Book Name:Rah e Khuda عزوجل Main Kharch Karnay Kay Fazail

عنھم([1]) ۔

حدیث ۵۲: کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

          ’’الملائکۃ تصلي علی أحدکم ما دامت مائدتہ موضوعۃ ‘‘رواہ الأصبھاني عن أمّ المؤمنین الصدیقۃ رضي اللہ تعالٰی عنھا([2])۔

حدیث ۵۳:  کہ فرماتے ہیں صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم:

’’الضیف یأ تي برزقہ و یرتحل بذنوب القوم یمحص عنھم ذنوبھم‘‘ ۔  رواہ أبو الشیخ عن أبي الدرداء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([3])۔

حدیث ۵۴:  سیدنا امام حسن مجتبیٰ صَلَّی اللہُ تعالٰی عَلٰی جَدِہ الْکَریْم و عَلیْہ وَ بَارَک و سَلّم کی حدیث میں    ہے  :

          ’’لأن أطعم أخا لي في اللہ لقمۃ أحب إلٰي من أن أتصدق علی مسکین بد رھم ،  و لأن أعطی أخا لي في اللہ درھما أحب إلٰي من أن أتصدق علٰی مسکین بما ئۃ درھم‘‘۔   رواہ أبو الشیخ في الثواب عنہ عن جدہ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  و لعل الأظھر  وقفہ کالذي یلیہ([4])۔

حدیث ۵۵:  سیدنا امیر المؤمنین مولی المسلمین علی مرتضی کرَّمَ اللہُ تَعالٰی وَجْہَہ الاسنی فرماتے ہیں  :

          ’’لأن أجمع نفر ا من إخواني علی صاع ،  أو صاعین من طعام أحب إلٰيّ من أدخل سوقکم فاشتری رقبۃ فأعتقھا‘‘۔  رواہ منہ وقفا علیہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([5])۔

حدیث ۵۶:  کہ صحابہ رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُم نے عرض کی یارسول اللہ ! ہم کھاتے ہیں  اورسیر نہیں    ہوتے ، فرمایا : اکٹھے ہو کر کھاتے ہو  یا الگ الگ ؟عرض کی : الگ الگ ، فرمایا :

          ’’اجتمعوا  علی طعامکم و اذکروا  اسم اللہ یبارک لکم فیہ‘‘ رواہ أبوداوُد و ابن ماجۃ وحبان عن وحشي بن حرب        رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ ([6])۔

حدیث ۵۷:    فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

            ’’کلوا جمیعاً ولا تفرقوا فإن البرکۃ مع الجماعۃ ‘‘۔  رواہ ابن ماجۃ و العسکري في المواعظ عن أمیر المؤمنین عمر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ بسند حسن([7])۔

حدیث ۵۸:  کہ فرماتے ہیں    صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم  :

            ’’البرکۃ في ثلاثۃ في الجماعۃ و الثرید و السحور‘‘ رواہ الطبراني في الکبیر و البیھقي في الشعب عن سلمان        رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ ([8])۔

 



[1]    ’’ جس گھرمیں   لوگوں   کو   کھانا کھلایا جائے ، خیر  و برکت اس گھر کی طرف  اس سے بھی زیادہ جلد پہنچتی ہے جتنی جلد چُھری اونٹ کے کو ہان کی طرف ‘‘۔ اسے ابن ما  جہ نے ابن عباس سے اور ابن ابی الدنیا نے انس رضِیَ اللہُ تعَالیٰ عنہمسے روایت کیا[سنن ابن ماجۃ ، کتاب الأطعمۃ ،  باب الضیافۃ  ، ج۴ ، ص۵۱ ، رقم الحدیث۳۳۵۷ ، دار المعرفۃ ،  بیروت]

[2]    ’’ جب تک تم میں   سے کسی کا دستر خوان بچھا رہتاہے اتنی دیرتک فرشتے اس پردرود بھیجتے رہتے ہیں  ‘‘۔ اسے اصبہانی نے ام المومنین صدیقہ رضِیَ اللہُ تعَالیٰ عنہا سے روایت کیا

