Book Name:Sirat ul jinan jild 6

ترجمۂ کنزُالعِرفان: ان کے چہروں  کو آگ جلادے گی اور وہ اس میں  منہ چڑائے ہوں  گے۔ کیا تم پر میری آیتیں  نہ پڑھی جاتی تھیں ؟ تو تم انہیں  جھٹلاتے تھے۔

{وَ هُمْ فِیْهَا كٰلِحُوْنَ: اور وہ اس میں  منہ چڑائے ہوں  گے۔} اس آیت اور ا س کے بعد والی آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ اپنی جانوں  کو نقصان میں  ڈالنے والے بدبختوں  کا حال یہ ہو گا کہ جہنم کی آ گ ان کے چہروں  کو جلادے گی اور جہنم میں  ان کے دونوں  ہونٹ سکڑ کر دانتوں  سے دور ہو جائیں  گے اور ان سے فرمایا جائے گا’’ کیا دنیا میں  تمہارے سامنے میرے قرآن کی آیتیں  نہ پڑھی جاتی تھیں  ؟ضرور پڑھی جاتی تھیں  ،  لیکن تم انہیں  سن کر میرے عذاب سے ڈرنے کی بجائے انہیں  جھٹلاتے تھے اور یہ گمان کرتے تھے کہ یہ  اللہ تعالیٰ کا کلام نہیں  ہے۔(مدارک ، المؤمنون ، تحت الآیۃ:۱۰۴-۱۰۵ ، ص۷۶۶ ،  جلالین ، المؤمنون ،  تحت الآیۃ: ۱۰۴-۱۰۵ ،  ص۲۹۳ ،  ملتقطاً)

جہنم کا ایک عذاب:

            حضرت ابو سعید خدری رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے ،  رسولُ اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ’’ وَ هُمْ فِیْهَا كٰلِحُوْنَ‘‘ کے بارے میں  ارشاد فرمایا ’’ آگ انہیں  بھون ڈالے گی اور اوپر کا ہونٹ سکڑ کر آدھے سر تک پہنچ جائے گا اور نیچے کا ہونٹ لٹک کرناف کو چھونے لگے گا۔( ترمذی ،  کتاب التفسیر ،  باب ومن سورۃ المؤمنین ،  ۵ / ۱۱۹ ،  الحدیث: ۳۱۸۷) اللہ تعالیٰ ہمیں  جہنم کے اس دردناک عذاب سے پناہ عطا فرمائے۔

             حضرت ابوہریرہ رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی       عَنْہُ سے روایت ہے ،  رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا: ’’جہنم میں  بد نصیب ہی جائے گا۔ عرض کی گئی: یا رسولَ اللّٰہ! صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ،  بدنصیب کون ہے ؟ ارشاد فرمایا: ’’ جو  اللہ تعالیٰ کی فرمانبرداری کے کام نہ کرے اور اس کی نافرمانی نہ چھوڑے۔( ابن ماجہ ،  کتاب الزہد ،  باب ما یرجی من رحمۃ  اللہ عزّوجل یوم القیامۃ ،  ۴ / ۵۱۶ ،  الحدیث: ۴۲۹۸)

            لہٰذا ہر مسلمان کو چاہئے کہ وہ بھی ان آیات سے عبرت ونصیحت حاصل کرے ،  ہر حال میں   اللہ تعالیٰ کی اطاعت وفرمانبرداری کرے اور کسی بھی حال میں  اس کی نافرمانی نہ کرے۔

قَالُوْا رَبَّنَا غَلَبَتْ عَلَیْنَا شِقْوَتُنَا وَ كُنَّا قَوْمًا ضَآلِّیْنَ(۱۰۶)رَبَّنَاۤ اَخْرِجْنَا مِنْهَا فَاِنْ عُدْنَا فَاِنَّا ظٰلِمُوْنَ(۱۰۷) قَالَ اخْسَــٴُـوْا فِیْهَا وَ لَا تُكَلِّمُوْنِ(۱۰۸)

ترجمۂ کنزالایمان: کہیں  گے اے رب ہمارے ہم پر ہماری بدبختی غالب آئی اور ہم گمراہ لوگ تھے۔ اے ہمارے  رب ہم کو دوزخ سے نکال دے پھر اگر ہم ویسے ہی کریں  تو ہم ظالم ہیں ۔رب فرمائے گا دُتکارے پڑے رہو اس میں  اور مجھ سے بات نہ کرو۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: وہ کہیں  گے: اے ہمارے رب! ہم پر ہماری بدبختی غالب آئی اور ہم گمراہ لوگ تھے۔ اے ہمارے رب! ہمیں  دوزخ سے نکال دے پھر اگر ہم ویسے ہی کریں  تو بیشک ہم ظالم ہوں  گے۔  اللہ فرمائے گا: دھتکارے ہوئے جہنم میں  پڑے رہو اور مجھ سے بات نہ کرو۔

