Book Name:Rah e Khuda عزوجل Main Kharch Karnay Kay Fazail

حدیث ۲۴: کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’صلۃ الرحم تزید في العمر‘‘۔  رواہ القضاعي عن ابن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ ([1])۔

حدیث ۲۵: کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’إن أعجل البر ثوابا لصلۃ الرحم حتی أن أھل البیت لیکونون فجرۃ فتنموا أموالھم و یکثر عددھم إذا تواصلوا‘‘۔  رواہ الطبراني عن أبي بکرۃ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([2])۔

          دوسری روایت میں    اتنا اورہے  :

          ’’وما من أھل بیت یتواصلون فیحتاجون‘‘ رواہ ابن حبان في صحیحہ([3])۔

حدیث۲۶:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’صلۃ الرحم وحسن الخلق وحسن الجوار یعمرن الدیار و یزدن في الأعمار‘‘ رواہ الإمام أحمد و البیھقي في الشعب بسند صحیح علٰی أصولنا عن أم المؤمنین الصدیقۃ رضي اللہ تعالٰی عنھا([4])۔

حدیث ۲۷:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’صنائع المعروف تقي مصارع السوء و الاٰفات والھلکات و أھل المعروف في الدنیا ھم أھل المعروف في الاٰخرۃ‘‘۔ رواہ الحاکم في المستدرک عن أنس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([5])۔

حدیث ۲۸:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’صنائع المعروف تقي مصارع السوء و الصدقۃ خفیا تطفیٔ غضب الرب وصلۃ الرحم زیادۃ في العمر وکل معروف صدقۃ و أھل المعروف في الدنیا ھم أھل المعروف في الاٰخرۃ و أھل المنکر في الدنیا ھم أھل المنکر في الاٰخرۃ و أول من یدخل الجنۃ أھل المعروف‘‘  رواہ الطبراني في الأوسط عن أمّ المؤمنین ، أم سلمۃ  رضي اللہ تعالٰی عنھا([6])۔

حدیث ۲۹: کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’إن من موجبات المغفرۃ إدخالک السرورعلی أخیک المسلم‘‘ رواہ الطبراني في الکبیر و الأوسط عن الإما م سیدنا الحسن بن علي کرم اللہ تعالٰی وجوھہما ([7])۔

 



[1]    ’’صلۂ رحم سے عمر بڑھتی ہے‘‘۔ اسے قضاعی نے ابن مسعود رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا۔ [کنز العمال  ،  کتاب الأخلاق ،   قسم الأقوال ،  باب صلۃ الرحم و الترغیب فیھا ، ج۳ ، ص۱۴۳ ، رقم الحدیث ۶۹۰۶ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

[2]    ’ ’’بے شک سب نیکیوں   میں   جلد تر ثواب میں   صلہ ٔ  رحمی ہے یہاں   تک کہ گھروالے فاسق بھی ہوں   تو ان کے مال زیادہ ہوتے ہیں   اور ان کے شمار بڑھتے ہیں   جب آپس میں   صلۂ رحم کریں  ‘‘ ۔ اسے طبرانی نے ابو بکرہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا۔ [مجمع الزوائد  ،  کتاب البر و الصلۃ  ،  باب صلۃ الرحم و قطعھا ، ج۸ ، ص۲۷۸ ، رقم الحدیث ۱۳۴۵۶ ، دار الفکر ،   بیروت ،   المعجم الأوسط  ،   من اسمہ أحمد ،  ج۱ ، ص۳۰۷ ، رقم الحدیث ۱۰۹۲ ، دارالکتب العلمیۃ ،  بیروت ،  إن ھذہ الروایۃ بالمعنی و اللفظ غیرھا]

[3]    ’’ کوئی گھر والے ایسے نہیں   کہ آپس میں   صلہ ٔ  رحم کریں   پھر محتاج ہوجائیں  ‘‘(اسے ابن حبان نے اپنی صحیح میں  روایت کیا۔

[صحیح ابن حبان  ،  کتاب البر و الإحسان  ،  باب صلۃ الرحم  ،  ذکر خبر الدال ، ج۱ ، ص۳۳۳ ، رقم الحدیث ۴۴۱ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

[4]    ’’ صلۂ رحمی اورحسن خلقی اورہمسایہ سے نیک سلوک ، شہروں   کو  آباد اورعمروں   کو زیادہ کرتے ہیں  ‘‘۔ اسے امام احمد اوربیہقی نے شعب میں   بسندِ صحیح ہمارے ا صول پر  ام المومنین صدیقہ رضی اللہ تعالیٰ عنہا سے روایت کیا۔

[کنزالعمال  ،  کتاب الأخلاق  ،  قسم الأقوال ،   باب صلۃ الرحم الخ  ، ج۳ ، ص۱۴۳ ، رقم الحدیث ۶۰۹۷ ،  دار الکتب العلمیۃ ،  بیروت]

[5]    ’’نیک سلوک کے کام بُری موتوں   ، آفتوں   اور ہلاکتوں   سے بچاتے ہیں   اور دنیا میں   احسان والے وہی آخرت میں  احسان والے ہوں   گے ‘‘۔ اسے حاکم نے مستدرک میں   انس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا۔

[کنزالعمال  ،  کتاب الزکاۃ  ،  قسم الأقوال ،   الفصل الأول في الترغیب فیھا ، ج۶ ، ص۱۴۷ ، رقم الحدیث ۱۵۹۶۲ ، دار الکتب العلمیۃ ،   بیروت]

 

[6]    ’’ بھلائیوں   کے کام بُری موتوں   سے بچاتے ہیں   اورپوشیدہ خیرات رب کا غضب بجھاتی ہے اوررشتہ داروں   سے اچھاسلوک عمر میں   برکت ہے اور ہرنیکی صدقہ ہے اوردنیا میں   احسان والے ، وہی آخرت میں   احسان پائیں   گے اوردنیا میں   بدی والے وہی آخرت میں   بدی دیکھیں   گے اورسب میں   پہلے جو جنت میں   جائیں   گے وہ نیک برتاؤ   والے ہیں  ‘‘ ۔ اسے طبرانی نے اوسط میں   ام المومنین ام سلمہ رَضِیَ اللہُ تعَالی عَنْہا سے روایت کیا۔

[المعجم الأوسط  ،  باب المیم من اسمہ محمد ، ج۴ ، ص۱۱ ۳ ، رقم الحدیث ۶۰۸۶ ، دار الکتب العلمیۃ ،  بیروت]

[7]    ’’ بے شک مغفرت واجب کردینے والی چیزوں   میں   سے تیر ا   اپنے مسلمان بھائی کا جی خوش کرناہے ‘‘۔ اسے طبرانی نے کبیر میں   اور   اوسط میں   امام سیدنا حسن بن علی کرَّمَ اللہُ وَجوھہما سے روایت کیا۔

[المعجم الأوسط  ،  باب المیم من اسمہ موسٰی ، ج۶ ، ص۱۲۹ ،  رقم الحدیث ۸۲۴۵ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

 

 



Total Pages: 17

Go To