Book Name:Sirat ul jinan jild 6

ایک معنی یہ بھی بیان کیا گیا ہے کہ فاسق وفاجر شخص نیک اور پارسا عورت سے نکاح کرنے کی رغبت نہیں  رکھتا بلکہ وہ اپنے جیسی فاسقہ فاجرہ عورت سے نکاح کرنا پسند کرتا ہے اسی طرح فاسقہ فاجرہ عورت نیک اور پارسا مرد سے نکاح کرنے کی رغبت نہیں  رکھتی بلکہ وہ اپنے جیسے فاسق وفاجر مرد سے ہی نکاح کرنا پسند کرتی ہے۔شانِ نزول:اس آیت کا شانِ نزول یہ ہے کہ مہاجرین میں  سے بعض بالکل نادار تھے ،  نہ اُن کے پاس کچھ مال تھا نہ ان کا کوئی عزیز قریب تھا اور بدکار مشرکہ عورتیں  دولت مند اور مالدار تھیں  ،  یہ دیکھ کر کسی مہاجر کو خیال آیا کہ اگر اُن سے نکاح کرلیا جائے تو ان کی دولت کام میں  آئے گی۔سرکارِ دو عالَم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے اُنہوں نے اس کی اجازت چاہی تو اس پر یہ آیت ِکریمہ نازل ہوئی اور انہیں  اس سے روک دیا گیا۔( خازن ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۳ ،  ۳ / ۳۳۵)

{وَ حُرِّمَ: اور حرام ہے۔} یعنی بدکاروں  سے نکاح کرنا ایمان والوں  پر حرام ہے۔ یاد رہے کہ ابتدائے اسلام میں  زانیہ عورت سے نکاح کرنا حرام تھا بعد میں  اس آیت ’’وَ اَنْكِحُوا الْاَیَامٰى مِنْكُمْ‘‘( ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور تم میں  سے جوبغیر نکاح کے ہوں  ان کے نکاح کردو۔)( النور:۳۲) سے یہ حکم مَنسوخ ہوگیا۔( مدارک ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۳ ،  ص۷۶۹)

بد عقیدہ اور بد کردار لوگوں  کا ساتھی بننے اور بنانے سے بچیں :

            اس آیت سے معلوم ہوا کہ بد عقیدہ اور بری عادات و کردار والے لوگوں  کا ساتھی بننے اورانہیں  اپنا ساتھی بنانے سے بچنا چاہئے اور درست عقائد رکھنے والے نیک و پارسا لوگوں  کا ساتھی بننا اور انہیں  اپنا ساتھی بنانا چاہئے کیونکہ ایک طبیعت دوسری طبیعت سے اثر لیتی ہے اور ایک دوسرے سے تعلقات اپنا اثر دکھاتے ہیں  اور بری عادات بہت جلد بندے میں  سَرایَت کر جاتی ہیں ۔

            حضرت عبد اللہ بن مسعود رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے ، حضور اقدس صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا’’بنی اسرائیل میں  پہلی خرابی جوآئی وہ یہ تھی کہ ان میں  سے ایک آدمی جب دوسرے آدمی سے ملتا تو اس سے کہتا: اے شخص!  اللہ تعالیٰ سے ڈرو اور جو برا کام تم کرتے ہو ا سے چھوڑ دو کیونکہ یہ تیرے لئے جائز نہیں  ہے۔ پھر جب دوسرے دن اس سے ملتا تو اسے منع نہ کرتا کیونکہ وہ کھانے پینے اور بیٹھنے میں  ا س کاشریک ہو جاتاتھا۔جب انہوں  نے ایسا کیا تو  اللہ تعالیٰ نے ان کے اچھے دلوں  کو برے دلوں  سے ملا دیا (اور نیک لوگ بروں  کی صحبت میں  بیٹھنے کی نحوست سے انہی جیسے ہوگئے۔)( ابو داؤد ،  اوّل کتاب الملاحم ،  باب الامر والنہی ،  ۴ / ۱۶۲ ،  الحدیث: ۴۳۳۶)

            اورجتنے قریبی ساتھی شوہر اور بیوی ہوتے ہیں  اتنے کوئی اور نہیں  ہوتے اور ان میں  سے کوئی ایک بد عقیدہ یا بد کردار ہو تو اس کے اثرات اتنے خطرناک ہوتے ہیں  کہ بندہ اپنے دین و ایمان سے ہی ہاتھ دھو بیٹھتا ہے ، جیسا کہ اعلیٰ حضرت امام احمد رضاخان رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  فرماتے ہیں ’’ غیرمذہب والیوں  کی صحبت آگ ہے ،  ذی علم ،  عاقل ،  بالغ مَردوں  کے مذہب اس میں  بگڑگئے ہیں  ،  عمران بن حطان رقاشی کاقصہ مشہورہے ،  یہ تابعین کے زمانہ میں  ایک بڑا محدث تھا ،  خارجی مذہب کی عورت کی صحبت میں  مَعَاذَ اللہ خود خارجی ہوگیا اور یہ دعویٰ کیاتھا کہ اسے سنی کرنا چاہتا ہے۔( فتاوی رضویہ ،  ۲۳ / ۶۹۲)

