Book Name:Sirat ul jinan jild 6

ترجمۂ کنزالایمان: کیا کافروں  نے یہ خیال نہ کیا کہ آسمان اور زمین بند تھے تو ہم نے انہیں  کھولا اور ہم نے ہر جاندار چیز پانی سے بنائی تو کیا وہ ایمان نہ لائیں  گے۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: کیا کافروں  نے یہ خیال نہ کیا کہ آسمان اور زمین ملے ہوئے تھے تو ہم نے انہیں  کھول دیا اور ہم نے ہر جاندار چیز پانی سے بنائی تو کیا وہ ایمان نہیں لائیں  گے؟

{اَوَ لَمْ یَرَ الَّذِیْنَ كَفَرُوْۤا:کیا کافروں  نے یہ خیال نہ کیا۔} اس آیت میں   اللہ تعالیٰ کی شانِ قدرت اور شانِ تخلیق کا بیان ہے اور اسی میں  عقیدہ ِشرک کی تردید بھی ہے کہ جب ان چیزوں  کی تخلیق میں   اللہ تعالیٰ کاکوئی شریک نہیں  توعبادت میں  اس کاکوئی شریک کیسے ہوسکتاہے ؟ چنانچہ ارشاد فرمایاکہ کیا کافروں  نے اس بات پر غور نہیں  کیا کہ آسمان اور زمین ملے ہوئے تھے تو ہم نے انہیں  کھول دیا اور ہم نے ہر جاندار چیز کو پانی سے پیدا فرمایا تو ان روشن نشانیوں  کے باوجود کیا مشرکین ایمان نہیں  لائیں  گے؟( تفسیرکبیر ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۰ ،  ۸ / ۱۳۶ ،  روح البیان ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۰ ،  ۵ / ۴۷۰-۴۷۱ ،  ملتقطاً)

 آسمان و زمین ملے ہوئے ہونے سے کیا مراد ہے؟:

            اس آیت میں  فرمایا گیا کہ آسمان و زمین ملے ہوئے تھے ، اس سے ایک مراد تویہ ہے کہ ایک دوسرے سے ملا ہوا تھا ان میں  فصل و جدائی پیدا کرکے انہیں  کھولا گیا۔ دوسرا معنی یہ ہے کہ آسمان اس طور پربند تھا کہ اس سے بارش نہیں  ہوتی تھی اور زمین اس طور پربند تھی کہ اس سے نباتات پیدا نہیں  ہوتی تھیں  ،  تو آسمان کا کھولنا یہ ہے کہ اس سے بارش ہونے لگی اور زمین کا کھولنا یہ ہے کہ اس سے سبزہ پیدا ہونے لگا۔( خازن ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۰ ،  ۳ / ۲۷۵)

                اس معنی کی تائید اس روایت سے بھی ہوتی ہے ،  چنانچہ حلیۃ الاولیاء میں  ہے کہ ایک شخص حضرت ِعبداللّٰہبن عمر رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کے پاس آیا اور آسمانوں  اور زمین کے بارے  اللہ تعالیٰ کے اس فرمان ’’ كَانَتَا رَتْقًا فَفَتَقْنٰهُمَا‘‘کے متعلقپوچھا تو انہوں  نے فرمایا کہ ’’حضرت عبد اللہ بن عباس رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کے پاس جاؤ اور ان سے پوچھ لو ،  پھر جو وہ جواب دیں  مجھے بھی بتانا۔ وہ شخص حضرت عبد اللہ بن عباس رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَاکے پاس گیا اور ان سے یہی سوال کیا تو انہوں  نے فرمایا: ہاں  آسمان ملا ہوا تھا اس سے بارش نہیں  ہوتی تھی اور زمین بھی ملی ہوئی تھی کوئی چیز نہ اگاتی تھی پھر جب  اللہ تعالیٰ نے زمین پرمخلوق کو پیدا کیا تو آسمان کو بارش کے ساتھ اور زمین کونباتات کے ساتھ پھاڑ دیا۔ وہ شخص حضرت عبد اللہ بن عمر رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کے پاس واپس آیا اور انہیں  حضرت عبد اللہ بن عباس رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کاجواب سنایا تو حضرت عبد اللہ بن عمررَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا نے فرمایا ’’ بے شک حضرت عبد اللہ بن عباس رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُمَا کو علم عطا کیا گیا ہے ،  انہوں  نے سچ اور صحیح فرمایا ہے ،  وہ بالکل اسی طرح تھے۔( حلیۃ الاولیاء ،  ذکر الصحابۃ من المہاجرین ،  عبد  اللہ بن عباس ،  ۱ / ۳۹۵ ،  روایت نمبر ۱۱۲۸)

{وَ جَعَلْنَا مِنَ الْمَآءِ كُلَّ شَیْءٍ حَیٍّ:اور ہم نے ہر جاندار چیز پانی سے بنائی ۔} ہر جاندار چیز کو پانی سے بنانے سے کیا مراد ہے اس کے بارے میں  مفسرین کے مختلف اَقوال ہیں : (1) اس سے مراد یہ ہے کہ  اللہ تعالیٰ نے پانی کو جانداروں  کی حیات کاسبب بنایاہے ۔ (2) اس کے معنی یہ ہیں  کہ ہر جاندار پانی سے پیدا کیا ہوا ہے۔ (3) پانی سے نطفہ مراد ہے۔( خازن ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۰ ،  ۳ / ۲۷۵-۳۷۶)

