Book Name:Behtar Kon?

:  اگر آپ کچھ بچالیتے  تو ہماری مدد ہوجاتی ، فرمایا :  میں نے  رسولُ اللّٰہصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو فرماتے  سنا ہے  :  اگر کوئی جنتی عورت (حور) زمین پر جھانک ہی لے  تو ساری زمین مشک کی خوشبو سے  بھر جائے  ، لہٰذا میں کسی اور چیز کو ان پر ترجیح نہیں دے  سکتا  ۔(اسد الغابۃ ، ۲/۴۶۲مختصرا)

(حکایت :  36)

مرنے کے بعد میری قمیض صدقہ کردینا

حضرتِ سیِّدُنا معروف کرخیعَلَیْہِ رَحمَۃُ اللّٰہِ الْقَوِیسے  ان کے  مرضِ وفات میں عرض کی گئی کہ کوئی وصیت فرمائیے ۔ارشاد فرمایا : جب میں مرجاؤں تو میری یہ قمیص صدقہ کردینا۔میں چاہتا ہوں کہ جس طرح بغیر لباس کے  دنیا میں آیا تھا اسی طرح دنیا سے  رخصت ہوجاؤں ۔(المستطرف، ۱/ ۲۴۹)

(حکایت :  37)

ایک چادر کے حساب کا ڈر!

          حضرت سیِّدُناابو شُعْبَہ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ سے  مروی ہے  کہ ایک شخص حضرت سیِّدُناابوذَرغِفَاری رضی اللّٰہ تعالٰی عنہ کے  پاس حاضر ہو ااور کچھ مال پیش کیا  ۔آپ رضی اللّٰہ تعالٰی عنہ نے  فرمایا :  میرے   پاس دودھ کے  لئے  بکری ، سواری کے  لئے  گدھا اور خدمت کے  لئے  بیوی ہے  ، ایک چادر ضرورت سے  زائد ہے  اور میں اس کی وجہ سے  خوف زدہ ہوں کہ کہیں مجھ سے  اس کاحساب نہ لے  لیا جائے  ! (المعجم الکبیر ،  ۲/  ۱۵۰ ،  رقم : ۱۶۳۱)

بڑھاپے میں زیادہ حرص کا سبب

          ایک دانا شخص سے  پوچھا گیا : کیا وجہ ہے  کہ بوڑھا شخص جوان سے  زیادہ دنیا کا حریص ہوتا ہے ؟جواب دیا : اس لئے  کہ بوڑھے  شخص نے  دنیا کا ایسا ذائقہ چکھا ہے  جو جوان نے  نہیں چکھا۔(المستطرف ، ۱/۱۲۶)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب!                                                                                                          صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

(27) بہترین آدمی وہ ہے جس کے شرسے لوگ محفوظ رہیں   

          رسولِ نذیر ، سِراجِ مُنیر، محبوبِ ربِّ قدیرصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے  ارشاد فرمایا : خِیَارُکُمْ مَن یُّؤْمَنُ شَرُّہُ، وَیُرْجٰی خَیْرُہ یعنی :  تم سب میں بہترین آدمی وہ ہے  جس کے  شر سے  محفوظ رہا جائے  اوراس سے  بھلائی کی امید رکھی جائے  ۔(شعب الایمان، باب اَن یحب المسلم لاخیہ ۔۔۔ الخ، ۷/ ۵۳۹حدیث : ۱۱۲۶۷)    حضرتِ  علامہ عبد الرء ُوف مناوی علیہ رحمۃ اللّٰہ  الہادی اس حدیث ِپاک کی شرح میں فرماتے  ہیں : جو شخص بھلائی کے  کام کرتا ہو یہاں تک کہ لوگوں میں اسی حوالہ سے  جاناجاتا ہو اسی شخص سے  بھلائی کی امید رکھی جاتی ہے  ، جس کی بھلائیاں زیادہ ہوں تودل اس کے  شر سے  محفوظ ہوتے  ہیں ، جب آدمی کے  دل میں ایمان مضبوط ہوتا ہے  تو اس سے  بھلائی کی امیدرکھی جاتی ہے  اور لوگ اس کی برائی سے  محفوظ ہوتے  ہیں ، جب ایمان کمزور ہوتا ہے  تو بھلائی کم ہوجاتی اور برائی غالب ہو جاتی ہے  ۔(فیض القدیر، ۳/ ۶۶۶تحت الحدیث : ۴۱۱۳)

جس کے شرسے لوگ محفوظ رہیں وہ جنت میں داخل ہو گا

          خاتَمُ الْمُرْسَلین، رَحْمَۃٌ لّلْعٰلمینصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے  اِرشاد فرمایا : جس نے  پاکیزہ کھانا کھایا اور سنت کے  مطابق عمل کیا اور لوگ اس کے  شر سے  محفوظ رہے  وہ جنت میں داخل ہو گا۔ایک شخص نے  عرض کی :  یارسولَ اللّٰہ صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم!آج آپ  کی اُمت میں ایسے  لوگ بہت ہیں ۔تو آپ صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ وآلہ وسلَّم نے  اِرشاد فرمایا : عنقریب میرے  چند صدیاں بعد بھی ہوں گے ۔(ترمذی،



Total Pages: 56

Go To