Book Name:Apnay Liye Kafan Tayyar Rakhna Kaisa?

پہلے اِسے پڑھ لیجیے!

اَلْحَمْدُ لِلّٰہ  عَزَّ وَجَلَّ  تبلیغِ قرآن وسنت کی عالمگیر غیر سیاسی تحریک دعوتِ اسلامی کے بانی، شیخِ طریقت، امیرِاہلسنّت حضرت علّامہ مولانا ابو بلال  محمّد الیا س عطاؔر قادری رضوی ضیائی دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ نے اپنے مخصوص انداز میں سنتوں بھر ے بیانات ، علْم وحکمت سے معمور مَدَ نی مذاکرات اور اپنے تربیت یافتہ مبلغین کے ذَرِیعے تھوڑے ہی عرصے میں لاکھوں مسلمانوں کے دلوں میں مدنی انقلاب برپا کر دیا ہے، آپدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی صحبت سے فائدہ اُٹھاتے  ہوئے کثیر اسلامی بھائی وقتاً فوقتاً مختلف مقامات پر ہونے والے مَدَنی مذاکرات میں مختلف قسم کے موضوعات  مثلاً عقائدو اعمال، فضائل و مناقب ، شریعت و طریقت، تاریخ و سیرت ، سائنس و طِبّ، اخلاقیات و اِسلامی معلومات، روزمرہ معاملات اور دیگر بہت سے موضوعات سے متعلق سُوالات کرتے ہیں اور شیخِ طریقت امیر اہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ انہیں حکمت آموز  اور  عشقِ رسول میں ڈوبے ہوئے جوابات سے نوازتے ہیں۔  

امیرِاہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کے ان عطاکردہ دلچسپ اور علم و حکمت سے لبریز  مَدَنی پھولوں کی خوشبوؤں سے دنیا بھرکے مسلمانوں کو مہکانے کے مقدّس جذبے کے تحت  المدینۃ العلمیہ کا شعبہ’’ فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘ ان مَدَنی مذاکرات کو کافی  ترامیم و اضافوں  کے ساتھ’’فیضانِ مدنی مذاکرہ‘‘کے نام سے پیش کرنے کی سعادت حاصل کر رہا ہے۔ان تحریری گلدستوں کا مطالعہ کرنے سے اِنْ شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  عقائد و اعمال اور ظاہر و باطن کی اصلاح، محبت ِالٰہی و عشقِ رسول  کی لازوال دولت کے ساتھ ساتھ مزید حصولِ علمِ دین کا جذبہ بھی بیدار ہوگا۔

اِس رسالے میں جو بھی خوبیاں ہیں یقیناً  ربِّ رحیم  عَزَّ وَجَلَّ  اور اس کے محبوبِ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کی عطاؤں، اولیائے کرامرَحِمَہُمُ اللّٰہ ُ السَّلَام  کی عنایتوں اور امیراہلسنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ کی شفقتوں اور پُرخُلوص دعاؤں کا نتیجہ ہیں اور خامیاں ہوں تو  اس میں ہماری غیر ارادی کوتاہی کا دخل ہے۔

مجلس  المدینتہ العلمیہ                                                     

                                                            شعبہ فیضانِ مدنی مذاکرہ                                                                   

                                                                                                                                         ۱۲رمضان المبارک ۱۴۳۶ھ/30 جون 2015ء    

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہِ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

                                                                                       اپنے لیےکفن تیار رکھنا کیسا؟

             (مع دیگردلچسپ سُوال وجواب)

شیطان لاکھ سُستی دِلائے یہ رسالہ(۳۲ صفحات) مکمل پڑھ لیجیے۔

اِنْ شَآءَ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ معلومات کا اَنمول خزانہ ہاتھ آئے گا۔

دُرُود شریف کی فضیلت

نبیوں کے سلطان، رحمتِ عالمیان، سرورِ ذیشان، سردارِ دوجہان، محبوبِ رحمٰن صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کا فرمانِ رحمت نشان ہے : ”جس نے مجھ پر ایک بار دُرُودِ پاک پڑھا اللہ  عَزَّ وَجَلَّ  اُس پر دس رحمتیں نازِل فرماتا ہے، دس گناہ مٹاتا ہے اور دس دَرَجات بُلند فرماتا ہے۔“([1])

