Book Name:Bargah e Risalat Main Sahabiyat Kay Nazranay

حضرت سَیِّدُنا حَسّان بِن ثابِت رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہ نے اپنے قصیدہ میں جَمالِ نبوّت کی شانِ بے مِثال کو یوں بیان فرمایا ہے :

وَاَحْسَنُ مِنْكَ لَمْ تَرَ قَطُّ عَیْنِیْ!

وَاَجْمَلُ مِنْكَ لَمْ تَلِدِ النِّسَآءُ

یعنی یارسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم!آپ سے زِیادَہ حُسْن و جَمال والا میری آنکھ نے کبھی دیکھا ہے نہ آپ سے زِیادَہ کمال والا کسی عورت نے جَنا ہے ۔

خُلِقْتَ مُبَرَّأً مِّنْ کُلِ عَیْبٍ!

کَاَنَّكَ قَدْ خُلِقْتَ کَمَا تَشَآءُ

یعنی یارسول اللہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم!آپ ہر عیب و نَقْص سے پاک پیدا کئے گئے ہیں گویا آپ ایسے ہی پیدا کئے گئے جیسے حسین و جمیل پیدا ہونا چاہتے تھے ۔ [1]

پیاری پیاری اسلامی بہنو! سرکارِ مدینہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی خِدْمَتِ عالیشان میں صِرف صَحابۂ کِرام عَلَیْہِمُ الرِّضْوَان نے ہی اَشعار کی شکل میں نذرانۂ عقیدت پیش نہیں کیا بلکہ صَحابیات طیبات رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُنَّ بھی اس صَف میں کسی سے پیچھے نہیں  ۔  چنانچہ ذیل میں چند مثالیں پیشِ خِدْمَت  ہیں:

سرکار کی والدہ ماجدہ جنابِ سیدتنا آمِنہ کے اَشعار

اَعلیٰ حضرت، اِمامِ اہلسنّت، مُجَدّدِ دِىن و ملّت، پَروانۂ شَمْعِ رِسالَت مولانا شاہ اِمام احمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن  فتاویٰ رضویہ شریف میں فرماتے ہیں: اِمام ابو نعیم دلائل النبوۃ میں بطریقِ محمد بن شِہَاب زُہْرِی، اُمِّ سماعہ اَسما بنت ابی رُھْم ، وہ اپنی والِدہ سے راوِی ہیں، (کہ میں)حضرت آمنہ رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا کے اِنْتِقَال کے وَقْت (ان کے پاس )حاضِر  تھی، محمد صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی کم سِن بچے کوئی پانچ۵ برس کی عمر شریف، ان کے سرہانے تشریف فرما تھے ۔ حضرت خاتون نے اپنے ابنِ کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَسَلَّم کی طرف نَظَر کی، پھر کہا: 

بَارَكَ فِیْكَ اللهُ مِنْ غُـلَامٖ                                                                                        یَاابْنَ الَّذِیْ مِنْ حُوْمَةِ الْحِمَامٖ

نَـجَا بِعَـوْنِ الْـمَلَكِ الْـمُنْـعَامٖ                                                                         فَوُدِیَ غَدَاةُ الضَّرْبِ بِالسِّھَامٖ

بِـمِائَةٍ مِّنْ اِبِلٍ سَوَامٖ                                                                                                          اِنْ صَحَّ مَا اَبْصَرْتُ فِی الْـمَنَامٖ

فَـاَنْتَ مَـبْـعُوْثٌ اِلَی الْاَنَامٖ                                                                                       مِنْ عِنْدَ ذِی الْـجَلَالِ وَ الْاِکْرَامٖ

تُـبْـعَثُ فِی الْـحِلِّ وَ فِی الْـحَرَامٖ                                                                 تُـبْـعَثُ فِی الـتَّحْقِیْقِ وَالْاِسْلَامٖ

دِیْنُ اَبِیْـكَ الْـبَـرّ ِ اِبْرَاھَامٖ                                                                                  فَاللهُ اَنْـھَاكَ عَـنِ الْاَصْنَامٖ

                                                                                                                                                                                                اَنْ لَّا تَوَالِـیَـهَا مَـعَ الْاَقْوَامٖ[2]

اے ستھرے لڑکے !اللہ تجھ میں بَرَکت رکھے ۔  اے ان کے بیٹے ! جنہوں نے مرگ(موت) کے گھیرے سے نجات پائی بڑے انعام والے بادشاہ اللہ عَزَّ  وَجَلَّ کی مدد سے ، جس صُبْح کو قُرعہ ڈالا گیا 100بُلَند اُونْٹ ان کے فِدْیَہ میں قُربان کئے گئے ، اگر وہ ٹھیک اُترا جو میں نے خواب دیکھا ہے تو تُو سارے جَہان کی طرف پیغمبر بنایا جائے گا جو تیرے نِکو کار باپ ابراہیم کا دین ہے ، میں اللہ کی قَسم دے کر تجھے بتوں سے مَنْع کرتی ہوں کہ قوموں کے ساتھ ان کی دوستی نہ کرنا ۔ [3]

سرکار کی رضاعی بہن جنابِ سیدتنا شیماء کا کلام

مکّی مَدَنی سرکار صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی رِضَاعی بہن حضرت سَیِّدَتُنا  شَیْماءرَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہا سرورِ کائنات صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم سے اپنی مَحبَّت کا اِظْہَار یوں فرماتی ہیں:

مُـحَمَّدٌ خَيْرُ الْـبَشَرْ                                           مِـمَّنْ مَّضٰى وَمَنْ غَبَـرْ

 



[1]     دیوان حسان بن ثابت الانصاری،قافية الالف خلقت کما تشاء ،ص۲۱ سیرت مصطفیٰ،ص ۵۵۹

[2]     المواهب اللدنية، المقصد الاول، ذکر رضاعه صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ، ۱/۸۸

[3]     فتاویٰ رضویہ، ۳۰ /۳۰۱



Total Pages: 15

Go To