Book Name:Sirat ul jinan jild 6

کی سزا کے وقت مسلمانوں  کا ایک گروہ حاضر ہو۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: جوزنا کرنے والی عورت اور زنا کرنے والا مردہو تو ان میں  ہر ایک کو سوسو کوڑے لگاؤ اوراگر تم  اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتے ہو توتمہیں   اللہ کے دین میں  ان پر کوئی ترس نہ آئے اور چاہیے کہ ان کی سزا کے وقت مسلمانوں  کا ایک گروہ موجود ہو۔

{اَلزَّانِیَةُ وَ الزَّانِیْ: جو زنا کرنے والی عورت اور زنا کرنے والا مرد ہو۔} اس آیت سے  اللہ تعالیٰ نے حدود اور احکام کا بیان شروع فرمایا ،  سب سے پہلے زنا کی حد بیان فرمائی اور حُکّام سے خطاب فرمایا کہ جس مرد یا عورت سے زنا سرزد ہو تو اس کی حدیہ ہے کہ اسے سو کوڑے لگاؤ۔( مدارک ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۲ ،  ص۷۶۸)

 غیر مُحْصَنْ زانی کی سزا:

            یاد رہے کہ حد ایک قسم کی سزا ہے جس کی مقدار شریعت کی جانب سے مقرر ہے کہ اُس میں  کمی بیشی نہیں  ہوسکتی اوراس سے مقصودلوگوں  کو اس کام سے باز رکھنا ہے جس کی یہ سزا ہے۔( درمختار مع ردالمحتار ،  کتاب الحدود ،  ۶ / ۵)اوراس آیت میں  بیان کی گئی زنا کی حد آزاد ،  غیر مُحْصَنْ کی ہے کیونکہ آزاد ، مُحْصَنْ کا حکم یہ ہے کہ اسے رَجم کیا جائے جیسا کہ حدیث شریف میں  وارد ہے کہ حضرت ماعِز رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ کو نبی کریم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے حکم سے رجم کیا گیا۔( بخاری  ،  کتاب المحاربین من اہل الکفر والردۃ  ،  باب ہل یقول الامام للمقرّ : لعلّک لمست او غمزت  ،  ۴  /   ۳۴۲  ،  الحدیث: ۶۸۲۴)

            مُحْصَنْ وہ آزاد مسلمان ہے جو مُکَلّف ہواور نکاحِ صحیح کے ساتھ خواہ ایک ہی مرتبہ اپنی بیوی سے صحبت کرچکا ہو۔ ایسے شخص سے زنا ثابت ہو تو اسے رجم کیا جائے گا اور اگر ان میں  سے ایک بات بھی نہ ہو مثلاً آزادنہ ہو یا مسلمان نہ ہو یا عاقل بالغ نہ ہو یا اس نے کبھی اپنی بیوی کے ساتھ صحبت نہ کی ہو یا جس کے ساتھ صحبت کی ہو اس کے ساتھ نکاح فاسد ہوا ہو تو یہ سب غیرمُحْصَنْ میں  داخل ہیں  اور زنا کرنے کی صورت میں  ان سب کا حکم یہ ہے کہ انہیں  سو کوڑے مارے جائیں ۔

زنا کی حد سے متعلق3شرعی مسائل:

             یہاں  آیت میں  ذکر کی گئی حد سے متعلق 3 اَہم شرعی مسائل ملاحظہ ہوں ۔

(1)…زنا کا ثبوت یا تو چار مَردوں  کی گواہیوں  سے ہوتا ہے یا زنا کرنے والے کے چار مرتبہ اقرار کرلینے سے۔ پھربھی حاکم یا قاضی بار بار سوال کرے گا اور دریافت کرے گا کہ زنا سے کیا مراد ہے؟ کہاں  کیا؟کس سے کیا؟کب کیا؟ اگر ان سب کو بیان کردیا تو زنا ثابت ہوگا ورنہ نہیں  اور گواہوں  کو صَراحتاً اپنا معائنہ بیان کرنا ہوگا ،  اس کے بغیر ثبوت نہ ہوگا۔

(2)… مرد کو کوڑے لگانے کے وقت کھڑا کیا جائے اور تہبندکے سوا اس کے تمام کپڑے اتار دیئے جائیں  اورمُتَوَسَّط درجے کے کوڑے سے اس کے سر ،  چہرے اور شرم گاہ کے علاوہ تمام بدن پر کوڑے لگائے جائیں  اورکوڑے اس طرح لگائے جائیں  کہ اَلَم یعنی درد گوشت تک نہ پہنچے۔ عورت کو کوڑے لگانے کے وقت نہ اسے کھڑا کیا جائے ،  نہ اس کے کپڑے اتارے جائیں  البتہ اگر پوستین یا روئی دار کپڑے پہنے ہوئے ہو تو وہ اتار دیئے جائیں ۔ یہ حکم آزاد مرد اور عورت کا ہے جبکہ باندی غلام کی حد اس سے نصف یعنی پچاس کوڑے ہیں  جیسا کہ سورۂ نساء میں  مذکور ہوچکا۔

