Book Name:Sirat ul Jinan Jild 9

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور آسمانوں  اور زمین کی پیدائش اور ان میں  جو جانداراس نے پھیلائے ہیں  سب اس کی نشانیوں  میں  سے ہیں  اور وہ ان سب کو اکٹھا کرنے پرجب چاہے قادر ہے۔

{وَ مِنْ اٰیٰتِهٖ: اور اس کی نشانیوں  سے ہے۔} یعنی اللہ تعالیٰ کی وحدانیّت کے دلائل اور اس کی قدرت کے عجائبات میں  سے زمین و آسمان کی پیدائش ہے،کیونکہ یہ دونوں  اپنی ذات اور صفات کے اعتبار سے اپنے خالق کی قدرت اورکمالات پر دلالت کرتے ہیں ۔ان نشانیوں  کے بارے میں  ایک اور مقام پر اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتا ہے :

’’اَفَلَمْ یَنْظُرُوْۤا اِلَى السَّمَآءِ فَوْقَهُمْ كَیْفَ بَنَیْنٰهَا وَ زَیَّنّٰهَا وَ مَا لَهَا مِنْ فُرُوْجٍ(۶)وَ الْاَرْضَ مَدَدْنٰهَا وَ اَلْقَیْنَا فِیْهَا رَوَاسِیَ وَ اَنْۢبَتْنَا فِیْهَا مِنْ كُلِّ زَوْجٍۭ بَهِیْجٍۙ(۷) تَبْصِرَةً وَّ ذِكْرٰى لِكُلِّ عَبْدٍ مُّنِیْبٍ‘‘(سورۃ ق:۶۔۸)

ترجمۂ کنزُالعِرفان: تو کیا انہوں  نے اپنے اوپر آسمان کو نہ دیکھا ہم نے اسے کیسے بنایا اور سجایا اور اس میں  کہیں  کوئی شگاف نہیں ۔ اور زمین کو ہم نے پھیلایا اور اس میں  بڑے  بڑے پہاڑ ڈالے اور اس میں  ہر بارونق جوڑا اگایا۔ ہر رجوع کرنے والے بندے کیلئے بصیرت اور نصیحت کیلئے۔

            مزید ارشاد فرمایا کہ اللہ تعالیٰ نے جو زمین پر چلنے والے انسان اور دیگر جاندار پیدا فرمائے ہیں  یہ سب بھی اس کی قدرت اور وحدانیّت کی نشانیوں  میں  سے ہیں  اور اللہ تعالیٰ جب اور جس وقت چاہے ان سب کو حشر کے لئے اکٹھا کرنے پر قادر ہے۔( جلالین مع صاوی ،  الشوریٰ ،  تحت الآیۃ: ۲۹ ،  ۵ / ۱۸۷۴ ،  ملخصاً)

وَ مَاۤ اَصَابَكُمْ مِّنْ مُّصِیْبَةٍ فَبِمَا كَسَبَتْ اَیْدِیْكُمْ وَ یَعْفُوْا عَنْ كَثِیْرٍؕ(۳۰)

ترجمۂ کنزالایمان:  اور تمہیں  جو مصیبت پہنچی وہ اس کے سبب سے ہے جو تمہارے ہاتھوں  نے کمایا اور بہت کچھ تو معاف فرمادیتا ہے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور تمہیں  جو مصیبت پہنچی وہ تمہارے ہاتھوں  کے کمائے ہوئے اعمال کی وجہ سے ہے اور بہت کچھ تووہ معاف فرمادیتا ہے۔

{وَ مَاۤ اَصَابَكُمْ مِّنْ مُّصِیْبَةٍ: اور تمہیں  جو مصیبت پہنچی۔} اس آیت میں  ان مُکَلَّف مومنین سے خطاب ہے جن سے گناہ سرزد ہوتے ہیں  اور مراد یہ ہے کہ دنیا میں  جو تکلیفیں  اور مصیبتیں  مومنین کو پہنچتی ہیں  اکثراُن کا سبب ان کے گناہ ہوتے ہیں ،اُن تکلیفوں  کو اللہ تعالیٰ اُن کے گناہوں  کا کفارہ کردیتا ہے اور کبھی مومن کی تکلیف اس کے درجات کی بلندی کےلئے ہوتی ہے۔

مصیبتیں  آنے کا ایک سبب:

            اس آیت سے معلوم ہوا کہ مسلمانوں  پر آنے والی مصیبتوں  کا ایک سبب ان کا اللہ تعالیٰ کی نافرمانی اور گناہ کرنا ہے،اگر یہ اللہ تعالیٰ کی اطاعت کرتے رہیں  تو مصیبتوں  سے بچ سکتے ہیں ، جیسا کہ حضرت ابو ہریرہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے ،رسولِ کریم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا’’ (اے لوگو!) تمہارا رب عَزَّوَجَلَّ ارشاد فرماتا ہے ’’اگر میرے بندے میری اطاعت کریں  تو میں  انہیں  رات میں  بارش سے سیراب کروں  گا، دن میں  ان پر سورج کو طلوع کروں  گا اور انہیں  کڑک کی آواز تک نہ سناؤں  گا۔( مسند امام احمد ،  مسند ابی ہریرۃرضی اللّٰہ عنہ ،  ۳ / ۲۸۱ ،  الحدیث: ۸۷۱۶)

