Book Name:Behtar Kon?

        صدرُ الافاضِل حضرتِ علّامہ مولانا سیِّد محمد نعیم الدّین مُراد آبادیعلیہ رحمۃُ اللّٰہِ الہادیاِس آیت کے  تحت لکھتے  ہیں : یعنی ایسی حالت میں جب کہ خود انہیں کھانے  کی حاجت و خواہش ہو اور بعض مفسّرین نے  اس کے  یہ معنٰی لئے  ہیں کہ اللّٰہ تعالٰی کی محبت میں کھلاتے  ہیں ۔(خزائن العرفان ، ص۱۰۷۳)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد   

(حکایت :  2)

کبھی گوشت نہ چکھا

           حضرتِ سیِّدُنا عُتْبَۃُ الْغُلاَم رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ  کوسات سال تک گوشت کی خواہش رہی  ۔ایک روز اِرشاد فرمایا :  مجھے  اپنے  نفس سے  حیا آئی کہ میں 7سال سے  مسلسل اسے  گوشت کھا نے  سے  روک رہا ہوں ، چنانچہ میں نے  روٹی اور گوشت کا ٹکڑا  خریدا اور اسے  بھون کر روٹی پر رکھاہی تھا کہ ایک بچے  کو دیکھا ، میں نے  پوچھا : کیا تم فلاں کے  بیٹے  ہو اور تمہارے  والد فوت ہوچکے  ہیں ؟ اس نے  کہا :  ہاں  ۔میں نے  روٹی اور گوشت کا ٹکڑا اُسے  دے  دیا  ۔لوگ کہتے  ہیں :  پھرآپ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہ  رونے  لگے  اور یہ آیت مبارکہ تلاوت فرمائی : وَ یُطْعِمُوْنَ الطَّعَامَ عَلٰى حُبِّهٖ مِسْكِیْنًا وَّ یَتِیْمًا وَّ اَسِیْرًا(۸) ‘‘ (پ ۲۹ ،  الدھر : ۸)

( ترجمہ کنز الایمان :  اور کھانا کھلاتے  ہیں اس کی محبت پر مسکین اور یتیم اور اَسیر (قیدی) کو)  ۔اس کے  بعد آپ رحمۃُ اللّٰہ تعالٰی علیہنے  کبھی گو شت نہیں چکھا ۔(احیاء علوم الدین، کتاب کسر الشہوتین، بیان طریق الریاضۃفی کسر شہوات البطن، ۳/ ۱۱۶)

 ہررات80اَفرادکوکھانا کھلاتے

          حضرت ِسیِّدُناجَرِیربن حازِم علیہ رحمۃ اللّٰہ الاکرم حضرت ِسیِّدُنامحمدبن سِیْرِیْن علیہ رحمۃ اللّٰہ المبینسے  روایت کرتے  ہیں کہ شام کے  وقت شہنشاہِ مدینہ، قرارِ قلب و سینہصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّماصحاب ِصفہ کودیگرصحابہ کرام عَلَیْہِمُ الرِّضوَانمیں تقسیم فرما دیتے  تو کوئی ایک آدمی کو لے  جاتا، کوئی دو کو اورکوئی تین کو، یہاں تک کہ ابنِ سِیْرِین رَحمِہ اللّٰہ المبیننے  دس تک کا ذکر کیا ۔حضرت ِسیِّدُناسعدبن عبادہ رضی اللّٰہ تعالٰی عنہہررات80اصحابِ صفہ کواپنے  گھرلاتے  اورکھانا کھلاتے   ۔(المصنف لابن ابی شیبۃ، کتاب الادب، باب ما ذکرفی الشح، ۶/ ۲۵۵حدیث : ۱۶)

 اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی رضاکی خاطرکھانا کھلائیے 

          سرکارِ عالی وقار، مدینے  کے  تاجدارصلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا فرمانِ رحمت نشان ہے : خِیَارُ اُ مَّتِیْ مَنْ یُطْعِمُ الطَّعَامَ وَلَیْسَ فِیْہِ رِیَاءٌ وَّلَاسَمْعَۃٌ یعنی میری امت کے  بہترین لوگ وہ ہیں جولوگوں کو کھانا کھلاتے  ہیں اور اس کھانا کھلانے  میں ریاکاری اور سَمعہ [1]؎   نہیں ہوتا۔(مسند الفردوس، ۱/ ۳۶۳حدیث : ۲۶۹۲)

جنتی بالاخانہ

          حضورِ پاک، صاحبِ لَولاک، سیّاحِ افلاک صلَّی اللّٰہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے  ارشاد فرمایا : جنت میں ایک ایسا بالاخانہ ہے  کہ جس کا باہر اندر سے  اور اندر باہر سے  دکھائی دیتا ہے  ، یہ بالاخانہ اس کے  لئے  ہے  جو  محتاجوں کوکھانا کھلائے  ۔(مسنداحمد، ۸/ ۴۴۹حدیث : ۲۲۹۶۸)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                                                                 صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد   

(حکایت :  3)

 



[1]    سَمعہ یعنی اس لئے  کام کرنا کہ لوگ سنیں گے  اور اچھا جانیں گے  ۔(بہارِ شریعت ، ۳/ ۶۲۹)



Total Pages: 56

Go To