Book Name:Behtar Kon?

اپنے  پیارے  پیارے  اللّٰہ عَزَّوَجَلَّکو راضی کر سکتا ہے ۔

 جنت میں اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کاخصوصی کرم

           اُمُّ المؤمنین حضرت ِسیِّدتُنا عائشہ صدیقہ رضی اللّٰہ تعالٰی  عنہانے  بارگاہِ رسالتِ مآب صلَّی اللّٰہ تعالٰی  علیہ وآلہ وسلَّم میں عرض کی : یارسولَ اللّٰہ صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم !جنت کی وادیوں میں اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کے  جوارِرحمت میں کون ہوگا؟ دو عالَم کے  مالک و مختار، حبیبِ پروردگارصلَّی اللّٰہ تعالٰی  علیہ وآلہ وسلَّم نے  ارشاد فرمایا : جومیری سنت کو زندہ کرے  اورمیرے  پریشان امتی کی تکلیف دور کریگا ۔(تمہید الفرش فی الخصال الموجبۃ لظل العرش، ص۶۱)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

    ’’رجب‘‘کے تین حروف کی نسبت

سے جائزسفارش کے تین فضائل

(۱)زبان کا صدقہ

          حضرت ِسیدنا سمرہ بن جندب رضی اللّٰہ  تعالٰی  عنہروایت کرتے  ہیں کہ رسولُاللّٰہصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّمنے  ارشاد فرمایا : سب سے  افضل صدقہ زبان کا صدقہ ہے   ۔صحابہ کرامعلیہم الرضواننے  عرض کی : یارسولَ اللّٰہ صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم!زبان کا صدقہ کیا ہے  ؟ فرمایا : وہ سفارش جس سے  کسی قیدی کو رہائی دے  دی جائے ، کسی کا خون گرنے  سے  بچا لیا جائے  اور کوئی بھلائی اپنے  بھائی کی طرف بڑھا دی جائے  اوراس سے  کوئی مصیبت دور کردی جائے ۔(شعب الایمان، باب فی تعاون علی البر والتقوی، ۶/ ۱۲۴حدیث : ۷۶۸۲)   

  (۲)  سفارش کے ذریعے نفع

          حضرتِ سیدنا ابو موسیٰ رضی اللّٰہ  تعالٰی  عنہ سے  روایت ہے  کہ جب مدنی آقا صَلَّی اللّٰہ  تَعَالٰی علیہ وَالہٖ وَسلَّم کی بارگاہِ اقدس میں کوئی سائل یا ضرورت مند حاضر ہوتاتو آپ صَلَّی اللّٰہ  تَعَالٰی علیہ وَالہٖ وَسلَّمفرماتے  : (حاجت روائی میں )اسکی سفارش کرو اجر پاؤ گے ، اللّٰہ عَزَّوَجَلَّاپنے  رسول کی زبان پر جو چاہتاہے  فیصلہ کرتاہے  ۔(بخاری، کتاب الادب، باب۳۷، ۴/ ۱۰۷حدیث : ۶۰۲۷)

 (۳) سفارش کرکے اجرپاؤ

          حضرتِ سیدنامعاویہ رضی اللّٰہ  تعالٰی  عنہنے  فرمایا :  سفارش کرو ثواب دیا جائے  گا، میں کسی کام کا ارادہ کرتا ہوں پھر اسے  مؤخر کردیتا ہوں تاکہ تم سفارش کرکے  ثواب حاصل کروکیونکہرسولُاللّٰہ صَلَّی اللّٰہ  تَعَالیٰ علیہ وَالہٖ وَسلَّمنے  ارشاد فرمایا :  سفارش کرو اجر دئیے  جاؤ گے ۔(ابوداؤد، کتاب الادب، ۴/ ۴۳۱حدیث : ۵۱۳۲)

اجتماعی حوالے سے نفع پہنچانے کی صورتیں

          اجتماعی حوالے  سے  نفع پہنچانا فردِ واحد کو نفع پہنچانے  سے  زیادہ اہم ہے  مثلاً پانی کا کنواں کھدوانا، پانی کی سبیل لگانا، مسافروں کے  لئے  سرایا (مسافر خانہ) بنوانا، پُل بنوانا، رات کے  وقت گلی میں بلب روشن رکھنا تاکہ راہ گیروں کو سہولت رہے  ، غریبوں کے  لئے  لنگر کا انتظام کرنا ، راستہ سے  تکلیف دہ چیز (مثلاً کیل ، پتھر ، ہڈی ، لوہا) ہٹادینا، یہ وہ کام ہیں جن کوکرنے  سے  کئی مسلمانوں کو فائدہ پہنچتا ہے  ۔جہاں یہ تمام کام دیگرلوگوں کے  لئے  نفع بخش ہیں وہیں نفع پہنچانے  والا بھی اچھی اچھی نیتیں کرکے  ثواب کما سکتاہے ۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

 



Total Pages: 56

Go To