Book Name:Sirat ul jinan jild 6

باب المیم ،  ابو الملیح بن اسامۃ الہذلی عن معقل بن یسار ،  ۲۰ / ۲۲۵ ،  الحدیث: ۵۲۵)

(2) … حضرت ابو ہریرہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُسے روایت ہے ،  رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے ارشاد فرمایا ’’ اللہ تعالیٰ نے سورۂ طٰہٰ اور سورۂ یٰس کے ساتھ حضرت آدم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکی تخلیق سے ایک ہزار سال پہلے کلام فرمایا اور جب فرشتوں  نے قرآن سنا تو کہا: اُس امت کو مبارک ہو جس پر یہ کلام نازل ہو گا ،  اُن سینوں  کو مبارک ہو جن میں  یہ کلام محفوظ ہو گا اور اُن زبانوں  کو مبارک ہو جو یہ کلام پڑھیں  گی۔( شعب الایمان ،  التاسع عشر من شعب الایمان۔۔۔ الخ ،  فصل فی فضائل السور والآیات ،  ذکر سورۃ بنی اسرائیل والکہف ۔۔۔ الخ ،  ۲ / ۴۷۶ ،  الحدیث: ۲۴۵۰)

(3) …حضرت عمر فاروق رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ اسلام قبول کرنے سے پہلے اسی سورت کی ابتدائی آیات پڑھ کر پکار اٹھے کہ یہ کس قدر حسین اور عظیم کلام ہے اور اس کے بعد آپ نے اسلام قبول کر لیا۔( الروض الانف ،  ذکر اسلام عمر بن الخطاب رضی  اللہ عنہ ،  ۲ / ۱۲۲-۱۲۳)

سورۂ طٰہٰ کے مضامین:

            اس سورت کا مرکزی مضمون یہ ہے کہ اس میں  دین کے عقائد جیسے  اللہ تعالیٰ کی وحدانیت اور قدرت  ،  اس کے علاوہ نبوت ،  مرنے کے بعد دوبارہ زندہ کیا جانے اور اعمال کی جزاء و سزا ملنے وغیرہ کو مختلف دلائل سے ثابت کیا گیا ہے اور اس سورت میں  یہ چیزیں  بیان کی گئی ہیں :

(1) …قرآنِ پاک ا س لئے نازل نہیں  کیا گیا کہ  اللہ تعالیٰ کے حبیب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ مشقت میں  پڑ جائیں  بلکہ آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی ذمہ داری صرف قرآن پاک کے ذریعے نصیحت کرنا ،   اللہ تعالیٰ کے احکام پہنچا دینا اور خود کو زیادہ مشقت میں  ڈالے بغیر عبادت کرنا ہے۔

(2) …حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اور فرعون کا واقعہ تفصیل کے ساتھ بیان کیا گیا اور اس واقعے میں  حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو بچپن میں  صندوق میں  بند کر کے دریا میں  ڈالے جانے ،  حضرت ہارون عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے ساتھ حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کوجابر وسرکش فرعون کے پاس بھیجنے اور  اللہ تعالیٰ کی وحدانیت کے بارے میں  اس سے بحث کرنے  ، جادوگروں  کے ساتھ حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا مقابلہ ہونے ،  حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو  اللہ تعالیٰ کی تائید اور مدد ملنے ،  جادو گروں  کے ایمان لانے ،  حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا دریا میں  راستے بنانے والا معجزہ ظاہر ہونے ،  بنی اسرائیل کے دریا پار کرنے ،  فرعون اور ا س کے لشکر کے ہلاک ہونے ،  بنی اسرائیل کا  اللہ تعالیٰ کی کثیر نعمتوں  کی ناشکری کرنے ،  سامری کا سونے سے ایک بچھڑا بنا کر بنی اسرائیل کو گمراہ کرنے اور حضرت موسیٰ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کا اپنے بھائی حضرت ہارون عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامپر اظہار ِغضب کرنے وغیرہ کا ذکر ہے ۔