            نیز انہیں  چاہئے کہ ان پر اپنے ہی اعمال کی وجہ سے جو مصیبتیں  آ تی ہیں  ان میں  بے صبری اور شکوہ شکایت کا مظاہرہ نہ کریں  بلکہ انہیں  اپنے گناہوں  کا کفارہ سمجھتے ہوئے صبر و شکر سے کام لیں  ،ترغیب کے لئے یہاں  گناہوں  کی وجہ سے آنے والی مصیبتوں  سے متعلق اور ان مصیبتوں  کے گناہوں  کا کفارہ ہونے کے بارے میں 5اَحادیث ملاحظہ ہوں ،

(1)…حضرت ابو موسیٰ اشعری رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے،حضور پُر نور صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’بندے کو جو چھوٹی یا بڑی مصیبت پہنچتی ہے وہ کسی گناہ کی وجہ سے پہنچتی ہے اور جو گناہ اللہ تعالیٰ معاف فرما دیتا ہے وہ اس سے بہت زیادہ ہوتے ہیں ۔پھر رسولُ اللہ صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے یہ آیت تلاوت فرمائی

’’وَ مَاۤ اَصَابَكُمْ مِّنْ مُّصِیْبَةٍ فَبِمَا كَسَبَتْ اَیْدِیْكُمْ وَ یَعْفُوْا عَنْ كَثِیْرٍ‘‘۔(ترمذی ،  کتاب التفسیر ،  باب ومن سورۃ الشوریٰ۔۔۔ الخ ،  ۵ / ۱۶۹ ،  الحدیث: ۳۲۶۳)

(2)…حضرت ثوبان رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے،حضورِ اَقدس صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’نیک کاموں  سے عمر بڑھتی ہے،دعا تقدیر کو ٹال دیتی ہے اور بے شک آدمی اپنے کسی گناہ کی وجہ سے رزق سے محروم کر دیا جاتا ہے۔( ابن ماجہ ،  کتاب الفتن ،  باب العقوبات ،  ۴ / ۳۶۹ ،  الحدیث: ۴۰۲۲)

(3)…حضرت حسن بصری رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ سے مروی ہے،رسولِ کریم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’لکڑی کی خراش لگنا،قدم کا ٹھوکر کھانا اور رگ کا پھڑکنا کسی گناہ کی وجہ سے ہوتا ہے اور جو گناہ اللہ تعالیٰ معاف فرما دیتا ہے وہ اس سے کہیں  زیادہ ہوتے ہیں ۔پھر آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے یہ آیت تلاوت فرمائی ’’ وَ مَاۤ اَصَابَكُمْ مِّنْ مُّصِیْبَةٍ فَبِمَا كَسَبَتْ اَیْدِیْكُمْ وَ یَعْفُوْا عَنْ كَثِیْرٍ‘‘۔(کنزالعمال ،  کتاب الاخلاق ،  قسم الافعال ،  الصبر علی البلایا مطلقاً ،  ۲ / ۳۰۴ ،  الجزء الثالث ،  الحدیث: ۸۶۶۶)

(4)… حضرت عائشہ صدیقہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہَا سے روایت ہے،تاجدارِ رسالت صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا’’مومن کو کانٹا چبھنے یا اس سے بڑی کوئی تکلیف پہنچتی ہے توا س کی وجہ سے اللہ تعالیٰ اس کا ایک درجہ بلند کر دیتا ہے یا ا س کی ایک خطا مٹادیتا ہے۔( مسلم ،  کتاب البرّ والصلۃ والآداب ،  باب ثواب المؤمن فیما یصیبہ۔۔۔ الخ ،  ص۱۳۹۱ ،   الحدیث: ۴۷(۲۵۷۲))

(5)…حضرت ابوہریرہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے،نبیٔ  اکرم صَلَّی اللہ تَعَالٰی  عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’مومن کی بیماری ا س کے گناہوں  کے لئے کفارہ ہوتی ہے۔( شعب الایمان  ،  السبعون من شعب الایمان ۔۔۔ الخ  ،  فصل فی ذکر ما فی الاوجاع و الامراض ۔۔۔ الخ  ،  ۷  /  ۱۵۸  ،  الحدیث: ۹۸۳۵)

            اللہ تعالیٰ ہمیں  اپنی اطاعت میں  مصروف رہنے اور گناہوں  سے بچنے کی توفیق عطا فرمائے،مشکلات اور مَصائب سے ہماری حفاظت فرمائے اور آنے والی مشکلات پر صبر کرنے کی توفیق عطا فرمائے،اٰمین۔

تناسُخ کے قائلین کا رد:

            یاد رہے کہ انبیاء ِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام جو کہ گناہوں  سے پاک ہیں  اور چھوٹے بچے جو کہ مُکَلَّف نہیں  ہیں ، ان سے اس آیت میں  خطاب نہیں  کیا گیا ،اوربعض گمراہ فرقے جو



Total Pages: 250

Go To