Book Name:Aaqa Ka Pyara Kon?

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

مقامِ رسول

             میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ   نے اپنے پیارے حبیب ، حبیبِ لبیب، طبیبوں کے طبیبصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو وہ مقام و مرتبہ عطا فرمایا ہے اور ایسے اوصافِ جمیلہ سے نوازا ہے جن کا کَمَاحَقُّہٗبیان ہم جیسوں کے لئے ممکن نہیں۔

’’مدینہ‘‘کے پانچ حروف کی نسبت سے شانِ رسول کے بارے میں5آیاتِ مبارکہ

قرآن مجید میں ہے :

(1) مَنْ یُّطِعِ الرَّسُوْلَ فَقَدْ اَطَاعَ اللّٰهَۚ     (پ۵، النساء : ۸۰)

ترجمہ کنز الایمان :  جس نے رسول کا حکم مانا بیشک اُس نے اللّٰہ کا حکم مانا ۔

(2) وَ مَاۤ اَرْسَلْنٰكَ اِلَّا رَحْمَةً لِّلْعٰلَمِیْنَ(۱۰۷) (پ۱۷، الانبیاء :  ۱۰۷)

ترجمہ کنز الایمان :  اور ہم نے تمہیں نہ بھیجا مگر رحمت سارے جہان کے لئے ۔

(3) اِنَّاۤ اَرْسَلْنٰكَ شَاهِدًا وَّ مُبَشِّرًا وَّ نَذِیْرًاۙ(۸) (پ۲۶ ، الفتح :  ۸)

ترجمہ کنز الایمان :  بیشک ہم نے تمہیں بھیجا حاضر و ناظر اور خوشی اور ڈر سناتا۔

(4) لَقَدْ مَنَّ اللّٰهُ عَلَى الْمُؤْمِنِیْنَ اِذْ بَعَثَ فِیْهِمْ رَسُوْلًا مِّنْ اَنْفُسِهِمْ (پ ۴ ، اٰل عمران :  ۱۶۴)

ترجمہ کنز الایمان :  بے شک اللّٰہ کا بڑا احسان ہوا مسلمانوں پر کہ ان میں انہیں میں سے ایک رسول بھیجا ۔

(5) وَ لَسَوْفَ یُعْطِیْكَ رَبُّكَ فَتَرْضٰىؕ(۵) (پ۳۰ ، الضحی :  ۵)

ترجمہ کنز الایمان :  اور بے شک قریب ہے کہ تمہارا رب تمہیں اتنا دے گا کہ تم راضی ہوجاؤ گے۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                               صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

دنیا کو پیدا نہ کرتا

            حضرتِ سیِّدُنا ابن عباس رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ    سے مروی ہے :  اللّٰہ  عَزَّوَجَلَّ   فرماتا ہے :  وَعِزَّتِی وَجَلَالِی لَوْلَاکَ مَا خَلَقْتُ الْجَنَّۃَ لَوْلَاکَ مَا خَلَقْتُ الدُّنْیَا یعنی مجھے اپنی عزت و جلال کی قسم ! اے محبوب ! اگر تم نہ ہوتے تو میں جنت پیدا نہ کرتا ،  اگر تم نہ ہوتے تو میں دنیا پیدا نہ کرتا ۔ (فردوس الاخبار، ۲/ ۴۵۸، حدیث : ۸۰۹۵)

    سرور کہوں کہ مالک ومولیٰ کہوں تجھے!

            اعلیٰ حضرت، امامِ اہلِسنّت، مجدِّدِ دین وملّت ، مولانا شاہ امام احمد رضاخان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن بارگاہ رسالت میں یوں عرض گزار ہوتے ہیں :

      سَرور کہوں کہ مالک و مَولیٰ کہوں تجھے          باغِ خلیل کا گلِ زیبا کہوں تجھے

   اﷲرے تیرے جسمِ منوّر کی تابِشیں      اے جانِ جاں میں جانِ تجلّا کہوں تجھے

          تیرے تو وَصف ’’عیبِ تنا ہی‘‘ سے ہیں بَری                  حیراں ہوں میرے شاہ میں کیا کیا کہوں تجھے

                         کہہ لے گی سَب کچھ اُن کے ثناخواں کی خامشی                       چپ ہورہا ہے کہہ کے میں کیا کیاکہوں تجھے

         لیکن رضاؔ نے ختم سخن اس پہ کر دیا

        خالق کا بندہ خلق کا آقا کہوں تجھے  (حدائق بخشش، ص۱۷۴)

     صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                          صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

صحبت وقربت کے مشتاق رہتے

            ایسے بلند وبالا مرتبۂ عظمت پر فائز ہونے والے رحمتِ کونین، ہم غریبوں کے دل کے چین صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کی زیارت وقربت اور صحبتِ بابرکت ایسی عظیم ترین سعادت ، نعمت اور عبادت ہے جس کے لئے صحابہ کرامعَلَیْہِمُ الرِّضوَان  بہت مشتاق رہتے تھے ، رُخ مصطَفٰے کی زیارت کے طفیل صحابہ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضوَان  کو ایسی عظمت نصیب ہوئی کہ رب تَعَالٰی نے انہیں اپنی رضا کا مژدہ ان الفاظ میں سنایا :  

رَّضِیَ اللّٰهُ عَنْهُمْ وَ رَضُوْا عَنْهُ (پ۱۱، التوبہ : ۱۰۰)

ترجمہ کنز الایمان : اللّٰہ ان سے راضی اور وہ اللّٰہ سے راضی ہیں۔

 



Total Pages: 19

Go To