Book Name:Aarabi kay Sawalat aur Arabi Aaqa kay jawabat

        خدا  عَزَّوَجَلَّ    کی تقسیم پر پر راضی رہنا، جو ملے اُسی کو کافی سمجھنا قناعت ہے۔ (التعریفات، ص ۱۲۶وکیمیا ئے  سعادت، ۱/ ۱۴۹)  مثلاًکسی کی روزانہ آمدنی 500روپے ہو جس میں  اس کی ضروریاتِ زندگی پوری ہوجاتی ہوں  تو اسی آمدنی پر مطمئن     ہوجانا مزید کی خواہش سے بچنا قناعت ہے۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !            صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

کامیابی کا راستہ

         سرکارِ دو عالم، نُورِ مجَسَّم صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے ارشاد فرمایا :  وہ شخص کامیا ب ہوگیا جواسلام لایا، بقدرِ کفایت رزق دیا گیا اوراللّٰہ   عَزَّوَجَلَّ     نے اسے دیئے  ہو ئے  رِزْق  پر قناعت کی توفیق عنایت فرما ئی ۔ (مسلم، کتاب الزکوۃ، باب فی الکفاف والقناعۃ، ص۵۲۴، حدیث  : ۱۰۵۴)

             مُفَسِّرِشَہِیرحکیمُ الْاُمَّت حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ المَنّان  اِس حدیث  پاک کے تحت لکھتے ہیں  :  یعنی جسے ایمان و تقویٰ، بقدر ِضرورت مال اور تھوڑے مال پر صبر، یہ چار نعمتیں  مل  گئیں    اس پراللّٰہ (  عَزَّوَجَلَّ   )کا بڑا ہی کرم و فضل ہوگیا، وہ کامیاب رہا اور دنیا سے کامیاب گیا۔(مراٰۃ المناجیح ، ۷/ ۹)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !              صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

زیادہ غنی کون؟

        حضرتِ سیِّدُنا موسیٰ  عَلٰی نَبِیِّناوَعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلام نے بارگاہِ الٰہی میں  عرض کی : اے میرے رب!تیرا کونسا بندہ زیادہ غنی ہے؟ اللّٰہ  تَعَالٰی  نے فرمایا : وہ شخص جو میرے د ئی ے پر سب سے زیادہ قناعت کرے۔(إحیاء علوم الدین، کتاب ذم البخل۔۔الخ، بیان ذم الحرص ، ۳/ ۲۹۴)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !                  صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

غنا کا تعلق دل سے ہے مال سے نہیں  

        سرکارِ عالی وقار، مدینے کے تاجدارصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ حکمت نشان ہے :  امیری زیادہ مال و اسباب سے نہیں  بلکہ امیری دل کی غِنا سے ہے۔

(بخاری ، کتاب الرقاق ، باب الغنی غنی النفس، ۴/ ۲۳۳، حدیث  : ۶۴۴۶)

        مُفَسِّرِشَہِیرحکیمُ الْاُمَّت حضر  ت ِ مفتی احمد یار خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ المَنّان  اِس حدیث  پاک کے تحت لکھتے ہیں  : دل کی غنا سے مراد قناعت و صبر رضا بَرقضا ہے۔ حریص مالدار فقیر ہے قناعت والا غریب امیر ہے۔(مراۃ المناجیح ، ۷/ ۱۲)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد   

کبھی نہ ختم ہونے والا خزانہ

        میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو ! جسے قناعت کا وصف مل گیا اسے عظیم خزانہ مل گیا ، چنانچہ رحمت ِ عالم نورِ مجسمصَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ   نے ارشاد فرمایا : قناعت کبھی ختم نہ ہونے والاخزانہ ہے ۔( الزھد الکبیر، ص۸۸، حدیث  : ۱۰۴)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

قناعت کی وجہ سے رزق میں  کمی نہیں  ہوگی

        حضور غوث الثقلین سید شیخ عبدالقادر جیلانی (قُدِّ سَ سرُّہُ النُّورانی)فرماتے ہیں  : تیری بھاگ دوڑ سے مَقْسُوم(یعنی مقدر) سے زیادہ نہ ملے گا اور تیری قناعت کی وجہ سے کم نہ ملے گا اس لیے راضی بہ رضا رہ۔(مراۃ المناجیح ، ۷/ ۱۳) (مرقات، ۹/ ۲۵)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

قناعت سے عزت بڑھ جاتی ہے

         قناعت سے رِزْق نہیں  گھٹتا بلکہ عزت بڑھ جاتی ہے ۔ذرا تاریخ کے اوراق اُٹھا کر دیکھ ئے  توآپ کو حضرتِ سیِّدُنا ابو دَرداء  رَضِیَ اللہُ تَعَالٰی عَنْہُ ، حضرتِ سیِّدُنا عمر بن عبدالعزیز اور حضرتِ سیِّدُنا اِبراھیم بن اَدھمرَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِما  جیسے بیشُماربُزرگانِ دین رَحِمَہُمُ اللّٰہُ المُبِین ملیں  گے جنہوں نے دنیا میں  قناعت پسندی کی ایسی ایسی مثالیں  قائم  کی ہیں  کہ تاریخ نے انہیں  سنہری الفاظ میں  یادکیا ہے اورآج ان کا نام لیتے ہی نگاہ ودل ان کی عظمت کے سامنے جھک جاتے ہیں  ، ان کا ذِکْردِ لوں کو سکون بخشتا ہے اور ان کی سیرت پر عمل آج بھی کامیابی کی گزرگاہ ہے۔

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !    صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

ہرچیز اچھی لگنے لگتی ہے

        حضرت سیدنا ذوالنون رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ  نے فرمایا :  جس شخص کی قناعت خوب اچھی ہوجا ئے  تو اس کو ہر شور با اچھا لگنے لگتا ہے۔(اٰداب الدنیا والدین، باب ادب الدنیا، ص۱۹۵)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

جو مقدر میں  نہیں  وہ کسی طرح نہ ملے گا

        حضرت سیدنا ابوحازِم رَحْمَۃُ اللہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ نے فرمایا : جو چیز میرے مقدر میں  نہیں  لکھی  گئی   اگر میں  ہوا پر سوار ہوجا ؤ ں  تو بھی اسے نہیں  پاسکتا۔(المستطرف، ۱/ ۱۲۴)

صَلُّوا عَلَی الْحَبِیب !   صلَّی اللّٰہُ تعالٰی علٰی محمَّد

نصیب سے زیادہ ملے گا نہ کم

 



Total Pages: 32

Go To