Book Name:Bargah e Risalat Main Sahabiyat Kay Nazranay

مُتَعَلِّق کیا گیا فیصلہ پورا ہو کر ہی رہنا تھا ۔ آپ پر اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کی طرف سے سلامِ تَحِیَّت  ہو اور آپ کو جَنَّتِ عَدَن میں داخِل کیا جائے اس حال میں کہ آپ راضی ہوں ۔ [1]

حضرت ہند بنت حَارِث بن عبد المطلب کا کلام

حضرت سَیِّدَتُنا ہند بنت حارِث رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا سرکارِ مدینہ، قرارِ قلب وسینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی چچا زاد بہن  تھیں ، آپ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا بارگاہِ نُبوّت میں اپنی مَحبَّت کا اِظْہَار کچھ یوں فرماتی ہیں:

يَا عَيْنِ جُودِی بِدَمْعٍ مِنْكِ وَابْتَدِرِیْ             كَمَا تَـنَـزَّلَ مَآءُ الْـغَيْثِ فَانْـثَـعَـبَا

اَوْ فَيْضُ غَرْبٍ عَلٰى عَادِيَّةٍ طُوِيَتْ                                        فِی جَدْوَلٍ خَرِقٍ بِالْـمَاءِ قَدْ سَرِبَا

لَـقَدْ اَ تَـتْنِی مِـنَ الْاَنْـبَـاءِ مُـعْـضِـلَـةٌ                           اَنَّ ابْنَ آمِنَةَ الْـمَاْمُونَ قَدْ ذَهَـبَا

اَنَّ الْمُبَارَكَ وَالْمَيْمُونَ فِی جَدَثٍ                                                      قَدْ اَلْـحَفُوهُ تُرَابَ الْاَرْضِ وَالْـحَدَبَا

اَلَيْسَ اَوْسَطَكُمْ بَيْتًا وَّ اَ كْرَمَكُمْ                                                      خَالًا وَّ عَمًّا كَرِيمًا لَـيْسَ مُؤْتَشَبَا[2]

یعنی اے میری آنکھ!ایسی فیاضی سے آنسو بہا جیسے اَبْرِ باراں برستا ہے تو ہر طرف پانی بہنے لگتا ہے ۔ یا پھر اس پرانے کنویں کی طرح ہو جا جس کا منہ تو اوپر سے بند ہو گیا ہو مگر اندرونی نالیوں میں اس کا پانی بہتا ہو ۔ مجھے یہ مصیبت بھری خبر ملی ہے کہ حضرت آمنہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہاکے بَرَکت  والے  فَرْزَند اس جَہانِ فانی سے کُوچ فرما گئے ہیں ۔ وہ صَاحِبِ یُمْن و بَرَکت  اب ایک قَبْر میں ہیں ، جن پر لوگوں نے خاک کا لحاف اوڑھا دیا ہے ۔ کیا تم سب میں وہ شریف گھرانے کے نہ  تھے ؟کیا ننھیال و ددھیال میں وہ ایسی شرافت کے مالک نہ تھے کہ جس میں کسی قِسْم کی کوئی پراگندگی نہ تھی ۔

حضرت اُمِّ اَیمن کے فراقِ محبوبِ خدا پر کہے گئے اَشعار

سَیِّدَتُنا اُمِّ اَیْمَن رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا اُمُّ الْمُومنین حضرت سَیِّدَتُنا  خدیجہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہاکی باندی تھیں جنہیں انہوں نے سرکار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو ہبہ کر دیا تو سرکار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم نے انہیں اپنی رِضَاعی والِدہ ہونے کی وجہ سے آزاد فرما دیا، آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم جب بھی ان کی طرف دیکھتے تو فرماتے کہ بس یہی میرے اَہْلِ خانہ میں سے باقی بچی ہیں(یعنی باقی سب جَہانِ فانی سے کُوچ فرما چکے ہیں) ۔  نیز یہ حضرت سَیِّدُنا  اُسامہ بن زید رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی والِدہ ماجِدہ بھی ہیں ۔ [3] چنانچہ بارگاہِ نُبوّت میں اپنی مَحبَّت کا اِظْہَار کچھ یوں فرماتی ہیں:

