Book Name:Garmi say hifazat kay Madani Phool

    میرے آقااعلیٰ حضرت امام احمد رضاخان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن  ’’ فتاوٰی رضویہ ‘‘ جلد 30 صَفحَہ296پر ایک حکایت بیان کرتے ہیں :  راہِ ہجرت میں انہیں  (یعنی صحابیۂ رسول حضرتِ سیِّدَتُنا اُمّ ِاَ یمن رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہَا ) کو پیاس لگی ،  آسمان سے نورانی رسّی میں ایک ڈول اُترا ،  پی کر سیراب ہوئیں ،  پھر کبھی پیاس نہ معلوم ہوئی،  سخت گرمی میں روزے رکھتیں اورپیاس نہ ہوتی ۔    (طبقاتِ ابن سعد ج۸ص۱۷۹مُلَخّصاً) اب تین روحانی علاج بیان کئے جاتے ہیں جن کے کرنے سے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ گرمی میں روزہ رکھنا قدرے آسان ہوجائے گا۔   

شدّتِ پیاس کے  تین روحانی علاج

                                                      {۱} بعدِ نمازِ فجر اَعُوذُ اور بِسمِ اللّٰہ کے ساتھ صرف ایک بارسورۃ الکوثر   پڑھ کر ہاتھوں پر دم کر کے چہرے پر پھیر لیجئے ، روزے کی حالت میں اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ پیاس کی شدّت سے حفاظت ہو گی {۲} یَامَجِیْدُگرمیوں میں وقتا ً فوقتاً پڑھتے رہئے اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ پیاس سے اَمْن ملے گا {۳} یَامَاجِدُ10بار پڑھ کر’’  لیموپانی‘‘ وغیرہ پر دم کرکے گرمی کے موسِم میں پئیں ،  اِنْ شَآءَاللہ عَزَّوَجَلَّ بیماری سے حفاظت ہو گی۔ 

روزے میں پیاس کی شدّت سے حفاظت کیلئے

    سحری کھا کر ایک کھجور چبایئے اورساتھ ہی پانی کا ایک گُھونٹ منہ میں بھر لیجئے،  دونوں کو اچھی طرح ہلا جلاکر  (Mix کر کے)  نگل لیجئے۔   اِسی طریقے پر ایک ایک کر کے تین کھجوریں  کھایئے،  اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ روزے میں سارا دن پیاس کی شدّت سے حفاظت ہو گی۔ 

لُو سے حفاظت کے6 گھریلو علاج

    ٭ دھوپ میں نکلنے سے قبل کچی پیاز گھس کرناخنوں پر لگا لیجئے۔   ( یاد رہے!کچی پیاز کی یا کسی بھی طرح کی بدبو کی حالت میں مسجِد کا داخِلہ حرام ہے)  ٭ کچے آم  (یعنی کَیری ) کا لیپ بنا کر پاؤں کے تلووں پر مالش کیجئے ٭ تقریباً250گرام بیسن  (یعنی چنے کی دال کے آٹے) میں 10گرام کافور شامل کر کے پانی میں گھول کر بدن پر لگانے سے ٹھنڈک ملتی ہے اور گرمی دانے بھی نہیں ہوتے   (اگر کافور شامل نہ کریں تب بھی فائدہ ہو سکتا ہے مگر کم )  ٭ …  ٹماٹر کی چٹنی یا ناریل کھایئے٭ …  گرمیوں میں کھانا کھانے کے بعد گڑ کھانے سے لو نہیں لگتی٭ …  دھوپ سے آنے کے بعد پیاز کا تھوڑا سا رَس شہد میں ملا کر چاٹنے سے لُو لگنے کا خطرہ کم ہو جاتاہے۔ 

کھانے میں ٹھنڈے مسالے استعمال کیجئے

                                                     { ۱} گرمیوں میں گرم (تاثیر والے)  مسالے کے بجائے ٹھنڈے  (یعنی ٹھنڈی تاثیر والے) مسالے مَثَلاً ہلدی ، خشک دھنیا ،  سفید زیرہ، الائچی،  دار چینی،  ٹماٹر ،  لیموں ،  دہی ، آلو بخارا، املی، ہر ادھنیا، پودینہ وغیرہ کھانے میں ڈالنے مناسب ہوتے ہیں ،  گرم مسالے ڈالنے ہو ں تو کالی مرچ،  ہری مرچ یا پسی ہوئی لال مرچ وغیرہ کم مقدار میں ڈالئے۔ 

ٹھنڈی تاثیر والے عطریات استعمال کیجئے

      {۲}  گرمیوں میں اچھی اچھی نیّتوں کے ساتھ ٹھنڈی تاثیر والے عطر یات مَثَلاً شَمامۃُ الْعنبر، حنا، گلاب، صندل۔   موتیا،  خس ، کیوڑا ، چمپا وغیرہ کپڑوں پر لگانا مُفید ہے۔  مُشک ،  کستوری،  عود،  عنبر،  زعفران وغیرہ عطریات گرم تاثیر والے ہیں ،  یہ سردیوں میں لگانے چاہئیں ۔   یاد رکھئے !یہ تاثیر ات اصلی عطر یات کی ہیں ،  کیمیکل کی ملاوٹ سے تاثیر میں بہت کمی آ جاتی ہے۔   ( اسلامی بہنیں ایسا عطر نہ لگائیں جس کی خوشبو پھیلتی ہو )

رَمَضانُ المبارَک صحّت کے ساتھ گزارنے کا نسخہ

   سحری میں درمیانی سائز کی تندوری روٹی آدھی  ( اگر گھریلو چھوٹی چپاتی ہو تو حسبِ ضرورت ایک یا دو عدد)  اور دہی کے اندر کم مقدار میں چینی اور بہتر ہے کہ براؤن شوگر شامل کر کے استِعمال کر لیجئے،  اگرموافق ہو تو بے شک آدھ کلو دہی کھالیجئے۔   افطار میں کم از کم تین کھجوریں اور کچھ پھل ،  مغرب و عشا کے درمیان سادہ سالن کے ساتھ روٹی  (سحری والی مقدار میں )  کھایئے۔   اِنْ شَآءَاللہ عَزَّ وَجَلَّ سارا ماہِ رَمَضانُ المبارک صحت مند رہیں گے اور نمازِ تراویح،  تلاوت و عبادت میں دل لگے گا۔ 

گرمیوں میں چاول کھانا مفید ہے

 



Total Pages: 7

Go To