{اَفَلَا یُؤْمِنُوْنَ:تو کیا وہ ایمان نہیں  لائیں  گے؟} اس سے مراد یہ ہے کہ کیا وہ ایسا نہیں  کریں  گے کہ ان دلائل میں  غور و فکر کریں  اور اِس کے ذریعے اُس خالق کو جان لیں  جس کا کوئی شریک نہیں  اور شرک کا طریقہ چھوڑ کر  اللہ تعالیٰ پر ایمان لے آئیں ۔( تفسیر کبیر ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۰ ،  ۸ / ۱۳۸)

            اس آیت ِمبارکہ کو سامنے رکھتے ہوئے موجودہ دور کے تمام سیکولر اور مُلحد مفکّرین کو چاہئے کہ وہ ان دلائل میں  غورو فکر کریں  جو خدا کے موجود ہونے پر دلالت کرتے ہیں  اور خدا کے موجود نہ ہونے کا نظریہ چھوڑ کراس خدا پر ایمان لے آئیں  جو اس کائنات کو پیدا کرنے والااور اس کے نظام کو چلانے والا ہے۔

وَ جَعَلْنَا فِی الْاَرْضِ رَوَاسِیَ اَنْ تَمِیْدَ بِهِمْ وَ جَعَلْنَا فِیْهَا فِجَاجًاسُبُلًا لَّعَلَّهُمْ یَهْتَدُوْنَ(۳۱)وَ جَعَلْنَا السَّمَآءَ سَقْفًا مَّحْفُوْظًا ۚۖ-وَّ هُمْ عَنْ اٰیٰتِهَا مُعْرِضُوْنَ(۳۲)

ترجمۂ کنزالایمان: اور زمین میں  ہم نے لنگر ڈالے کہ انھیں  لے کر نہ کانپے اور ہم نے اس میں  کشادہ راہیں  رکھیں  کہ کہیں  وہ راہ پائیں  ۔ اور ہم نے آسمان کو چھت بنایا نگاہ رکھی گئی اور وہ اس کی نشانیوں  سے روگرداں  ہیں  ۔

ترجمۂ کنزُالعِرفان: اور زمین میں  ہم نے مضبوط لنگر ڈال دئیے تاکہ لوگوں  کو لے کر حرکت نہ کرتی رہے اور ہم نے اس میں  کشادہ راستے بنائے تاکہ وہ راستہ پالیں ۔  اور ہم نے آسمان کو ایک محفوظ چھت بنایا اور وہ لوگ اس کی نشانیوں  سے منہ پھیرے ہوئے ہیں ۔

{وَ جَعَلْنَا فِی الْاَرْضِ رَوَاسِیَ:اور زمین میں  ہم نے مضبوط لنگر ڈال دئیے۔} اس آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ  اللہ تعالیٰ نے زمین میں  مضبوط پہاڑ قائم کر دئیے تاکہ زمین جم جائے  ، ٹھہری رہے اور غیر مُتوازن حرکت نہ کرے اورلوگ اس پر آرام وسکون کے ساتھ چل سکیں  اور  اللہ تعالیٰ نے اس میں  کشادہ راستے بنائے تاکہ لوگ اپنے سفروں  میں  راستہ پالیں  اور جن مقامات کا ارادہ کریں  وہاں  تک پہنچ سکیں  ۔

{وَ جَعَلْنَا السَّمَآءَ سَقْفًا مَّحْفُوْظًا:اور ہم نے آسمان کوایک محفوظ چھت بنایا ۔} یعنی  اللہ تعالیٰ نے آسمان کو ایک گرنے سے محفوظ چھت بنایا اور کافروں  کا حال یہ ہے کہ وہ آسمانی کائنات سورج  ،  چاند  ،  ستارے اور اپنے اپنے اَفلاک میں  ان کی حرکتوں  کی کیفیت اور اپنے اپنے مَطالع سے ان کے طلوع اور غروب اور ان کے احوال کے عجائبات جو عالَم کو بنانے والے کے وجود ،  اس کی وحدت اور اس کی قدرت و حکمت کے کمال پر دلالت کرتے ہیں  ،  ان سب سے اِعراض کرتے ہیں  اور ان دلائل سے فائدہ نہیں  اٹھاتے۔( خازن ،  الانبیاء ،  تحت الآیۃ: ۳۲ ،  ۳ / ۲۷۶)

            اس آیت سے معلوم ہوا کہ ریاضی اور فلکیات کا علم اعلیٰ علوم میں  سے ہے جبکہ انہیں   اللہ تعالیٰ کی معرفت کا ذریعہ بنایا جائے۔ صوفیاءِ کرام رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِمفرماتے ہیں  کہ ایک گھڑی کی فکر ہزار سال کے اس ذکر سے افضل ہے جو بغیر فکر کے ہو۔

وَ هُوَ الَّذِیْ خَلَقَ الَّیْلَ وَ النَّهَارَ وَ الشَّمْسَ وَ الْقَمَرَؕ-كُلٌّ فِیْ فَلَكٍ یَّسْبَحُوْنَ(۳۳)

 



Total Pages: 235

Go To