Book Name:Sarkar ka Andaz e Tableegh e Deen

! جومشرک سے یکجاہو اور اس کے ساتھ رہے وہ اسی مشرک کی مانند ہے۔([1])

! بُرے مُصاحِب(یعنی سا تھی)سے بچ کہ تو اِسی کے ساتھ پہچاناجائے گا۔([2])

! بے شک اللہ عَزَّ وَجَلَّ نے مجھے پسندفرمایا اورمیرے لئے اصحاب و اَصہار (یعنی وہ رشتے دار جن سے شادی جائز نہیں)پسندکئے اورعنقریب ایک قوم آئے گی کہ انہیں براکہے گی اوراِن کی شان گھٹائے گی، تم اُن کے پاس مت بیٹھنا، نہ ان کے ساتھ پانی پینا، نہ کھاناکھانا، نہ شادی بیاہت کرنا۔([3])

! میں قسم کھاکرکہتاہوں کہ جوشخص کسی قوم سے دوستی کرے گا اللہتعالیٰ اسے انہیں کاساتھی بنائے گا۔([4])

! ہرقوم کے دوستوں کو اللہتعالیٰ انہیں کے گُروہ میں اُٹھائے گا۔([5])

میرے آقا اعلیٰ حضرت ،امامِ اہلِسنّت، مجدِّدِ دین وملّت مولانا شاہ امام احمد رضاخانعَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن کُفَّار سے دوستی وہم نشینی کی مُمانَعَت پرقرآن و حدیث سے کثیردلائل نَقْل کرنے کے بعدخُلاصۂ کلام یوں اِرشاد فرماتے

 



[1]…… اَبُو داوٗد ،ج۳،ص۱۲۲،حدیث۲۷۸۷

[2]…… کَنْزُ الْعُمَّال، ج۹،ص۱۹،حدیث ۲۴۸۳۹

[3]…… کَنْزُ الْعُمَّال، ج۱۱،ص۲۴۱،حدیث ۳۲۴۶۵

[4]…… جامِع صغیر،ص۲۰۷، حدیث ۲۷۴۶

[5]…… مُعْجَمِ کَبِیْر، ج۳،ص۱۹،حدیث ۲۵۱۹



Total Pages: 32

Go To