{قَالُوْا: وہ کہیں  گے۔} اس آیت اور اس کے بعد والی دو آیات کا خلاصہ یہ ہے کہ ڈانٹ سن کر کفار کہیں  گے:ہم اپنے اختیار سے لذتوں  اور نفسانی خواہشات کی تکمیل میں  مصروف ہوئے اور یہ چیز ہم پر ایسی غالب آئی کہ ہم اس برے انجام تک پہنچ گئے اور انہی لذتوں  کی وجہ سے ہم لوگ حق سے گمراہ ہو گئے تھے اور ہم نے تیرے نبی کو جھٹلا دیا اور تیری نافرمانیاں  کیں ۔اے ہمارے رب! ہمیں  دوزخ سے نکال دے ، اس کے بعد اگر ہم نے دوبارہ ویسے ہی کام کئے تو بیشک ہم اپنی جانوں  پر ظلم کرنے میں  حد سے بڑھنے والے ہوں  گے۔ اللہ تعالیٰ فرمائے گا: دھتکارے ہوئے جہنم میں  پڑے رہو کیونکہ یہ سوال کرنے کی جگہ نہیں  اور مجھ سے جہنم سے نکال کر دنیا میں  لوٹا دینے کی بات نہ کرو کیونکہ اب ایسا کبھی بھی نہیں  ہو گا۔( روح البیان ،  المؤمنون ،  تحت الآیۃ: ۱۰۶-۱۰۸ ،  ۶ / ۱۰۹)

جہنمیوں  کی فریاد:

            ان آیات میں  جہنمیوں  کی فریاد کا ذکر ہوا ، اس مناسبت سے یہاں  دو اَحادیث ملاحظہ ہوں  ،

(1)…حضرت ابو درداء رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ سے روایت ہے ،  رسولُ  اللہ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ارشاد فرمایا کہ دوزخی لوگ جہنم کے داروغہ حضرت مالک عَلَیْہِ  السَّلَام کو پکار کر کہیں  گے اے مالک! تیرا رب (ہمیں  موت دے کر) ہمارا کام پورا کردے۔حضرت مالک عَلَیْہِ  السَّلَام ان سے کہیں  گے کہ تم جہنم ہی میں  پڑے رہو گے۔ پھر وہ  اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  فریاد کریں  گے پکاریں  گے اور کہیں  گے ’’اے ہمارے رب! عَزَّوَجَلَّ ،  ہم پر ہماری بدبختی غالب آئی اور ہم گمراہ لوگ تھے ،  اے ہمارے رب! ہمیں  دوزخ سے نکال دے پھر اگر ہم ویسے ہی کریں  تو بیشک ہم ظالم ہوں  گے۔ اُنہیں  جواب دیا جائے گا کہ دھتکارے ہوئے جہنم میں  پڑے رہو اور مجھ سے بات نہ کرو۔ اب اُن کی امیدیں  منقطع ہوجائیں  گی اور اس وقت ندامت اور خرابی کی پکار میں  مشغول ہوں  گے۔( ترمذی ،  کتاب صفۃ جہنّم ،  باب ما جاء فی صفۃ طعام اہل النار ،  ۴ / ۲۶۳ ،  الحدیث: ۲۵۹۵)

(2)…حضرت عبد اللہ بن عمرو رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا سے مروی ہے کہ دوزخی لوگ جہنم کے داروغہ حضرت مالک عَلَیْہِ  السَّلَام کو پکاریں  گے تو وہ چالیس برس تک انہیں  جواب نہ دیں  گے ،  اس کے بعد وہ کہیں  گے کہ تم جہنم ہی میں  پڑے رہو گے پھر وہ کہیں  گے’’اے ہمارے رب! ہمیں  دوزخ سے نکال دے پھر اگر ہم ویسے ہی کریں  تو بیشک ہم ظالم ہوں  گے۔ اور انہیں  دنیا سے دگنی عمر تک جواب نہ دیا جائے گا۔( مصنف ابن ابی شیبہ ،  کتاب ذکر النار ،  ما ذکر فیما اعدّ لاہل النار وشدّتہ ،  ۸ / ۹۲ ،  الحدیث: ۶)

            اور دنیا کی عمر کتنی ہے اس بارے میں  کئی قول ہیں ’’ بعض نے کہا کہ دنیا کی عمر سات ہزار برس ہے ،  بعض نے کہا بارہ ہزار برس اور بعض نے کہا کہ تین لاکھ ساٹھ برس ہے۔ وَ اللہ  تَعَالٰی  اَعْلَم(التذکرہ للقرطبی  ،  باب منہ و ما جاء فی خروج الموحدین من النار۔۔۔ الخ ،  ص۴۱۸ ،  صاوی ،  المؤمنون ،  تحت الآیۃ: ۱۰۸ ،  ۴ / ۱۳۷۸)اور آخری بیان کردہ عمر بھی قطعی نہیں  ہے۔

اِنَّهٗ كَانَ فَرِیْقٌ مِّنْ عِبَادِیْ یَقُوْلُوْنَ رَبَّنَاۤ اٰمَنَّا فَاغْفِرْ لَنَا وَ ارْحَمْنَاوَ اَنْتَ خَیْرُ الرّٰحِمِیْنَۚۖ(۱۰۹) فَاتَّخَذْتُمُوْهُمْ سِخْرِیًّا حَتّٰۤى اَنْسَوْكُمْ ذِكْرِیْ وَ كُنْتُمْ مِّنْهُمْ تَضْحَكُوْنَ(۱۱۰)اِنِّیْ جَزَیْتُهُمُ الْیَوْمَ بِمَا صَبَرُوْۤاۙ-اَنَّهُمْ هُمُ الْفَآىٕزُوْنَ(۱۱۱)

 



Total Pages: 235

Go To