Book Name:Rah e Khuda عزوجل Main Kharch Karnay Kay Fazail

اُن پر خوف اورنہ وہ غم کھائیں    ، اچھی بات (کہ ہاتھ نہ پہنچا تو میٹھی زبان سے سائل کو پھیر دیا) اوردرگزرے (کہ فقیر نے نا حق ہٹ ([1])  یا کوئی بے جا حرکت کی تو اس پر خیا ل نہ کیا ، اسے دُکھ نہ دیا ) یہ اس خیرات سے بہتر ہے جس کے پیچھے دل ستانا ([2])  ہو اوراللہ بے پرواہ ہے (کہ تمھارے صدقہ و خیرات کی پرواہ نہیں    رکھتا ، احسان کس پر کرتے ہو)حلم والا ہے (کہ تمھیں    بے شمار نعمتیں    دے کر تمھاری سخت سخت نا فرمانیوں    سے درگزر فرماتاہے تم ایک نوالہ محتاج کو دے کر و جہ بے و جہ اسے ایذا دیتے ہو) اے ایمان والو ! اپنی خیرات اکارت ([3])  نہ کرو احسان رکھنے اوردل ستانے سے اس کی طرح جو مال خرچ کرتاہے لوگوں    کے دکھاوے کو(کہ اس کا صدقہ سرے سے اکارت ہے         و   العیاذباللہ رب العالمین)

            ان سب باتوں    کے لحاظ کے ساتھ اس عمل کو ایک ہی بار نہ کریں    بار باربجالائیں   ([4])  کہ جتنی کثرت ہوگی اتنی ہی فقراء وغربا کی منفعت ([5])  ہوگی ، اتنی اپنے لئے دینی و  دُنیوی و جسمی و جانی رحمت وبرکت ونعمت وسعادت ہوگی ، خصوصاً ا یام ِ قحط میں  تو جب تک عیاذاً  باللہ قحط رہے روزانہ ایساہی کرنا مناسب کہ اس میں    نہایت سہل([6]) طور پر غرباء و  مساکین کی خبرگیری([7])  ہوجائے گی ، اپنے کھانے میں    اُن کا کھانا بھی نکل جائے گا ، دیتے ہوئے نفس کو معلوم بھی نہ ہوگا اورجماعت کی و  جہ سے سو   کا کھانا دوسو کو کفایت کرے گا ، قحط عام الرماد([8]) میں    حضرت سیّدنا امیر المؤمنین عمر فاروق اعظم رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اسی کا قصد ظاہر فرمایا ،  وباللہ التوفیق وھدایۃ الطریق۔

          الحمدللہ کہ یہ متفرد جواب نفیس و لا جواب عشرۂ اوسط ماہِ فاخر ربیع الآخر([9])  کے تین جلسوں   ([10])  میں    تسویداً ([11]) و  تبییضا ً ([12])  تمام اوربلحاظِ تاریخ راد القحط و الوباء بدعوۃ الجیران و مواساۃ الفقراء نام ہوا ۔

          و اٰخردعوٰنا أن الحمد للہ رب العٰلمین و الصلاۃ و السلام علی سید المرسلین محمد و اٰلہ وصحبہ أجعمین و  اللہ سبحنہ و تعالٰی أعلم و علمہ جل مجد ہ أ تم و أحکم([13])  ۔

٭٭٭٭٭٭

ماخذ ومراجع

نمبرشمار      کتاب                              مصنف / مؤلف                                               مطبوعہ

۱              قرآن مجید                          کلام باری تعالیٰ                                                    پاک کمپنی ، لاہور

۲             کنز الإیمان                                امام أحمد رضا خان علیہ الرحمۃ                                       رضا اکیڈیمي  ،  بمبئی

۳             صحیح البخاري                                                                    محمد بن إسماعیل البخاري علیہ الرحمۃ                                                                                  دارالکتب العلمیۃ بیروت

۴             صحیح مسلم                                                                                   مسلم بن حجاج النیشابوريعلیہ الرحمۃ                                                                                        دار ابن حزم ،  بیروت

۵             صحیح ابن حبان                                                                 محمد بن حبانرَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ                                                                                               دارالکتب العلمیۃ بیروت

 



[1]    بلاوجہ ضد         

[2]    دل دُکھانا

[3]    برباد ، ضائع          

[4]    کریں 

[5]    فائدہ 

[6]    بہت آسان           

[7]    خاطر تواضع

[8]    خاکستری کے سال

[9]    عمدہ مہینے ، ربیع الثانی کے درمیانی دس دنوں       

[10]    نشستوں           

[11]    مسوّدہ کی تحریر               

[12]    نوک پلک سنوار کر بہتری              

[13]    اور ہماری دُعا کا خاتمہ یہ ہے کہ سب خوبیاں   اللہ عَزَّ وَجَلَّ  کو جو مالک سارے جہان والوں   کا اور رسولوں   کے سردار محمد ، ان کی آل اورتمام صحابہ پر درود  و  سلام ، اللہ تبارک وتعالیٰ زیادہ جانتاہے اوراس کا علم ، اس کی بزرگی کا مل ترین اوربہت زیادہ محکم ہے ۔  



Total Pages: 17

Go To