صَلُّوا  عَلَی الْحَبِیْب!                                               صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی  عَلٰی مُحَمَّد

اپنے لیے کفن تیار رکھنا کیسا؟

عرض : اپنے لیے  پہلے  سےکفن  تیار رکھنا کیسا ہے؟نیز قبر  پہلے سے کھُدوا کر رکھ سکتے ہیں یا نہیں ؟

اِرشاد : اپنے لیے پہلے سےکفن تیار رکھنے میں کوئی حَرَج نہیں۔حضرتِ سَیِّدُنا امام محمد بن اسمعیل  بخاریعَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہ ِالْبَارِی   نے بخاری شریف میں ایک مستقل  باب باندھا ہےجس کا نام ہی یہ رکھا ہے”مَنِ اسْتَعَدَّ الْكَفَنَ فِىْ زَمَنِ النَّبِىِّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّم فَلَمْ يُنْكِرْ عَلَيْهِ نبیٔ کریم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کے زمانہ میں جس نے کفن تیار رکھااورآپ نے  اس پر انکار نہ فرمایا“اس باب کے تحت ایک حدیثِ پاک نقل فرمائی کہ ایک صحابیرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ نے صاحبِ جودونوال، رسولِ بے مثال ، بی بی آمنہ کے لال  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   سے کفن کے لیے چادر مانگی تو آپعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  نے عطا فرمادی اور اس سے منع نہ فرمایا چنانچہ حضرتِ سَیِّدُناسہل بن سعدرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ روایت کرتے ہیں کہ ایک خاتون نبیٔ کریم، رَءُوْفٌ رَّحیم عَلَیْہِ اَفْضَلُ الصَّلٰوۃِ  وَالتَّسْلِیْم کی خدمتِ اقدس میں خوبصورت بُنی ہوئی حاشیہ والی چادر لائی، تمہیں معلوم ہے کہ کون سی چادر تھی؟لوگوں نے جواب دیا وہ تہبند ہے۔ کہا : ہاں۔اُس عورت نے عرض کی : ’’میں نے اِسے اپنے ہاتھ  سے بُنا ہے تاکہ آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کو پہناؤں۔‘‘نبیٔ کریمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے اُسے قبول فرمالیااورآپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کو اس کی ضرورت بھی تھی۔آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   اُس چادرکو اِزار بنا کر ہمارے پاس تشریف ‏لائے تو فُلاں صحابی نے اس چادر کی تعریف کی اور کہا کہ’’کتنی اچھی ہے یہ مجھے پہنادیجیے۔‘‘لوگوں نے اس سے کہا : ’’تم نے  اچھانہیں کیا کیونکہ نبی ٔ کریمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کواِس کی ضرورت تھی اورپھر تمہیں یہ بھی معلوم ہے کہ آپ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کسی سائل کا سوال رَدْ نہیں فرماتے اس کے باوجود تم نے چادر  مانگ لی۔‘‘تو اس نے کہا : ’’خدا کی قسم! ‏یہ چادر  میں نے پہننے کے لیے نہیں مانگی بلکہ اس لیے مانگی ہے کہ میں اس مبارک چادر کو اپناکفن بناؤں۔‘‘ حضرتِ ‏سَیِّدُنا سہل رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہفرماتے ہیں کہ وہ مبارک چادر  اُن(خوش نصیب صحابیرَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہ)کا کفن بنی۔([2])

 



[1]     نسائی، کتاب السھو، باب الفضل  فی الصلٰوة  علی النبی صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ، ص۲۲۲، حدیث : ۱۲۹۴

[2]     بخاری، کتاب الجنائز، باب  من استعد الکفن. .. الخ ، ۱/  ۴۳۱-۴۳۲، حدیث :  ۱۲۷۷



Total Pages: 8

Go To