Book Name:Bunyadi Aqaid Aur Mamolat e Ahlesunnat

اس کے  برتن (کوزے )آسمان کے  ستاروں سے  زیادہ ہیں۔

سوال : حوضِ کوثر کا پانی کیساہوگا؟

جواب : اس کا پانی دودھ سے  زیادہ سفید ، شہد سے  زیادہ شیریں، مُشک سے  زیادہ خوشبودار ہے  ۔جو ایک مرتبہ پئے  گا پھر کبھی پیاسا نہ ہوگا۔

سوال : یہ حوض کسے  عطاکیاجائے  گا؟

جواب :  اللّٰہ تعالیٰ نے  یہ حوض اپنے  حبیبِ اکرم صَلَّى اللهُ تَعَالٰى عَلَيْهِ وَاٰلِهٖ وَسَلَّمکو عطافرمایا ہے  ۔حضورصَلَّى اللهُ تَعَالٰى عَلَيْهِ وَاٰلِهٖ وَسَلَّماس سے  اپنی اُمّت کو سیراب فرمائیں گے ۔

سوال : حساب کے  بعد آدمی کہاں جائیں گے ؟

جواب : مسلمان جنّت میں اور کافر دوزخ میں۔

سوال : کیا سب مسلمان جنّت میں جائیں گے  اور سب کافر دوزخ میں؟ اور یہ دونوں جنّت اوردوزخ میں کتنا عرصہ رہیں گے ؟

    جواب : نیک مسلما ن اور وہ گناہگار مسلمان جن کے  گناہ اللّٰہ تعالیٰ اپنے  کرم اور اپنے  محبوب صَلَّى اللهُ تَعَالٰى عَلَيْهِ وَاٰلِهٖ وَسَلَّمکی اور دیگر نیک بندوں کی شفاعت سے  بخش دے  وہ سب کے  سب جنّت میں رہیں گے  اور بعض گنہگار مسلمان جو دوزخ میں جائیں گے  وہ بھی جتنا عرصہ خدا تعالیٰ چاہے  دوزخ کے  عذاب میں مبتلا رہ کر آخر کار نجات پائیں گے  اور کافر سب کے  سب جہنم میں جائیں گے  اور ہمیشہ اسی میں رہیں گے ۔

سوال : کیا جنّت اور دوزخ پیدا ہو چکی ہیں یا پیدا کی جائیں گی؟

جواب : جنّت اور دوزخ پیدا ہوچکی ہیں اور ہزاروں برس سے  موجود ہیں۔

٭۔۔۔٭۔۔۔٭۔۔۔٭۔۔۔٭۔۔۔٭

جنّت کا بیان

سوال :  اس دنیاکے  بعد بھی کیا کوئی دار یعنی مکان ہے ؟

جواب : جی ہاں ! اللّٰہ تعالیٰ نے  اِس دنیا کے  سوا دو اور عظیمُ الشان دارپیدا کیے  ہیں ایک دارُ النّعیم یعنی نعمت کی جگہ ہے  اس کا نام ’’جنّت ‘‘ہے  ۔ایک دارُ العذاب یعنی عذاب کی جگہ ہے  ا س کو’’دوزخ‘‘کہتے  ہیں۔

سوال : جنّت کیا ہے  ؟

جواب : جنّت ایک مکان ہے  جو اللّٰہ عَزَّ  وَجَلَّ نے  ایمان والوں کے  لئے  بنایاہے ۔

سوال :  جنّت میں کس طرح کی نعمتیں ہیں؟

جواب : جنّت میں اللّٰہ تعالیٰ نے  اپنے  ایماندار بندوں کیلئے  انواع و اقسام کی ایسی نعمتیں جمع فرمائی ہیں جن تک آدمی کا وَہم و خیال نہیں پہنچتا، نہ ایسی نعمتیں کسی آنکھ نے  دیکھیں، نہ کسی کان نے  سنیں، نہ کسی دل میں ان کا خیال گزرا ۔ان کا وَصْف پوری طرح بیان میں نہیں آسکتا ۔اللّٰہ تعالیٰ عطا فرمائے  تو وہیں ان کی قدر معلوم ہوگی۔

سوال : داروغۂ جنّت یعنی جنّت کے  نگران کا کیا نام ہے ؟

جواب :  حضرت رضوان عَـلَيْـهِ الصَّلٰوۃُ  وَ الـسَّـلَام ہے ۔

سوال : جنّت کتنی بڑی ہے  ؟

جواب : جنّت کی وُسعت یعنی کشادگی کا یہ بیان ہے  کہ اس میں سو درجے  ہیں ہر درجے  سے  دوسرے  درجہ تک اتنا فاصلہ ہے  جتنا آسمان و زمین کے  درمیان ۔اگر تمام جہاں ایک درجہ میں جمع ہو تو ایک در جہ سب کیلئے  کفایت کرے  ۔دروازے  اتنے  وسیع کہ ایک بازو سے  دوسرے  تک تیز گھوڑے  کی ستّر برس کی راہ ہے ۔([1])

سوال : کیاجنّت میں انسانوں کے  علاوہ بھی کوئی ہوگا؟

جواب :  جنّت میں اللّٰہ عَزَّ  وَجَلَّ کے  نیک بندوں کے  علاوہ ان کی خدمت کے  لئے  حورو غِلمان ہوں گے ۔

سوال : غِلمان کسے  کہتے  ہیں؟

جواب : جنّت کے  وہ نوعُمر، پاکیزہ صورت و لباس والے  لڑکے  جو ہر وقت جنّتیوں کی خدمت پر مامور ہوں گے ، جو بِہِشْتی نعمتوں کے  جام و ساغر یعنی پیمانے  اور پیالے  لئے  جنّت



[1]      کتاب العقائد،  ص۳۸



Total Pages: 50

Go To