[الترغیب و الترھیب  ،  کتاب البر و الصلۃ  ،  باب الترغیب في الضیافۃ ، ج۳ ، ص۳۰۰ ، رقم الحدیث ۱۳ ، دار الفکر ،  بیروت]

 

[3]    ’’مہمان اپنا رزق لے کرآتاہے اورکھلانے والوں   کے گناہ لے کر جاتاہے ، ان کے گناہ مٹا دیتاہے ‘‘۔ اسے ابو  الشیخ نے ابودرداء رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا

[کنز العمال  ، کتاب الضیافۃ  ،  باب في ترغیب الضیافۃ  ،  الفصل الأول  ، ج۹ ، ص۱۰۷ ، رقم الحدیث۲۵۸۳۰ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

[4]    ’’بے شک میرا  اپنے کسی اسلامی بھائی کو  ایک نوالہ کھلانا مجھے اس سے زیادہ پسند ہے کہ مسکین کو ایک روپیہ دُوں   ، اور اپنے اسلامی بھائی کو  ایک روپیہ دینا مجھے اس سے زیادہ پیارا ہے کہ مسکین پر سو روپیہ خیرات کروں   ‘‘۔ اسے ابو   الشیخ نے ثواب میں   امام حسن رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے ، انھوں   نے اپنے ناناجان صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم سے روایت کیا ، اور اظہر یہ ہے کہ یہ حدیث آئندہ حدیث کی طرح حضرت حسن رضی اللہ تعالی عنہ پر موقوف ہے یعنی ان کا فرمان ہے۔

 [ الترغیب و الترھیب ،  کتاب الصدقات ،  الترغیب في إطعام الطعام    وسقي الماء و الترھیب من منعہ ، ج۲ ، ص۳۸ ، رقم الحدیث۲۴ ، دار الکتب العلمیۃ ،  بیروت]

[5]    ’’میں   اپنے چند برادران دینی کو تین سیریا چھ سیر کھانے پر  اکٹھا کروں   تو یہ مجھے اس سے زیادہ محبوب ہے کہ تمھارے بازار میں   جاؤں   اور ایک غلام خرید کر آزاد کردوں  ‘‘۔ اسے ابو   الشیخ نے حضر ت علی رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے موقوفاً روایت کیا [الترغیب و الترھیب  ،  کتاب الصدقات ،  الترغیب في إطعام الطعام و سقي الماء و الترھیب من منعہ ، ج۲ ، ص۳۸ ، رقم الحدیث۲۳ ، دار الکتب العلمیۃ ،   بیروت]

[6]    ’’جمع ہو کر کھاؤ اور اللہ تعالیٰ کا نام لو تمھارے لئے اسی میں   برکت رکھی جائے گی‘‘ ۔ اسے ابوداؤد ، ابن ما   جہ اورحبان نے وحشی بن حرب رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا

[سنن أبيداوُد ،  کتاب الأطعمۃ  ،  باب في الاجتماع علی الطعام  ، ج۳ ، ص۴۸۶ ، رقم الحدیث۳۷۶۴ ، دار إحیاء التراث العربي ،  بیروت]

[7]    ’’مل کر کھاؤ اورجدا نہ ہوکہ برکت جماعت کے ساتھ ہے ‘‘۔ اسے ابن ما   جہ اورعسکری نے مواعظ میں   امیر المومنین عمر رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ سے بسندِ حسن روایت کیا

[کنزالعمال ، کتاب المعیشۃ ،  ج۱۵ ، ص۱۰۳ ، رقم الحدیث ۴۰۷۱۶ ، دار الکتب العلمیۃ  ،  بیروت]

[8]    ’’برکت تین چیزوں   میں   ہے ، مسلمانوں   کے اجتماع ، طعامِ ثرید اورطعامِ سحری میں  ‘‘۔ اسے طبرانی نے کبیر میں   اوربیہقی نے شعب میں   سلمان رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت کیا۔

[المعجم الکبیر  ،  سلیمان التیميعن أبي عثمان النہدي  ، ج۶ ، ص۲۵۱ ، رقم الحدیث ۶۱۲۷ ، دار إحیاء التراث العربي  ،  بیروت]



Total Pages: 17

Go To