(3) …جو قرآن سے منہ پھیرے  ، اس پر ایمان نہ لائے اور اس کی ہدایتوں  سے فائدہ نہ اٹھائے ا س کے لئے جہنم کی سزا کا بیان ہے۔

(4)…قیامت کے دن کی ہولناکیاں  اور اس دن مجرموں  کے احوال بیان کئے گئے ہیں  ۔

(5) …حضرت آدم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَاماور ابلیس کا واقعہ بیان کیا گیا۔

(6) … اللہ تعالیٰ کی ہدایت سے رو گردانی کرنے والے کے انجام کا ذکر ہے۔

(7) …نبی کریم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکوکفار کی اَذِیَّتوں  پر صبر کرنے  ،  اللہ تعالیٰ کی عبادت پر قائم رہنے اور گھر والوں  کونماز کا حکم دینے کی تلقین کی گئی ہے۔

(8) …فرمائشی معجزات طلب کرنے والے کفار کا رد کیاگیا ہے۔

سورۂ مریم کے ساتھ مناسبت:

            سورہ طٰہٰ کی اپنے سے ماقبل سورت ’’مریم‘‘ کے ساتھ مناسبت یہ ہے کہ سورۂ مریم میں  اللّٰہعَزَّوَجَلَّ نے کئی انبیاء کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے واقعات وحالات بیان کیے جن میں  سے بعض کے واقعات وحالات تفصیل کے ساتھ بیان کیے گئے جیسے حضرت زکریا  ، حضرت یحیٰ ، حضرت عیسیٰ عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام  ،  وغیرہا اور بعض کے مختصراًبیان کیے گئے جیسا کہ حضرت موسیٰ  ، حضرت ادریس عَلَیْہِمَا الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام ،  وغیرہا اور کچھ کی طرف اِجمالاً اشارہ کر دیا گیا۔ اب اس سورت میں  حضرت موسیٰعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کاقصہ تفصیل سے بیان کیا گیا ہے کہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کوکس طرح نبوت سے سرفراز فرمایا گیا اور آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو کس طرح کے معجزات عطاکیے گئے اور آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامنے کس طرح ظالم بادشاہ کوحق کی دعوت دی اور آپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام ہی کی دعا سے آپ کے بھائی کونبوت سے نوازا گیا۔( تناسق الدرر ،  سورۃ طہ ،  ص ۱۰۲ ،  ملخصًا)

بِسْمِ اللّٰهِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ

ترجمۂ کنزالایمان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان رحم والا ۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اللہ کے نام سے شروع جو نہایت مہربان ،  رحمت والاہے۔

طٰهٰۚ(۱) مَاۤ اَنْزَلْنَا عَلَیْكَ الْقُرْاٰنَ لِتَشْقٰۤىۙ(۲) اِلَّا تَذْكِرَةً لِّمَنْ یَّخْشٰىۙ(۳)

ترجمۂ کنزالایمان: اے محبوب ہم نے تم پر یہ قرآن اس لیے نہ اتارا کہ تم مشقت میں  پڑو ۔ ہاں  اس کو نصیحت جو ڈر رکھتا ہو۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: طٰهٰ۔ اے حبیب! ہم نے تم پر یہ قرآن اس لیے نہیں  نازل فرمایا کہ تم مشقت میں  پڑجاؤ۔  مگر یہ اس کے لئے نصیحت ہے جو ڈر تا ہے۔

{طٰهٰ}یہ حروفِ مُقَطَّعات میں  سے ہے۔ مفسرین نے اس حرف کے مختلف معنی بھی بیان کئے ہیں  ، ان میں  سے ایک یہ ہے کہ’’طٰهٰ‘‘ تاجدارِ رسالت صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے اَسماءِ مبارکہ میں  سے ایک اسم ہے اور جس طرح  اللہ تعالیٰ نے آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا نام ’’محمد‘‘ رکھا ہے اسی طرح آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا نام’’طٰهٰ‘‘ بھی رکھا ہے۔(تفسیرقرطبی ،  طہ ،  تحت الآیۃ: ۱ ،  ۶ / ۷۲ ،  الجزء الحادی عشر)

 



Total Pages: 235

Go To