Book Name:Sirat ul Jinan Jild 9

سورۂ حدید

سورۂ حدید کا تعارف

مقامِ نزول:

            سورۂ حدید کے مقامِ نزول کے بارے میں  ایک قول یہ ہے کہ مکیہ ہے اور ایک قول یہ ہے کہ مدنیہ ہے۔( جلالین ،  تفسیر سورۃ الحدید ،  ص۴۴۸)

رکوع اور آیات کی تعداد:

            اس سورت میں  4رکوع اور29 آیتیں ہیں ۔

’’حدید ‘‘نام رکھنے کی وجہ :

            عربی میں  لوہے کو حدید کہتے ہیں  اوراس سورت کی آیت نمبر 25میں  اللہ تعالیٰ نے حدید یعنی لوہے کے فوائد بیان فرمائے ہیں ، اسی مناسبت سے اس سورت کا نام ’’سورۂ حدید ‘‘رکھا گیا۔

سورۂ حدید کی فضیلت:

            حضرت عرباض  بن ساریہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ  فرماتے ہیں : ’’تاجدارِ رسالت صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سونے سے پہلے مُسَبِّحَاتْ (سورتوں ) کی تلاوت فرماتے اور ارشاد فرماتے ’’ان سورتوں  میں  ایک ایسی آیت ہے جو ہزار آیتوں  سے بہتر ہے۔( ترمذی ،  کتاب فضائل القرآن ،  ۲۱-باب ،  ۴ / ۴۲۲ ،  الحدیث:۲۹۳۰)

            یاد رہے کہمُسَبِّحَاتسے مراد وہ سورتیں  ہیں  جن کی ابتداء میں  تسبیح کی آیات ہیں  ، جیسے سورۂ حدید،سورۂ حشر، سورۂ صف،سورۂ جمعہ اور سورۂ تغابُن۔

سورۂ حدید کے مضامین:

            اس سورت کا مرکزی مضمون یہ ہے کہ اس میں  عقیدے اور ایمان سے متعلق،جہاد اور راہِ خدا میں  خرچ کرنے کے بارے میں  اور ان کے علاوہ دیگرچیزوں  سے متعلق شرعی اُمور بیان کئے گئے ہیں ،نیز اس میں  یہ مضامین ذکر کئے گئے ہیں ۔

(1) …اس سورت کی ابتدامیں  اللہ تعالیٰ کی صفات،اس کے اسمائِ حسنیٰ اور کائنات کی تخلیق میں  اس کی عظمت و قدرت کے آثار کے ظہور کا بیان ہے۔

(2) …مسلمانوں  کو دین ِاسلام کی سربلندی اورا س کے اعزاز کی خاطر اللہ تعالیٰ کی راہ میں  مال خرچ کرنے کی ترغیب دی گئی ہے۔

(3) …دنیا اور آخرت کی حقیقت کو واضح کیا گیا اور بتایا گیا کہ دنیا فنا ہونے والا گھر اور کھیل تماشے کی طرح ہے جبکہ آخرت ہمیشہ باقی رہنے والا گھر،سعادت اور بڑی راحت کی جگہ ہے اور اس کے ساتھ دنیا کے دھوکے میں  مبتلا ہونے سے ڈرایا گیا اور آخرت کی بہتری کے لئے عمل کرنے کی ترغیب دی گئی ہے۔

(4) …مسلمانوں  کو مصیبتوں  پر صبر کرنے کی تلقین کی گئی اور تکبُّر و بخل کی مذمت بیان کی گئی نیز اللہ تعالیٰ سے ڈرنے اور اَنبیاء و رُسُل  عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  کے راستے کی پیروی کرنے کا حکم دیا گیا۔

(5) …اس سورت کے آخر میں  سابقہ امتوں  کے حالات سے نصیحت حاصل کرنے کا کہا گیااور اس سلسلے میں  حضرت نوح عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اور حضرت ابراہیم  عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے واقعات بیان کئے گئے۔مُتّقی لوگوں  کے ثواب کو واضح کیا گیا اور اپنے رسولوں  پر ایمان لانے والوں  کے لئے دگنے اجر کا بیان ہوا ،اوراس کے ساتھ یہ بھی بتا دیا گیا کہ رسالت اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک چناؤ اور اس کا فضل ہے ،وہ اپنے بندوں  میں  سے جسے چاہے یہ رتبہ عطا کردے۔ حضور صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَسَلَّمَ کی تشریف آوری کے بعد اللہ تعالیٰ نے نبوت کا سلسلہ ختم فرما دیا ہے اب قیامت تک کسی کو نبوت نہیں  ملے گی۔

سورۂ واقعہ کے ساتھ مناسبت:

            سورۂ حدید کی اپنے سے ما قبل سورت ’’واقعہ‘‘ کے ساتھ مناسبت یہ ہے کہ سورۂ واقعہ کے آخر میں  تسبیح کرنے کا حکم دیاگیا اور سور ۂ حدید کی ابتدا میں  تسبیح بیان کرکے گویا ہمیں  اس کا طریقہ سکھادیا گیا یا آسمان و زمین میں  موجود چیزوں  کی تسبیح کا ذکر کرکے ایک اور انداز میں  ترغیب دی گئی ہے۔

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ

ترجمۂ کنزالایمان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان رحم والا۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان ، رحمت والاہے ۔

سَبَّحَ لِلّٰهِ مَا فِی السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِۚ-وَ هُوَ الْعَزِیْزُ الْحَكِیْمُ(۱)

ترجمۂ کنزالایماناللہ کی پاکی بولتا ہے جو کچھ آسمانوں  اور زمین میں  ہے اور وہی عزت و حکمت والا ہے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفاناللہ کی پاکی بیان کی ہر اس چیز نے جو آسمانوں  اور زمین میں  ہے اور وہی عزت والا، حکمت والا ہے۔

{سَبَّحَ لِلّٰهِ مَا فِی السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِ: اللہ کی پاکی بیان کی ہر اس چیز نے جو آسمانوں  اور زمین میں  ہے۔}  اس آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ جو کچھ زمین و آسمانوں  میں  ہے چاہے وہ جاندار ہو یا بے جان،سب زبانِ حال اور زبانِ قال سے اللہ تعالیٰ کی پاکی بیان کرتے ہیں  یعنی یہ کہ وہ اللہ ذات میں ،صفات میں  ،اَفعال میں  اور اَحکام میں  ہر نقص و عیب سے پاک ہے اوراس کے رب ہونے کا اقرار کرتے اور ا س کی اطاعت کا یقین رکھتے ہیں اور وہی اللہ  عَزَّوَجَلَّ غالب اور کامل قدرت والا اور اپنے تمام افعال میں  حکمت والا ہے۔(تفسیر کبیر  ،  الحدید  ،  تحت الآیۃ : ۱ ،  ۱۰ / ۴۴۱  



Total Pages: 250

Go To