            لہٰذا جسے اپنے دین و ایمان کی ذرا سی بھی فکر ہے اسے چاہئے کہ وہ بد مذہب مرد یا عورت سے ہر گز ہر گز شادی نہ کرے ، یونہی برے کردار والے مرد یا عورت سے شادی کرنے سے بھی بچے بلکہ درست عقائد ، اچھے کردار اور نیک وپارسا مرد یا عورت سے شادی کی جائے تاکہ دنیا بھی سنور جائے اور آخرت بھی برباد نہ ہو۔

وَ الَّذِیْنَ یَرْمُوْنَ الْمُحْصَنٰتِ ثُمَّ لَمْ یَاْتُوْا بِاَرْبَعَةِ شُهَدَآءَ فَاجْلِدُوْهُمْ ثَمٰنِیْنَ جَلْدَةً وَّ لَا تَقْبَلُوْا لَهُمْ شَهَادَةً اَبَدًاۚ-وَ اُولٰٓىٕكَ هُمُ الْفٰسِقُوْنَۙ(۴) اِلَّا الَّذِیْنَ تَابُوْا مِنْۢ بَعْدِ ذٰلِكَ وَ اَصْلَحُوْاۚ-فَاِنَّ اللّٰهَ غَفُوْرٌ رَّحِیْمٌ(۵)

ترجمۂ کنزالایمان: اور جو پارسا عورتوں  کو عیب لگائیں  پھر چار گواہ معائنہ کے نہ لائیں  تو انہیں  اسّی کوڑے لگاؤ اور ان کی کوئی گواہی کبھی نہ مانو اور وہی فاسق ہیں ۔ مگر جو اس کے بعد توبہ کرلیں  اور سنور جائیں  تو بیشک  اللہ بخشنے والا مہربان ہے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور جو پاکدامن عورتوں  پر تہمت لگائیں پھر چار گواہ نہ لائیں  تو انہیں  اَسّی کوڑے لگاؤ اور ان کی گواہی کبھی نہ مانو اور وہی فاسق ہیں ۔ مگر جو اس کے بعد توبہ کرلیں  اور اپنی اصلاح کرلیں تو بیشک  اللہ بخشنے والا مہربان ہے۔

{وَ الَّذِیْنَ یَرْمُوْنَ الْمُحْصَنٰتِ: اور جو پاکدامن عورتوں  پر تہمت لگائیں ۔} اس آیت مبارکہ میں  پاکدامن اجنبی عورتوں  پر زنا کی تہمت لگانے والوں  کی سزا کا بیان ہے۔آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ جو لوگ پاکدامن عورتوں  پر زنا کی تہمت لگائیں  پھر چار گواہ ایسے نہ لائیں  جنہوں  نے ان کے زنا کا معائنہ کیا ہوتو ان میں  سے ہر ایک کو اسی کوڑے لگاؤ اور کسی چیز میں  ان کی گواہی کبھی قبول نہ کرو اور کبیرہ گناہ کے مُرتکِب ہونے کی وجہ سے وہی فاسق ہیں ۔( جلالین ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۴ ،  ص۲۹۴)

پاک دامن مرد یا عورت پر زنا کی تہمت لگانے کی سزا سے متعلق چند شرعی مسائل:

            یہاں  آیت میں  بیان کی گئی سزا سے متعلق چند شرعی مسائل ملاحظہ ہوں  ،

(1)… جو شخص کسی پارسا مرد یا عورت کو زنا کی تہمت لگائے اور اس پر چار معائنہ کے گواہ پیش نہ کر سکے تو اس پر 80کوڑوں

کی حد واجب ہوجاتی ہے۔ آیت میں  مُحْصَنَاتْکا لفظ (یعنی صرف عورتوں  پر تہمت لگانے کا بیان) مخصوص واقعہ کے سبب سے وارد ہوا  یا اس لئے کہ عورتوں  کو تہمت لگانا بکثرت واقع ہوتا ہے۔

(2)… ایسے لوگ جو زنا کی تہمت میں  سزا یاب ہوں  اور ان پر حد جاری ہوچکی ہو وہ مَرْدُوْدُ الشَّہَادَۃ ہوجاتے ہیں  ،  یعنی ان کی گواہی کبھی مقبول نہیں  ہوتی۔ پارسا سے مراد وہ ہیں  جو مسلمان،  مُکَلَّف ،  آزاد اور زنا سے پاک ہوں ۔

(3)… زنا کی گواہی کا نصاب چار گواہ ہیں ۔

 



Total Pages: 235

Go To