Book Name:Rah e Khuda عزوجل Main Kharch Karnay Kay Fazail

حدیث ۳۰:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’أحب الأعمال إلی اللہ تعالٰی بعد الفرائض إدخال السرور علی المسلم‘‘ رواہ فیھما عن ابن عباس رضي اللہ تعالٰی عنھما([1])۔

حدیث ۳۱تا۳۳: کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’أفضل الأعمال إدخال السرورعلی المؤمن کسوت عورتہ ،  أو أشبعت جوعتہ ،  أو قضیت لہ حاجۃ ‘‘ رواہ في الأوسط عن أمیر المؤمنین عمر الفاروق الأعظم و نحوہ أبو الشیخ في الثواب و الأصبہاني في حدیث عن ابنہ عبداللہ و ابن أبي الدنیا عن بعض أصحاب النبي صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  ([2])۔

حدیث۳۴ :   کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’من وافق من أخیہ شھوۃ غفرلہ‘‘ رواہ العقیلي و البزار و الطبراني في الکبیر عن أبي الد رداء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ و لہ شواھد في اللاٰلي([3])۔

حدیث ۳۵:   کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’من أطعم أخاہ المسلم شھوتہ حرمہ اللہ علی النار‘‘۔  رواہ البیھقي في شعب الإیمان عن أبي ھریرۃ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([4])۔

حدیث ۳۶ :   کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’من موجبات الرحمۃ إطعام المسلم المسکین‘‘ رواہ الحاکم وصححہ ،  و نحوہ البیھقي و أبو الشیخ في الثواب عن جابر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([5])۔

حدیث ۳۷ تا ۴۶:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’الدرجات إفشاء السلام و إطعام الطعام و الصلاۃ باللیل و الناس نیام‘‘ قطعۃ من حدیث جلیل نفیس جمیل مشھور مستفید مفید مفیض  ،  رواہ إمام الأئمۃ أبوحنیفۃ و الإمام أحمد وعبد الرزاق في مصنفہ و الترمذي و الطبراني عن ابن عباس  ،  و أحمد و الترمذي و الطبراني و ابن مردویہ عن معاذ بن جبل و ابن خزیمۃ و الدارمي و البغوي و ابن السکن و أبونعیم و ابن بسطۃ عن عبدالرحمٰن بن عایش و أحمد و الطبراني عنہ عن صحابي و البزار عن ابن عمر  و عن ثوبان و الطبراني عن أبي أمامۃ و ابن قانع عن أبي عبیدۃ بن الجراح و الدار قطني و أبوبکر النیسابوري في الزیادات عن أنس و أبوالفرج في العلل تعلیقا عن أبي ھریرۃ و ابن أبي شیبۃ مرسلاً عن عبد الرحمٰن بن سابط رضي اللہ تعالٰی عنھم۔  

 



[1]    ’’اللہ تعالیٰ کے فرائض کے بعد سب اعمال سے زیادہ پیا را عمل مسلمان کا جی خوش کرناہے‘‘۔ طبرانی نے دونوں   میں   ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے روایت کیا۔

 [ المعجم الأوسط  ،  باب المیم من اسمہ محمود ، ج۶ ، ص۷ ۳ ، رقم الحدیث ۷۹۱۱ ، دار الکتب العلمیۃ ،  بیروت]

[2]    ’’ سب سے افضل کام مسلمانوں   کا جی خوش کرنا ہے کہ تُو اس کابدن ڈھانکے یا بھوک میں   پیٹ  بھر ے یا اس کا کوئی کام پورا کرے‘‘۔ اسے اوسط میں   امیر المومنین عمر فاروق اعظم سے اور ایسے ہی ابو الشیخ نے ثواب میں   اور ا صبہانی نے اپنے بیٹے عبداللہ کی حدیث میں  ۔ [الترغیب و الترھیب  ،  کتاب البر و الصلۃ  ،  باب الترغیب في قضاء حوائج المسلمین  ، ج۳ ، ص۲۶۵ ، رقم الحدیث۱۹ ، دارالکتب العلمیۃ ،  بیروت]اور ابن ابی الدنیا نے بعض اصحاب ِ نبی صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم سے روایت کیا۔

 

 

[3]    ’’ جس مسلمان کاجی کسی کھانے پینے یا کسی قسمِ حلال چیز کو چاہتاہو   اتفاق سے دوسرا  اس کے لئے وہی چیز مہیّا کر دے ، اللہ عَزَّ وَجَلَّ  اس کے لئے مغفرت فرمادے‘‘۔ اسے عقیلی ، بزار اور طبرانی نے کبیر میں   ابودرداء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیااورلآلی میں   اسکے شوا ہدہیں  ۔ [مجمع الزوائد  ،  کتاب الأطعمۃ  ،  باب فیمن وافق من أخیہ شھوۃ  ، ج۵ ، ص۱۰ ، رقم الحدیث ۷۸۷۴ ، دار الفکر  ،  بیروت ]

[4]    ’’جواپنے مسلمان بھائی کو  اس کی چاہت کی چیز کھلائے ، اللہ تعالیٰ اسے دوزخ پر حرام کردے‘‘۔ اسے بیہقی نے شعب الایمان میں   ابو ہریرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا۔

[شعب الإیمان ،  ج۳ ، ص۲۲۲ ، رقم الحدیث۳۳۸۲ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

[5]    ’’رحمتِ الہٰی واجب کردینے والی چیزوں   میں   سے غریب مسلمانوں   کو کھانا کھلانا ہے ‘‘ ۔ روایت کیا اسے حاکم نے اور اس کی تصحیح کی ، ایسے ہی بیہقی اور ابو الشیخ نے ثواب میں   جابر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے۔

[الترغیب و الترھیب  ، کتاب الصدقات  ،  باب الترغیب في إطعام الطعام الخ ، ج۲ ، ص۳۵ ، رقم الحدیث۹ ، دار الکتب العلمیۃ ،  بیروت]



Total Pages: 17

Go To