Book Name:Yaqeen e Kamil ki Barkatain

دوسرے سے کہتاہے: ایسے شخص کو کیسے گمراہ کیاجاسکتاہے جسے ہدایت دی گئی،  کفایت کیاگیااور محفوظ کردیاگیا ہو۔ ([1])

٭…  اَمیرُالْمؤمنین حضرتِ سیِّدُنا عثمان بن عفّان رضی  اللہ تعالٰی عنہ  سے روایت ہے کہ شَہَنْشاہِ خوش خِصال،  دافِعِ رنج و مَلالصَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے ارشاد فرمایا : جو بندہ ہردن کی صُبح اورہررات کی شام تین بار یہ دُعا پڑھے: بِسْمِ  اللہ الَّذِیْ لَا یَضُرُّ مَعَ اسْمِہٖ شَیْئٌ فِی الْاَرْضِ وَلَا فِی السَّمَآءِ وَھُوَ السَّمِیْعُ الْعَلِیْمُ  (اللہ عَزَّ  وَجَلَّ  کے نام سے شروع کہ اس کے نام کے ساتھ زمین و آسمان میں کو ئی بھی چیز نقصان نہیں دیتی اور وہ سننے والا اور جاننے والا ہے) تواُسے کوئی چیز نقصان نہ دے گی۔ ([2])

٭… اَمیرُالْمؤمنین حضرتِ سیِّدُنا عمررضی  اللہ تعالٰی عنہ سے روایت ہے کہ سرکارِ والا تَبار،  شفیعِ روزِ شُمارصَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا فرمانِ  خوشبودار ہے: جس شخص نے کسی مُصِیْبَت زَدہ کودیکھ کریہ دُعا پڑھی: اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ عَافَانِیْ مِمَّا ابْتَلَاکَ بِہٖ وَفَضَّلَنِیْ عَلٰی کَثِیْرٍ مِّمَّنْ خَلَقَ تَفْضِیْلًا (تمام تعریفیں اللہ عَزَّ وَجَلَّ   کے لیے جس نے مجھے اس بیماری سے بچایا جس میں تُو مبتلا ہے اور مجھے اپنی مخلوق میں سے کثیر لوگوں پر فضیلت عطا فرمائی)  تو جب تک زندہ ہے،  اس مُصِیْبت سے اَمان میں رہے گا۔ ([3])

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  احادیثِ مبارکہ میں وارد دُعائیں  اگر یقینِ کامل اور صدقِ دل   کے ساتھ پڑھی جائیں تو  اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ ان کے بیان کردہ  فضائل  بھی ضرور حاصل ہوں گے  کیونکہ ہمارے پیارے آقا صَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی زبانِ حقِ ترجمان  کُنْ کی کُنْجی ہے یعنی  جو فرماتے ہیں ہوکر رہتا ہے ۔ میرے آقا اعلیٰ حضرت ، امامِ اہلسنّت مولانا شاہ امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن  فرماتے ہیں:

وہ زَبان جس کو سب کُنْ کی کنجی کہیں

اُس کی نافِذ حکومت پہ لاکھوں سلام       (حَدائِقِ بَخْشش)

یقینِ کامل کی برکتیں

عرض: سرکارِ عالی وقار صَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے فرامین پر یقینِ کامل سے متعلق کو ئی واقعہ ارشاد فرما دیجیے تاکہ ہمارے لیے ترغیب کا سامانہو جائے۔

ارشاد: سرکارِ عالی وقار صَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے فرامین پر اعتقاد و یقینِ کامل  سے متعلق اعلیٰ حضرت، امامِ اہلِسنّت،  مجدِّدِ دین وملّت،  عاشقِ ماہِ نُبُوَّت ،  پروانۂ شمعِ رسالت،  مولانا شاہ امام احمد رضاخان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن  کے دو واقعات ملاحظہ کیجیے،  چنانچہ اعلیٰ حضرت عَلَیْہِ رَحمَۃُ رَبِّ الْعِزَّت فرماتے ہیں: ’’ (مجھے)  بخار بہت شدید تھا اور گلے کے پیچھے گلٹیں۔ میرے منجھلے  (مجھ سے چھوٹے)  بھائی  (مولانا حسن رضا خان )  مرحوم ایک طبیب کو لائے ، اُن دنوں بریلی میں مَرَضِ طاعون بشدّت تھا ،  اِن صاحِب نے بغور دیکھ کر سات آٹھ مرتبہ کہا : یہ وُہی ہے ،  وُہی ہے ، وُہی ہے یعنی مرضِ طاعون ۔ میں بالکل کلام نہ کرسکتا تھا اس لئے انہیں جواب نہ دے سکا حالانکہ میں خوب جانتا تھا کہ یہ غلط کہہ رہے ہیں،  نہ مجھے طاعون ہے ،  نہ اِنْ شَآءَ اللہُ الْعَزِیْز کبھی ہوگا،  اِس لئے کہ میں نے طاعون زدہ کو دیکھ کر با رہا وہ دُعا پڑھ لی ہے جسے حُضُور سرورِ عالم صَلَّی  اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے تعلیم فرمایاکہ جو شخص کسی بلا رَسیدہ  (مصیبت زدہ)  کو دیکھ کر یہ دُعا پڑھ لے گا اِنْ شَآءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ اس بَلا سے محفوظ رہے گا۔ وہ دُعا یہ ہے : اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ الَّذِیْ عَافَانِیْ مِمَّا ابْتَلَاکَ بِہٖ وَفَضَّلَنِیْ عَلٰی کَثِیْرٍ مِمَّنْ خَلَقَ تَفْضِیْلًا ([4]) جن جن اَمراض کے مریضوں،  جن جن بَلاؤں کے مبتَلاؤ ں کو دیکھ کر میں نے اِسے پڑھا ، بِحَمْدِہٖ تَعَالٰیآج تک اِن سب سے محفوظ ہوں اور بِعَوْنہٖ تَعَالٰی (یعنی اللہ تعالیٰ کی مدد سے)  ہمیشہ محفوظ رہوں گا۔ ‘‘ ([5])

            مزید فرماتے ہیں : میرے پاس اِن عَمَلِیات کے ذخائر بھرے ہیں لیکن بِحَمْدِ اللہِ تَعَالٰی آج تک کبھی اِس طر ف خیال بھی نہیں کیا۔ ہمیشہ اُن دُعاؤں پر جواَحادیث میں اِرشاد ہوئیں عمل کیا ۔ میری تو تمام مُشکِلات اِنہیں سے حل ہوتی رہتی ہیں ۔ (اِسی تذکرے میں فرمایا)  دوسری بار جب کعبہ معظمہ حاضر ہوا ،  



[1]     اَ بُوْداوٗد،ج۴،ص۴۲۰،حدیث ۵۰۹۵

[2]     اِبْنِ ماجَہ، ج ۴،ص۲۸۴،حدیث ۸

[3]     تِرمِذی،ج۵، ص۲۷۲،حدیث ۳۴۴۲

[4]     تِرمِذی،ج ۵، ص۲۷۲،حدیث ۳۴۴۲

[5]     ملفوظاتِ اعلیٰ حضرت،ص ۶۹



Total Pages: 9

Go To