتٰبًا اُنْزِلَ مِنْۢ بَعْدِ مُوْسٰى مُصَدِّقًا لِّمَا بَیْنَ یَدَیْهِ یَهْدِیْۤ اِلَى الْحَقِّ وَ اِلٰى طَرِیْقٍ مُّسْتَقِیْمٍ(۳۰)یٰقَوْمَنَاۤ اَجِیْبُوْا دَاعِیَ اللّٰهِ وَ اٰمِنُوْا بِهٖ یَغْفِرْ لَكُمْ مِّنْ ذُنُوْبِكُمْ وَ یُجِرْكُمْ مِّنْ عَذَابٍ اَلِیْمٍ(۳۱)وَ مَنْ لَّا یُجِبْ دَاعِیَ اللّٰهِ فَلَیْسَ بِمُعْجِزٍ فِی الْاَرْضِ وَ لَیْسَ لَهٗ مِنْ دُوْنِهٖۤ اَوْلِیَآءُؕ-اُولٰٓىٕكَ فِیْ ضَلٰلٍ مُّبِیْنٍ(۳۲)

ترجمۂ کنزالایمان: اور جبکہ ہم نے تمہاری طرف کتنے جِنّ پھیرے کان لگا کر قرآن سنتے پھر جب وہاں  حاضر ہوئے آپس میں  بولے خاموش رہو پھر جب پڑھنا ہوچکا اپنی قوم کی طرف ڈر سناتے پلٹے۔ بولے اے ہماری قوم ہم نے ایک کتاب سُنی کہ موسیٰ کے بعد اُتاری گئی اگلی کتابوں  کی تصدیق فرماتی حق اور سیدھی راہ دکھاتی۔ اے ہماری قوم اللہ کے منادی کی بات مانو اور اس پر ایمان لاؤ کہ وہ تمہارے کچھ گناہ بخش دے اور تمہیں  دردناک عذاب سے بچالے۔ اور جو اللہ کے منادی کی بات نہ مانے وہ زمین میں  قابو سے نکل کر جانے والا نہیں  اور اللہ کے سامنے اس کا کوئی مددگار نہیں  وہ کھلی گمراہی میں  ہیں ۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور(اے حبیب!یاد کرو) جب ہم نے تمہاری طرف جنوں  کی ایک جماعت پھیری جو کان لگا کر قرآن سنتی تھی پھر جب وہ نبی کی بارگاہ میں  حاضر ہوئے تو کہنے لگے:



Total Pages: 250

Go To