Book Name:Tamam Dinon ka Sardar

گا وہ اُسے دے گا جب تک حرام کا سُوال نہ کرے اور(۵) اِسی دن میں قِیامت قائم ہو گی۔ کوئی مُقَرَّبفِرِشتہ، آسمان، زمین، ہوا، پہاڑ اور دریا ایسا نہیں کہ جُمُعہ کے دِن سے ڈرتا نہ ہو۔([1])

حضرتِ سیِّدُنا اَنس بن مالکرَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ سے روایت ہے کہاللہ   عَزَّ  وَجَلَّ    کے مَحبوب، دانائے غُیوب، مُنَزہٌ عَنِ الْعُیوب  صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے فرمایا : اللہ تبارک و  تَعَالٰی  کسی مسلمان کو جُمُعہ کے دن بے مغفرت کئے نہ چھوڑے گا۔([2])

سرکارِعالی وقار، مدینے کےتاجدارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کا فرمانِ خوشبودار ہے : جُمُعہ کے دِن اور رات میں چوبیس گھنٹے ہیں کوئی گھنٹہ ایسا نہیں جس میںاللہ تَعَالٰی جہنم سے چھ لاکھ آزاد نہ کرتا ہو، جن پر جہنم واجِب ہو گیا تھا۔([3])

حضرتِ سیِّدُنا عبدُاﷲبن عَمْرورَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا سے روایت ہے کہ حُضُورِ پاک، صاحِبِ لَولاک، سیّاحِ اَفلاکصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے اِرشاد فرمایا : جو مسلمان جُمُعہ کے دن یا جُمُعہ کی رات میں مرے گا،  اللہ تَعَالٰی   اسے فتنۂ قبر سے بچالےگا۔([4])

تاجدارِمدینۂ منوَّرہ، سُلطانِ مکّۂ مکرّمہصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے اِرشاد فرمایا : جو روزِ جُمُعہ یا شبِ جُمُعہ(یعنی جمعرات اور جُمُعہ کی درمیانی شب)مرے گا عذابِ قبرسے بچا لیاجائے گااور قِیامت کے دن اِس طرح آئے گا کہ اُس  پر شہیدوں کی مُہرہو گی۔([5])

میٹھے میٹھے اسلا می بھائیو! ہم کتنے خوش نصیب ہیں کہ اللہتبارَک و  تَعَالٰی  نے اپنے پیارے حبیبصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کے صدقے ہمیں جُمُعۃ المبارَک کی نعمت سے سرفراز فرمایا۔افسوس! ہم ناقدرے اس مبارک دن کو بھی عام دِنوں کی طرح غفلت میں گزار دیتے ہیں حالانکہ جُمُعہ عید  کا دن  ہےجیسا کہ حدیثِ پاک میں ہے : اللہ   عَزَّ  وَجَلَّ   نے اِسے(یعنی جمعہ کو)مسلمانوں کے لیے عید کا دن بنایا ہے تو جو شخص جمعہ میں آئے وہ غسل کرے اور جس کے پاس خوشبو ہو وہ خوشبو لگائے اور مسواک کرے۔([6])جُمُعہ کو بروزِ قِیامت  روشن وحسین صورت میں اُٹھایا جائے گا اور اَہلِ جنّت دُلہن کی طرح اس کا گھیرا کیے ہونگے۔([7])جُمُعہ کے روز جہنَّم کی آگ نہیں سُلگائی جاتی اور اس کے دروازے بند کر دئیے جاتے ہیں۔جُمُعہ کے روز مرنے والا خوش نصیب مسلمان شہید کا رُتبہ پاتا ہے اور عذابِ قبرسے محفوظ ہو جاتا ہے۔([8]) اللہ   عَزَّوَجَلَّ    ہمیں اس مبارک دن کی برکتوں سے مالا مال فرمائے۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن   صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلہٖ وَسَلَّم

جمعہ کے دن نیکی کا ثواب

عرض : کیاجمعہ کے دن نیکیوں کا  ثواب  بھی بڑھادیا جاتا ہے؟

اِرشاد : جی ہاں۔جمعۃ المبارک کے دن نیکیوں کا اجروثواب بڑھا دیا جاتا ہے جیساکہ  مُفَسّرِشہیر، حکیمُ الامَّت حضر ت ِ مفتی احمد یار خانعَلَیْہِ رَحْمَۃُ الْحَنَّان فرماتے ہیں : جمعہ کی ایک نیکی ستر کے برابر ہوتی ہے اسی لیے جمعہ کا حج، حجِ اکبر کہلاتا ہے اور اس کا ثواب سترحج کا(ہے)۔([9])

جُمُعہ کے دن جہنم نہیں بھڑکایا جاتا

عرض : کیاکوئی ایسا بھی دِن ہے جس دن جہنم نہ بھڑکایا جاتاہو؟

اِرشاد : جی ہاں۔جُمُعۃ المبارک کے روز جہنم نہیں بھڑکایا جاتاجیساکہ اللہ   عَزَّ  وَجَلَّ   کے مَحبوب، دانائے غُیوب، مُنَزَّہٌ عَنِ الْعُیوبصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   کا فرمانِ فرحت نشان ہے :  سوائے روزِ جُمُعہ کے جہنم(ہر روز)بھڑکایا جاتا ہے۔([10])

خُطبۂ جمعہ کے آداب

عرض :  خُطبۂ جمعہ کے کچھ آداب بیان فرما دیجیے نیزکیانِکاح کا خُطبہ سننا بھی ضَروری ہوتا ہے؟

اِرشاد : جو چیزیں نَماز میں حرام ہیں مثلاًکھانا پینا، سلام وجوابِ سلام وغیرہ یہ سب خُطبہ کی حالت میں بھی حرام ہیں یہاں تک کہاَمْر بِالْمَعْرُوف(نیکی کی دعوت دینا بھی)، ہاں  خطیب اَمْر بِالْمَعْرُوفکر سکتا ہے۔جب خُطبہ پڑھے تو تمام حاضرین پر سننا اور چُپ رہنا فرض ہے، جو لوگ امام سے دُور ہوں کہ خُطبہ کی آواز ان تک نہیں پہنچتی اُنہیں بھی چُپ رہنا واجب ہے اگر کسی کو بُری بات کرتے دیکھیں تو ہاتھ یا سر کے اِشارے سے منع کر سکتے ہیں زَبان سے ناجائز ہے۔([11])

 



[1]      ابنِ ماجہ، کتاب اقامة الصلاة  والسنة  فیھا، باب  فی  فضل الجمعة، ۲/ ۸، حدیث : ۱۰۸۴

[2]     مُعْجَمِ اَوْسَط، من اسمہ عبدالمالک، ۳/ ۳۵۱ ، حدیث : ۴۸۱۷

[3]      مُسْنَد اَبِی یَعْلٰی، مسند انس بن مالک، ۳/ ۲۱۹، حدیث : ۳۴۲۱

[4]       تِرمِذی، کتاب الجنائز، باب  ما جاء  فی  من  مات  یوم الجمعة ، ۲/ ۳۳۹ ، حدیث : ۱۰۷۶

[5]      حِلية الْاَوْلِیاء، محمدبن المنکدر، ۳ / ۱۸۱، حدیث : ۳۶۲۹

[6]      ابنِ  ماجہ، كتاب إقامة الصلاة والسنة فيها، باب ما جاء فی الزينة  يوم الجمعة، ۲/ ۱۶، حدیث : ۱۰۹۸

[7]      

Total Pages: 8

Go To