Book Name:Islam kay Bunyadi Aqeeday

    {۳} شعبۂ اصلاحی کُتُب                            {۴} شعبۂ تراجمِ کتب

    {۵} شعبۂ تفتیشِ کُتُب                             {۶} شعبۂ تخریج

           ’’  ا لمد ینۃ العلمیۃ  ‘‘ کی اوّلین ترجیح سرکارِ اعلیٰ حضرت اِمامِ اَہلسنّت،  عظیم البَرَکت،  عظیم ُالمرتبت،  پروانۂ شمعِ رِسالت،  مُجَدِّدِدین و مِلَّت،  حامیٔ سنّت ،  ماحیٔ  بِدعت،  عالِمِ شَرِیْعَت،  پیر ِطریقت،  باعثِ خَیْر و بَرَکت،  حضرتِ علامہ مولانا الحاج الحافِظ القاری شاہ امام اَحمد رَضا خان عَلَیْہِ رَحْمَۃُ الرَّحْمٰن کی گِراں مایہ تصانیف کو عصرِ حاضر کے تقاضوں کے مطابق حتَّی الْوَسع سَہْل اُسلُوب میں پیش کرنا ہے۔ تمام اسلامی بھائی اور اسلامی بہنیں اِس عِلمی،  تحقیقی اور اشاعتی مدنی کام میں ہر ممکن تعاون فرمائیں اورمجلس کی طرف سے شائع ہونے والی کُتُب کا خود بھی مطالَعہ فرمائیں اور دوسروں کو بھی اِ س کی ترغیب دلائیں ۔

          اللّٰہ عَزَوَّجَلَّ  ’’ دعوتِ اسلامی ‘‘  کی تمام مجالس بَشُمُول  ’’ المد ینۃ العلمیۃ ‘‘  کو دن گیارہویں اور رات بارہویں ترقّی عطا فرمائے اور ہمارے ہر عملِ خیر کو زیورِ اخلاص سے آراستہ فرماکر دونو ں جہاں کی بھلائی کا سبب بنائے۔ ہمیں زیرِ گنبدِ خضرا شہادت،  جنّتُ البقیع میں مدفن اور جنّتُ الفردوس میں جگہ نصیب فرمائے ۔             اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                     رمضان المبارک ۱۴۲۵

پیش لفظ

          اس رُوئے زمین پر مختلف مذاہب اور اَدیان کے ماننے والے آباد ہیں جو اپنی اپنی تہذیب اور اعتقاد کے مطابق زندگی گزار رہے ہیں لیکن خالق کائنات ا للّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی بارگاہِ عالیہ میں مقبول دین  ’’  اسلام  ‘‘ ہے چنانچہ قرآنِ مجید میں ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

اِنَّ الدِّیْنَ عِنْدَ اللّٰهِ الْاِسْلَامُ۫-  (پ۳، اٰل عمران: ۱۹)

ترجمۂ.5 کنز الایمان:  بے شک اللّٰہ کے یہاں اسلام ہی دین ہے۔

          اور دوسرے مقام پر ہے:

وَ مَنْ یَّبْتَغِ غَیْرَ الْاِسْلَامِ دِیْنًا فَلَنْ یُّقْبَلَ مِنْهُۚ-وَ هُوَ فِی الْاٰخِرَةِ مِنَ الْخٰسِرِیْنَ (۸۵)   (پ۳، اٰل عمران: ۸۵)

ترجمۂ.5 کنز الایمان:   اور جو اسلام کے سوا .5کو.5ئی.5 .5دین چاہے گا وہ ہر گز اس سے قبول نہ کیا جائے گا اور وہ آخرت میں زیاں کاروں سے ہے ۔

           سابقہ تمام انبیا عَلٰی نَبِیِّنَا وَعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام بھی اسی دین اسلام پر تھے چنانچہ مفسر شہیر ، صدر الافاضل مولانا سید محمد نعیم الدین مراد آبادی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الْہَادِی آیت:

وَ اشْهَدْ بِاَنَّا مُسْلِمُوْنَ (۵۲)    (پ۳، اٰل عمران: ۵۲)

ترجمۂ کنزالایمان:  اور آپ گواہ ہو جائیں کہ ہم مسلمان ہیں ۔

کے تحت فرماتے ہیں :  اور یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ پہلے انبیا  (عَلٰی نَبِیِّنَا وَعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام) کا دین اسلام تھا نہ کہ یہودیت و نصرانیت ۔

          ان تمام جلیل القدر اَنبیاء عَلَیْہِمُ السَّلَام نے لوگوں کو ایک ا للّٰہپر ایمان لانے اور اسی کی عبادت بجا لانے کی دعوت دی۔سب سے آخر میں اللّٰہعَزَّوَجَلَّ نے اپنے پیارے حبیب حضرت سیدنا محمد مصطفی صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کو مبعوث فرمایا اور ان پر قرآنِ پاک نازل



Total Pages: 55

Go To