عَيْنِ جُوْدِی فَاِنَّ بِذٰلِكَ لِلدَّمْــ                                                           ـعِ شِفَاءٌ، فَاَكْثِرِی مِـ الْبُكَاءِ

حِينَ قَالُوا الرَّسُولُ اَمْسٰى فَقِيدًا                                                     مَيِّتًا كَانَ ذَاكَ كُلَّ الْبَلَاءِ

وَابْكِيَا خَيْرَ مَنْ رُزِئْنَاهُ فِی الدُّنْــ                                                     ـيَا وَمَنْ خَصَّهُ بِوَحْیِ السَّمَاءِ

بِدُمُوعٍ غَزِيرَةٍ مِّنْكِ حَتَّى                                                                                         يَقْضِی اللهُ فِيكِ خَيْرَ الْقَضَاءِ

فَلَقَدْ كَانَ مَا عَلِمْتُ وَصُولًا                                                                           وَّلَـقَـدْ جَـاءَ رَحْـمَـةً  بِـالـضِّـيَـاءِ

وَلَقَدْ كَانَ بَعْدَ ذَلِكَ نُورًا                                                                                   وَّسِرَاجًا يُّضِيءُ فِی الظَّلْمَاءِ

طَيِّبَ الْـعُودِ وَالضَّرِيبَةِ وَالْـمَـعْــ                                                        ـدِنِ وَالْـخِيمِ خَاتَمَ الْاَنْبِيَاءِ[4]

یعنی اے  آنکھ! اچھی طرح رو  کہ رونا ہی شِفا ہے ، لہٰذا رونے میں زِیادَتی کر ۔  جب لوگوں نے کہا  کہ رسولِ خدا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم چلے گئے تو ایسے لگا گویا ہر قِسْم کی مصیبت ٹوٹ پڑی ہو ۔ اے دونوں آنکھو! اس ہستی پر اَشک بہاؤ جوہر اس شخص سے بہتر تھی جس کی مصیبت دنیا میں ہم پر   نازِل  ہوئی ، بلکہ وہ ہستی تو ہر اس نبی سے بھی بہتر تھی جسے آسمانی وَحِی سے خاص کیا گیاتھا ۔ اس قَدْر اَشک بہاؤ کہ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ  تمہارے حَق میں بھی بہتر فیصلہ فرما دے ، میں جانتی ہوں کہ حُضُور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم رَحْمَت بن کر اور روشنی لے کے تشریف لائے تھے ۔  اس قَدْر ہی نہیں بلکہ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم توتاریکی میں چمکنے والے سراج و نور تھے ۔ آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم پاک خَصْلَت، پاک مَنِش(مِزاج)، پاک خاندان، پاک عادت اور نبی آخر الزمان تھے  ۔

حضرت عاتکہ بنت زید کا کلام

حضرت سَیِّدَتُنا عَاتِكَہ بِنْتِ زَيْد بِن عَمْرو بِن نُفَيْل رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا حضرت سَیِّدُنا عُمَر فَارُوق رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ کی چچا زاد بہن اور حضرت عبد اللہبن ابو



[1]     اَلطَّبَـقَاتُ الْـکُبْریٰ، سُبُلُ الْھُدیٰ اور اَلْاِصَابَه میں  ان اَشعار کو سَیِّدَتُنا  اَرویٰ کی طرف جبکہ مُعْجَم کبیر، المُوَاھِبُ اللَّدُنْیَه اور الاِسْتِیْعَاب میں سَیِّدَتُنا  صفیہ بنت  عبد المطلب رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا کی طرف مَنْسُوب کیا گیا ہے۔  (علمیہ)

[2]     امتاع الاسماع، فصل فی ذکر نبذة ممارثی به رسول الله، قالت هند بنت اثاثه، ۱۴/۶۰۱

[3]     الاصابة، فیمن عرف بالکنية من النساء، حرف الالف، ۱۱۹۰۲-ام ایمن، ۸/۳۹۹ملتقطًا

[4]     الطبقات  الکبری لابن سعد،ذکر من رثی النبی ،قالت ام ایمن، ۲/۲۵۳



Total Pages: 15

Go To