 (3)…لِواطَت زنا میں  داخل نہیں  لہٰذا اس فعل سے حد واجب نہیں  ہوتی لیکن تعزیر واجب ہوتی ہے اور اس تعزیر میں  صحابۂ کرام رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمْ کے چند قول مروی ہیں ۔ (1)آگ میں  جلا دینا۔(2)غرق کر دینا۔ (3)بلندی سے گرانا اور اوپر سے پتھر برسانا۔ فاعل و مفعول یعنی لواطت کا فعل کرنے اور کروانے والے دونوں  کا ایک ہی حکم ہے۔( تفسیرات احمدیہ ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۲ ،  ص۵۴۲-۵۴۳)

            نوٹ:زنا کی حد سے متعلق مزید تفصیل جاننے کے لئے بہارِ شریعت جلد 2حصہ9سے ’’حدود کا بیان‘‘ مطالعہ فرمائیں ۔

{وَ لَا تَاْخُذْكُمْ بِهِمَا رَاْفَةٌ: تمہیں  ان پر کوئی ترس نہ آئے۔} اس آیت کا معنی یہ ہے کہ ایمان والوں  پر لازم ہے کہ وہ  اللہ تعالیٰ کے دین کے معاملے میں  انتہائی سخت ہوں  اورا س کی نافذ کردہ حدود کوقائم کرنے میں  کسی طرح کی نرمی سے کام نہ لیں  کہ کہیں  ا س کی وجہ سے حدنافذ کرنا ہی چھوڑ دیں  یا اس میں  تخفیف کرنا شروع کر دیں ۔( مدارک ،  النور ،  تحت الآیۃ: ۲ ،  ص۷۶۹)

حدود نافذ کرنے کے معاملے میں  مسلم حکمرانوں  کے لئے شرعی حکم:

            اس آیت میں  اور اس کے علاوہ کثیر اَحادیث میں  مسلم حکمرانوں  کو حکم دیا گیا ہے کہ  اللہ تعالیٰ اور اس کے حبیب صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے جرائم کی جو سزائیں  مقرر کی ہیں  وہ انہیں  سختی سے نافذ کریں  ،  چنانچہ حضرت عبادہ بن صامت رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے ،  رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشادفرمایا: ’’ اللہ تعالیٰ کی حدود کو قریبو بعید سب میں  قائم کرو اور  اللہ عَزَّوَجَلَّ کے حکم بجا لانے میں  ملامت کرنے والے کی ملامت تمہیں  نہ روکے۔( ابن ماجہ ،  کتاب الحدود ،  باب اقامۃ الحدود ،  ۳ / ۲۱۷ ،  الحدیث: ۲۵۴۰)

            اُمُّ المومنین حضرت عائشہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہَا سے روایت ہے ،  حضور اقدس صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’(اے حاکمو!)! عزت داروں  کی لغزشیں معاف کر دو ،  مگر حدود( کہ ان کو معاف نہیں  کرسکتے۔)( ابوداؤد ،  کتاب الحدود ،  باب فی الحدّ یشفع فیہ ،  ۴ / ۱۷۸ ،  الحدیث: ۴۳۷۵)

            اُمُّ  المومنین حضرت عائشہ صدیقہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہَا سے روایت ہے کہ ایک مخزومیہ عورت نے چوری کی تھی ،  جس کی وجہ سے قریش کو فکر پیدا ہوگئی (کہ اس کو کس طرح سزا سے بچایا جائے۔) آپس میں  لوگوں  نے کہا  کہ اس کے بارے میں  کون شخص رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے سفارش کرے گا؟ پھرلوگوں  نے کہا ، حضرت اسامہ بن زید رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کے سوا جو کہ رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے محبوب ہیں  ،  کوئی شخص سفارش کرنے کی جرأت نہیں  کرسکتا ،  غرض حضرت اسامہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ نے سفارش کی ،  اس پر حضور اقدس صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہ ِوَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا کہ تو حد کے بارے میں  سفارش کرتا ہے !پھر حضورپُر نور صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ خطبہ کے لیے کھڑے ہوئے اور اس خطبہ میں  یہ فرمایا



Total Pages: 235

Go To